اہلِ بیت اطہار علیہم السلام کے فضائل و مناقب

باب ششم

الْبَابُ السَّادِسُ :

مَنَاقِبُ الإِمَامِ مُحَمَّدٍ الْمَهْدِيِّ عليه السلام

(امام محمد مہدی علیہ السلام کے مناقب)

1. فَصْلٌ فِي کَوْنِهِ عليه السلام مِنْ أَهْلِ الْبَيْتِ

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کا اھلِ بیت اطہار میں سے ہونے کا بیان)

342 / 1. عَنْ عَبْدِ اﷲِ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : لَا تَذْهَبُ الدُّنْيَا حَتَّي يَمْلِکَ الْعَرَبَ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ بَيْتِي يُوَاطِئُ اسْمُهُ اسْمِي.

رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَأحْمَدُ.

وَ قَالَ أبُوعِيْسيَ : هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ صَحِيْحٌ.

’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : دنیا اس وقت تک ختم نہ ہوگی یہاں تک کہ میرے اہل بیت میں سے ایک شخص عرب کا بادشاہ ہو جائے جس کا نام میرے نام کے مطابق (یعنی محمد ہو گا)۔‘‘ اسے امام ترمذی اور احمد نے روایت کیا ہے، اور امام ترمذی کہتے ہیں کہ یہ حدیث حسن صحیح ہے۔

الحديث رقم 1 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الفتن، باب : ماجاء في المهدي، 4 / 505، الرقم : 2230، وأحمد بن حنبل في المسند، 1 / 376، الرقم : 3571، والبزار في المسند، 5 / 204، الرقم : 1803، و الحاکم في المستدرک، 4 / 488، الرقم : 8364.

343 / 2. عَنْ أُمِّ سَلَمَة رضي اﷲ عنها قَالَتْ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم يَقُولُ : الْمَهْدِيُّ مِنْ عِتْرَتِي مِنْ وَلَدِ فَاطِمَة. رَوَاهُ أَبُوْدَاوُدَ.

’’ام المؤمنین حضرت اُمّ سلمہ رضی اﷲ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : مہدی میری نسل اور فاطمہ کی اولاد سے ہو گا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابوداود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 2 : أخرجه أبو داود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 107، الرقم : 4284، وابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1368، الرقم : 4086، و الديلمي في مسند الفردوس، 4 / 223، الرقم : 6670.

344 / 3. عَنْ أبِي إِسْحَاقٍ قَالَ : قَالَ عَلِيٌّ : وَ نَظَرَ إِلَي ابْنِهِ الْحَسَنِ فَقَالَ : إِنَّ ابْنِي هَذَا سَيِّدٌ کَمَا سَمَّاهُ النَّبِيُّ صلي الله عليه وآله وسلم کَمَا سَيَخْرُجُ مِنْ صُلْبِهِ رَجُلٌ يُسَمَّي بِاسْمِ نَبِيِّکُمْ صلي الله عليه وآله وسلم يُشْبِهُهُ فِي الْخُلُقِ وَ لَا يُشْبِهُهُ فِي الْخَلْقِ ثُمَّ ذَکَرَ قِصَّة يَمْلَأُ الْأرْضَ عَدْلًا. رَوَاهُ أبُوْدَاوُدَ.

’’حضرت علی رضی اللہ عنہ نے اپنے بیٹے حضرت حسن رضی اللہ عنہ کو دیکھا اور فرمایا : میرا یہ بیٹا سردار ہو گا جیسا کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کا نام رکھا ہے اور عنقریب اس کی نسل سے ایک ایسا شخص پیدا ہو گا اور اس کا نام تمہارے نبی کے نام کے موافق رکھا جائے گا اور سیرت میں بھی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے مشابہ ہو گا۔ مگر صورت میں مشابہ نہ ہو گا۔ پھر حضرت علی رضی اللہ عنہ نے واقعہ بیان فرمایا کہ وہ ایسا شخص ہو گا جو زمین کو عدل سے بھر دے گا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابوداود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 3 : أخرجه أبوداود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 108، الرقم : 4290.

345 / 4. عَنْ عَلِيٍّ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : الْمَهْدِيُّ مِنَّا أهْلَ الْبَيْتِ يُصْلِحُهُ اﷲُ فِي لَيْلَة. رَوَاهُ ابْنُ ماجة وَأحْمَدُ.

’’حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مہدی ہم میں سے ہو گا۔ یعنی اہل بیت میں سے، اﷲ تعالیٰ اسے ایک رات میں (خلافت و مہدیت کی) صلاحیت عطا فرما دے گا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ اور احمد نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 4 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1367، الرقم : 4085، و أحمد بن حنبل في المسند، 1 / 84، الرقم : 645، و ابن أبي شيبة في المصنف، 7 / 513، الرقم : 37644، و البزار في المسند، 2 / 243، الرقم : 644.

346 / 5. عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنه قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم يَقُوْلُ : نَحْنُ وَلَدُ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ، سَادَة أَهْلِ الْجَنَّة أَنَا وَ حَمْزَة وَ عَلِيٌّ وَ جَعْفَرٌ وَ الْحَسَنُ وَ الْحُسَيْنُ وَ الْمَهْدِيُّ. رَوَاهُ ابْنُ ماجة.

’’حضرت انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو خود فرماتے سنا ہے کہ ہم حضرت عبدالمطلب کی اولاد اھلِ جنت کے سردار ہوں گے۔ یعنی میں حمزہ، علی، جعفر، حسن، حسین اور مہدی علیہم السلام۔‘‘ اسے امام ابن ماجہ نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 5 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1368، الرقم : 4087.

2. فَصْلٌ فِي عَلَامَاتِ ظُهُوْرِ الْمَهْدِيِّ عليه السلام

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کے ظہور کی علامات کا بیان)

347 / 6. عَنْ أَبِي نَضْرَة قَالَ : کُنَّا عِنْدَ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اﷲِ رضي اﷲ عنهما فَقَالَ : يُوْشِکُ أَهْلُ الْعِرَاقِ أَنْ لَا يُجْبَي إِلَيْهِمْ قَفِيْزٌ وَلَا دِرْهَمٌ قُلْنَا : مِنْ أَيْنَ ذَاکَ؟ قَالَ : مِنْ قِبَلِ الْعَجَمِ، يَمْنَعُوْنَ ذَاکَ، ثُمَّ قَالَ : يُوْشِکُ أَهْلُ الشَّامِ أَنْ لَا يُجْبَي إِلَيْهِمْ دِيْنَارٌ وَلَا مُدٌّ، قُلْنَا : مِنْ أَيْنَ ذَاکَ؟ قَالَ : مِنْ قِبَلِ الرُّومِ ثُمَّ سَکَتَ هُنَيَة ثُمَّ قَالَ : قَالَ رَسُولُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَکُونُ فِي آخِرِ أُمَّتِي خَلِيْفَةٌ يَحْثِي الْمَالَ حَثْيًا وَلَا يَعُدُّهُ عَدًّا قَالَ : قُلْتُ لِأبِي نَضْرَة وَ أَبِي الْعَلَاءِ : أَ تَرَيَانِ أَنَّهُ عُمَرُ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيْزِ فَقَالَا : لَا.

رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَأحْمَدُ.

’’حضرت ابو نضرہ رضی اللہ عنہ تابعی بیان کرتے ہیں کہ ہم حضرت جابر بن عبداللہ رضی اﷲ عنھما کی خدمت میں تھے کہ انہوں نے فرمایا : قریب ہے وہ وقت جب اھلِ شام کے پاس نہ دینار لائے جاسکیں گے اور نہ ہی غلہ، ہم نے پوچھا یہ بندش کن لوگوں کی جانب سے ہوگی؟ حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : رومیوں کی طرف سے۔ پھر تھوڑی دیر خاموش رہ کر فرمایا : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا فرمان ہے کہ میری امت کے آخری دور میں ایک خلیفہ (مہدی) ہو گا جو مال لبالب بھر بھر کے دے گا، اور اسے شمار نہیں کرے گا۔ اس حدیث کے راوی الجریری کہتے ہیں کہ میں نے (اپنے شیخ) ابو نضرہ اور ابو العلاء سے دریافت کیا : کیا آپ حضرات کی رائے میں حدیثِ پاک میں مذکور خلیفہ حضرت عمر بن عبدالعزیز ہیں؟ تو ان دونوں حضرات نے فرمایا : نہیں، (یہ خلیفہ حضرت عمر بن عبدالعزیز رحمہ اللہ علیہ کے علاوہ ہوں گے)۔‘‘ اس حدیث کو امام مسلم اور احمد نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 6 : أخرجه مسلم في الصحيح، کتاب : الفتن وأشراط الساعة، باب : لاتقوم الساعة حتي يمر الرجل فيتمني أن يکون مکان الميت من البلاء، 4 / 2234، الرقم : 2913، و أحمد بن حنبل في المسند، 3 / 317، الرقم : 14446، و ابن حبان في الصحيح، 15 / 75، الرقم : 6682.

348 / 7. عَنْ عَبْدِ اﷲِ رضي الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَلِي رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ بَيْتِي يُوَاطِئُ اسْمُهُ اسْمِي قَالَ عَاصِمٌ : وَحَدَّثَنَا أَبُوْ صَالِحٍ عَنْ أَبِي هُرَيْرَة رضي الله عنه قَالَ : لَوْ لَمْ يَبْقَ مِنَ الدُّنْيَا إِلَّا يَوْمٌ لَطَوَّلَ اﷲُ ذَالِکَ الْيَوْمَ حَتَّي يَلِيَ. رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَأحْمَدُ.

وَ قَالَ أبُوْ عِيْسَي : هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ صَحِيْحٌ.

’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ میرے اھلِ بیت میں سے ایک شخص خلیفہ ہوگا جس کا نام میرے نام کے موافق ہوگا۔ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ایک روایت میں ہے کہ اگر دنیا کا ایک ہی دن باقی رہ جائے گا تو بھی اللہ تعالیٰ اسی ایک دن کو اتنا دراز فرما دے گا یہاں تک کہ وہ شخص (یعنی مہدی علیہ السلام) خلیفہ ہو جائے۔‘‘ اس حدیث کو امام ترمذی اور احمد نے روایت کیا ہے اور امام ترمذی نے فرمایا کہ یہ حدیث حسن صحیح ہے۔

الحديث رقم 7 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الفتن، باب : ماجاء في المهدي، 4 / 505، الرقم : 2231، و أحمد بن حنبل في المسند، 1 / 376، الرقم : 3571.

349 / 8. عَنْ عَلِيٍّ رضي الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : لَوْ لَمْ يَبْقَ مِنَ الدَّهْرِ إِلَّا يَوْمٌ لَبَعَثَ اﷲُ رَجُلًا مِنْ أَهْلِ بَيْتِي يَمْ. لَأُهَا عَدْلًا کَمَا مُلِئَتْ جَوْرًا.

رَوَاهُ أَبُو دَاوُدَ.

’’حضرت علی رضی اللہ عنہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اگر دنیا کا صرف ایک دن باقی رہ جائے گا (تو اللہ تعالیٰ اسی کو دراز فرما دے گا اور) میرے اہل بیت میں سے ایک شخص (مہدی) کو پیدا فرمائے گا۔ جو دنیا کو عدل و انصاف سے بھر دیں گے جس طرح وہ (ان سے پہلے) ظلم سے بھری ہوگی۔‘‘ اس حدیث کو امام ابو داود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 8 : أخرجه أبوداود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 107، الرقم : 4283، و ابن أبي شيبة في المصنف، 7 / 513، الرقم : 37648

350 / 9. عَنْ ثَوْبَانَ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَقْتَتِلُ کَنْزَکُمْ ثَلاَ ثَةٌ کُلُّهُمْ ابْنُ خَلِيْفَة، ثُمَّ لا يَصِيْرُ إِلَي وَاحِدٍ مِنْهُمْ، ثُمَّ تَطْلُعُ الرَّايَاتُ السُّوْدُ مِنْ قِبَلِ الْمَشْرِقِ فَيَقْتَلُوْنَکُمْ قَتْلاً لَمْ يَقْتُلْهُ قَوْمٌ، ثُمَّ ذَکَرَ شَيْئًا لاَ أَحْفَظُهُ فَقَالَ : فَإِذَا رَأَيْتُمُوْهُ فَبَايِعُوْهُ وَلَوْ حَبْوًا عَلَي الثَّلْجِ فَإِنَّهُ خَلِيْفَة اﷲِ الْمَهْدِيُّ. رَوَاهُ ابْنُ ماجة وَأحْمَدُ.

’’حضرت ثوبان رضی اللہ عنہ سے مروی ہے انہوں نے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : جب تم خراسان کی طرف سے سیاہ پرچموں (کا قافلہ) آتے ہوئے دیکھو تو اس میں ضرور شامل ہو جانا اگرچہ برف پرگھسٹ کر آنا پڑے کیونکہ اس میں اللہ تعالیٰ کے خلیفہ مہدی ہوں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ اور احمد نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 9 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1367 الرقم : 4084، وأحمد بن حنبل في المسند، 5 / 277، الرقم : 22441 والحاکم في المستدرک 4 / 510، الرقم : 8432.

351 / 10. عَنْ أبِي هُرَيْرَة رضي الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يُوْشِکُ مَنْ عَاشَ مِنْکُمْ أنْ يَلْقَي عِيْسَي بْنَ مَرْيَمَ إِمَامًا مَهْدِيًا حَکَمًا عَدْلًا، فَيَکْسِرُ الصَّلِيْبَ، وَيَقْتُلُ الْخِنْزِيْرَ، وَيَضَعُ الْجِزْيَة، وَتَضَعُ الْحَرْبُ أوْزَارَهَا.

رَوَاهُ أحْمَدُ.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : قریب ہے کہ جو تم میں سے زندہ ہو وہ عیسی ابن مریم سے اس کے امام مہدی حکم و عدل ہونیکی حالت میں ملاقات کرے گا وہ عیسی ابن مریم صلیب کو توڑے گا اور خنزیر کو قتل کرے گا اور جزیہ موقوف کر دے گا اور لڑائی اپنے اوزار رکھ دے گی۔‘‘ اس حدیث کو امام احمد نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 10 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 2 / 411.

352 / 11. عَنْ أبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ نَبِيُّ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَنْزِلُ بِأُمَّتِي فِي آخَرِ الزَّمَانِ بَلَاءٌ شَدِيْدٌ مِنْ سُلْطَانِهِمْ لَمْ يُسْمَعْ بَلَاءٌ أشَدُّ مِنْهُ حَتَّي تَضِيْقَ عَنْهُمُ الْأرْضُ الرَّحْبَة وَ حَتَّي تُمْلَأ الْأرْضُ جَوْرًا وَ ظُلْمًا : لَا يَجِدُ الْمُؤْمِنُ مَلْجَاءً يَلْتَجِئُي إِلَيْهِ مِنَ الظُّلْمِ فَيَبْعَثُ اﷲُ عزوجل رَجُلًا مِنْ عِتْرَتِي فَيَمْلَأُ الْأرْضَ قِسْطًا وَ عَدْلًا کَمَا مُلِئَتْ ظُلْمًا وَ جَوْرًا، يَرْضَي عَنْهُ سَاکِنُ السَّمَاءِ وَ سَاکِنُ الْأرْضِ لَا تَدَّخِرُ الْأرْضُ مِنْ بَذَرِهَا شَيْئًا إِلاَّ أخْرَجَتْهُ وَ لَا السَّمَاءُ مِنْ قَطْرِهَا شَيْئًا إِلاَّ صَبَّهُ اﷲُ عَلَيْهِمْ مِدْرَارًا يَعِيْشُ فِيْهِمْ سَبْعَ سِنِيْنَ أوْ ثَمَانٍ أوْ تِسْعٍ تَمَنَّي الْأحْيَاءُ الْأمْوَاتَ مِمَّا صَنَعَ اﷲُعزوجل بِأهْلِ الْأرْضِ مِنْ خَيْرِهِ. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

وَ قَالَ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِْسْنَادِ.

’’حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : آخری زمانے میں میری امت پر ان کی قدرت سے زیادہ بلائیں نازل ہوں گی۔ اس سے شدید بلاء پہلے نہ سنی گئی ہوگی۔ یہاں تک کہ زمین اپنی وسعت کے باوجود ان پر تنگ ہو جائے گی اور زمین ظلم و ستم سے بھر جائیگی۔ مومن کوئی ایسا ٹھکانہ نہ پائے گا۔ جہاں وہ ظلم کی فریاد لیکر جائے پس اﷲ تعالیٰ میری اولاد میں سے ایک آدمی کو بھیجے گا جو زمین کو عدل و انصاف سے بھر دے گا جیسا کہ پہلے ظلم و ستم سے بھری تھی۔ زمین و آسمان میں رہنے والے اس سے راضی (خوش) ہونگے زمین اپنے اندر پڑنے والا ہر دانہ اُگائے گی اور اﷲ تعالیٰ آسمان میں موجود ہر قطرے کو موسلادھار (بارش) کی صورت میں برسائے گا۔ وہ ان میں سات، آٹھ یا نو سال رہے گا اور زندہ لوگ اﷲ کے اس کرم کے سبب جو اہل زمین پر کیا مردوں کی تمنا کرینگے (کاش وہ زندہ ہوتے)۔‘‘ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے اور وہ فرماتے ہیں کہ یہ حدیث صحیح الاسناد ہے۔

الحديث رقم 11 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 512، الرقم : 8438.

353 / 12. عَنْ أبِي هُرَيْرَة رضي الله عنه قَالَ : حَدَّثَنِي خَلِيْلِي أَبُوالْقَاسِمِ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : لَا تَقُوْمُ السَّاعَة حَتَّي يَخْرُجَ عَلَيْهِمْ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ بَيْتِي، فَيَضْرِبُهُمْ حَتَّي يَرْجِعُوْا إِلَي الْحَقِّ، قُلْتُ : وَ کَمْ يَمْلِکُ؟ قَالَ : خَمْسًا وَ اثْنَتَيْنِ.

رَوَاهُ أَبُوْيَعْلَي.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا : مجھے میرے خلیل ابو القاسم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : قیامت اس وقت تک قائم نہیں ہوگی جب تک کہ میرے اہل بیت میں سے ایک شخص ظاہر نہ ہونگے جو لوگوں کا مقابلہ کریں گے حتی کہ وہ حق کی طرف رجوع کرلیں گے‘‘ میں نے عرض کی۔ وہ کتنا عرصہ بادشاہ رہیں گے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : پانچ اور دو (یعنی سات سال)‘‘۔ اس حدیث کو امام ابویعلی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 12 : أخرجه أبويعلي في المسند، 12 / 19، الرقم : 3335، والهيثمي في مجمع الزوائد، 7 / 315.

354 / 13. عَنْ أَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه : قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم يَقُوْلُ : يَخْرُجُ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ بَيْتِي يَقُوْلُ : بِسُنَّتِي، يُنْزِلُ اﷲُ لَهُ الْقَطْرَ مِنَ السَّمَاءِ، وَ تُخْرِجُ لَهُ الْأرْضُ مِنْ بَرَکَتِهَا، تُمْلَأُ الْأرْضُ مِنْهُ قِسْطًا وَ عَدْلًا کَمَا مُلِئَتْ جَوْرًا وَ ظُلْمًا، يَعْمَلُ عَلَي هَذِهِ الأُمَّة سَبْعَ سِنِيْنَ، وَ يَنْزِلُ بَيْتَ الْمُقَدَّسِ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ.

’’حضرت ابو سعید الخدری رضی اللہ عنہ سے مروی ہے انہوں نے فرمایا : میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ارشاد فرماتے ہوئے سنا : میرے اہل بیت میں سے ایک شخص ظاہر ہونگے جو میری سنت کی بات کریں گے، اللہ رب العزت ان کے لئے آسمان سے بارش برسائے گا اور زمین ان کیلئے اپنی برکات نکال دے گی(یعنی اپنے خزانے اگل دے گی)۔ زمین ان کے ذریعے عدل و انصاف سے بھر جائیگی جس طرح پہلے وہ ظلم و ستم سے بھری ہوگی۔ وہ اس امت پر سات سال تک حکومت کریں گے اور بیت المقدس میں نزول فرمائیں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام طبرانی نے بیان کیا ہے۔

الحديث رقم 13 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 2 / 15، الرقم : 1075.

355 / 14. عَنْ أَبِي أُمَامَة رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : سَيَکُوْنُ بَيْنَکُمْ وَ بَيْنَ الرُّوْمِ أَرْبَعُ هَدْنٍ. تَقُوْمُ الرَّابِعَة عَلَي يَدِ رَجُلٍ مِنْ أهْلِ هِرَقْلَ يَدُوْمُ سَبْعَ سِنِيْنَ فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ مِنْ عَبْدِ آلاَفٍ يُقَالُ لَهُ الْمُسْتَوْرِدُ بْنُ خَيْلَانَ : يَا رَسُوْلَ اﷲِ، مَنْ إِمَامُ النَّاسِ يَوْمَئِذٍ قَالَ : مِنْ وَلَدِي ابْنِ أَرْبَعِيْنَ سَنَة کَأنَّ وَجْهَهُ کَوْکَبٌ دُرِّيٌّ فِي خَدِّهِ الْأيْمَنِ خَالٌ أَسْوَدُ عَلَيْهِ عِبَاءَ تَانِ قُعْوَايَتَانِ کَأَنَّهُ مِنْ رِجَالِ بَنِي إِسْرَائِيْلَ يَمْلِکُ عِشْرِيْنَ سَنَة يَسْتَخْرِجُ الْکُنُوْزَ وَ يَفْتَحُ مَدَائِنَ الشِّرْکِ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ.

’’حضرت ابو امامہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تمہارے اور روم کے درمیان چار مرتبہ صلح ہو گی۔ چوتھی صلح ایسے شخص کے ہاتھ پر ہوگی جو آل ہرقل سے ہوگا اور یہ صلح سات سال تک برابر قائم رہے گی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پوچھا گیا کہ اس وقت مسلمانوں کا امام کون شخص ہوگا؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : وہ شخص میری اولاد میں سے ہو گا جس کی عمر چالیس سال کی ہوگی۔ اس کا چہرہ ستارہ کی طرح چمکدار، اس کے دائیں رخسار پر سیاہ تل ہوگا، اور دو قطوانی عبائیں پہنے ہوگا، بالکل ایسا معلوم ہوگا جیسا بنی اسرائیل کا شخص، وہ بیس سال حکومت کرے گا، زمین سے خزانوں کو نکالے گا اور مشرکین کے شہروں کو فتح کرے گا۔‘‘ اس حدیث کو امام طبرانی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 14 : أخرجه الطبراني في المعجم الکبير، 8 / 101، الرقم : 7495.

3. فَصْلٌ فِي أدَاءِ عِيْسَي بْنِ مَرْيَمَ عليهما السلام صَلَاتَهُ وَرَاءَهُ عليه السلام

(حضرت عیسی بن مریم علیہ السلام کا امام مہدی علیہ السلام کے پیچھے نماز ادا کرنے کا بیان)

356 / 15. عَنْ أبِي هُرَيْرَة رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : کَيْفَ أنْتُمْ إِذَا نَزَلَ ابْنُ مَرْيَمَ فِيْکُمْ وَ إِمَامُکُمْ مِنْکُمْ. مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تم لوگوں کا اس وقت( خوشی سے) کیا حال ہو گا۔ جب تم میں عیسیٰ ابن مریم علیہ السلام (آسمان سے) اُتریں گے اور تمہارا امام تم ہی میں سے ہو گا۔‘‘ یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

الحديث رقم 15 : أخرجه البخاري في الصحيح، کتاب : الأنبياء، باب : نزول عيسي بن مريم، 3 / 1272، الرقم : 3265، ومسلم في الصحيح، کتاب : الإيمان، باب : نزول عيسي بن مريم حاکما بشريعة نبينا محمد صلي الله عليه وآله وسلم 1 / 136، الرقم : 155، وابن حبان في الصحيح، 15 / 213، الرقم : 6802.

357 / 16. عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اﷲِ الْأنْصَارِيِّ رضي الله عنه قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم يَقُوْلُ : لَا تَزَالُ طَائِفَةٌ مِنْ أُمَّتِي يُقَاتِلُوْنَ عَلَي الْحَقِّ ظَاهِرِيْنَ إِلَي يَوْمِ الْقِيَامَة قَالَ : وَ يَنْزِلُ عِيْسَي ابْنُ مَرْيَمَ عليه السلام فَيَقُوْلُ أمِيْرُهُمْ : تَعَالْ صَلِّ لَنَا فَيَقُوْلُ : لَا، إِنَّ بَعْضَکُمْ عَلَي بَعْضٍ أُمَرَاءُ تَکْرِمَة اﷲِ هَذِهِ الأُمَّة. رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَابْنُ حِبَّانَ.

’’حضرت جابر بن عبداللہ انصاری رضی اﷲ عنھما بیان کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : میری امت میں سے ایک جماعت قیام حق کے لیے کامیاب جنگ قیامت تک کرتی رہے گی حضرت جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں ان مبارک کلمات کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : آخر میں(حضرت) عیسیٰ ابن مریم علیہ السلام آسمان سے اتریں گے تو مسلمانوں کا امیر، ان سے عرض کرے گا تشریف لائیے ہمیں نماز پڑھائیے اس کے جواب میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام فرمائیں گے (اس وقت) میں امامت نہیں کروں گا۔ تم میں سے بعض، بعض پر امیر ہیں (یعنی حضرت عیسیٰ علیہ السلام اس وقت امامت سے انکار فرما دیں گے اس فضیلت و بزرگی کی بناء پر جو اللہ تعالیٰ نے اس امت کو عطا کی ہے)۔‘‘ اس حدیث کو امام مسلم اور ابن حبان نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 16 : أخرجه مسلم في الصحيح، کتاب : الإيمان، باب : نزول عيسي بن مريم حاکماً بشريعة نبينا محمد صلي الله عليه وآله وسلم 1 / 137، الرقم : 156، وابن حبان في الصحيح، 15 / 231، الرقم : 6819، والبيهقي في السنن الکبريٰ، 9 / 180، وأبو عوانه في المسند، 1 / 99، الرقم : 317.

358 / 17. عَنْ أبِي أُمَامَة الْبَاهِلِيِّ رضي الله عنه مَرْفُوْعًا، قَالَتْ أُمُّ شَرِيْکٍ بِنْتِ أبِي الْعَکْرِ : يَا رَسُوْلَ اﷲِ، فَأيْنَ الْعَرَبُ يَوْمَئِذٍ؟ قَالَ : هُمْ يَوْمَئِذٍ قَلِيْلٌ وَ جُلُّهُمْ بِبَيْتِ الْمَقْدِسِ وَإِمَامُهُمْ رَجُلٌ صَالِحٌ قَدْ تَقَدَّمَ يُصَلِّي بِهِمُ الصُّبْحَ إِذْ نَزَلَ عَلَيْهِمْ ابْنُ مَرْيَمَ الصُّبْحَ فَرَجَعَ ذَلِکَ الإِْمَامُ يَنْکِصُ يَمْشِي الْقَهْقَرَي لِيَتَقَدَّمَ عِيْسَي ابْنُ مَرْيَمَ يُصَلِّي بِالنَّاسِ فَيَضَعُ عِيْسَي يَدَهَ بَيْنَ کَتَفَيْهِ ثُمَّ يَقُوْلُ لَهُ تَقَدَّمْ فَصَلِّ فَإِنَّهَا لَکَ أُقِيْمَتْ فَيُصَلِّي بِهِمْ إِمَامُهُمْ.

رَوَاهُ ابْنُ ماجة وَإِسْنَادُهُ قَوِيٌّ وَ أمَّا فِي الْحَدِيْثِ وَ إِمَامُهُمْ رَجُلٌ صَالِحٌ فَالْمُرَادُ بِهِ الْمَهْدِيُّ کَمَا جَاءَ التَّصْرِيْحُ بِهِ.

’’حضرت ابو امامہ رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے ایک طویل حدیث روایت کرتے ہیں جس میں ہے کہ ایک صحابیہ ام شریک بنت ابی العکر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم، عرب اس وقت کہاں ہوں گے۔ (مطلب یہ ہے کہ اہل عرب دین کی حمایت میں مقابلے کے لیے کیوں سامنے نہیں آئیں گے) تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : عرب اس وقت کم ہوں گے اور ان میں بھی اکثر بیت المقدس (یعنی شام) میں ہوں گے اور ان کا امام و امیر ایک رجل صالح (مہدی) ہوگا جس وقت ان کا امام نماز فجر کے لیے آگے بڑھے گا۔ اچانک (حضرت) عیسیٰ ابن مریم علیہ السلام اسی وقت (آسمان سے) اتریں گے۔ امام پیچھے ہٹے گا تاکہ (حضرت) عیسیٰ علیہ السلام نماز پڑھائیں۔ حضرت عیسیٰ علیہ السلام امام کے کندھوں کے درمیان ہاتھ رکھ کر فرمائیں گے آگے بڑھو اور نماز پڑھاؤ کیونکہ تمہارے ہی لیے اقامت کہی گئی ہے تو ان کے امام (مہدی) لوگوں کو نماز پڑھائیں گے۔‘‘

(اسے ابن ماجہ نے روایت کیا ہے اور اس کی اسناد قوی ہیں اورحدیث میں جو ’’امامھم رجل صالح‘‘ کے الفاظ آئے ہیں تو اس سے مراد امام مہدی علیہ السلام ہیں جیسا کہ اس کاذکرصراحتاً بھی آیا ہے۔ اس حدیث کو امام ابن ماجہ نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 17 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : فتنة الدجال، 2 / 1361، الرقم : 4077.

359 / 18. عَنِ ابْنِ سِيْرِيْنَ قَالَ : الْمَهْدِيُّ مِنْ هَذِهِ الْأُمَّة، وَ هُوَ الَّذِي يَؤُمُّ عِيْسَي ابْنَ مَرْيَمَ عليهما السلام. رَوَاهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَة.

’’امام ابن سیرین سے روایت ہے کہ (امام) مہدی اسی امت میں سے ہوں گے اور عیسیٰ بن مریم علیہ السلام کی امامت سرانجام دیں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 18 : أخرجه ابن أبي شيبة في المصنف، 7 / 513، الرقم : 37649.

4. فَصْلٌ فِي أنَّ الإِْمَامَ الْمَهْدِيَّ يَمْلَأُ الْأرْضَ قِسْطًا وَعَدْلًا

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کا زمین کو عدل و انصاف سے بھر دینے کا بیان)

360 / 19. عَنْ أَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه : أَنَّ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : تُمْلَأُ الْأرْضُ جَوْرًا وَظُلْمًا فَيَخْرُجُ رَجُلٌ مِنْ عِتْرَتِي فَيَمْلِکُ سَبْعًا أوْ تِسْعًا فَيَمْلَأُ الْأرْضَ قِسْطًا وَعَدْلًا. رَوَاهُ أَحْمَدُ وَالْحَاکِمُ.

وَ قَالَ الْحَاکِمُ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحٌ.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : (آخری زمانہ میں) زمین جور و ظلم سے بھر جائے گی تو میری اولاد سے ایک شخص پیدا ہوگا اور سات سال یا نو سال خلافت کرے گا (اور اپنے زمانۂ خلافت میں) زمین کو عدل و انصاف سے بھر دے گا جس طرح اس سے پہلے وہ جورو ظلم سے بھر گئی ہو گی۔‘‘ اس حدیث کو امام احمد اور امام حاکم نے روایت کیا ہے اور امام حاکم نے فرمایا کہ یہ حدیث صحیح ہے۔

الحديث رقم 19 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 3 / 70، الرقم : 11683، و الحاکم في المستدرک، 4 / 601، الرقم : 8674.

361 / 20. عَنْ أَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ نَبِيُّ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَنْزِلُ بِأُمَّتِي فِي آخِرِ الزَّمَانِ بَ. لَاءٌ شَدِيْدٌ مِنْ سُلْطَانِهِمْ لَمْ يُسْمَعْ بَلَاءٌ أشَدُّ مِنْهُ حَتَّي تَضِيْقَ عَنْهُمُ الْأرْضُ الرَّحْبَة، وَ حَتَّي يَمْلَأ الأرْضَ جَوْرًا وَ ظُلْمًا : لَا يَجِدُ الْمُؤْمِنُ مَلْجَأ يَلْتَجِيئُ إِلَيْهِ مِنَ الظُّلْمِ فَيَبْعَثُ اﷲُعزوجل مِنْ عِتْرَتِي فَيَمْلَأُ الْأرْضَ قِسْطًا وَ عَدْلًا کَمَا مُلِئَتْ ظُلْمًا وَ جَوْرًا، يَرْضَي عَنْهُ سَاکِنُ السَّمَاءِ وَ سَاکِنُ الْأرْضِ، لَا تَدَّخِرُ الْأرْضُ مِنْ بَذْرِهَا شَيْئًا اِلَّا أخَرَجَتْهُ وَلَا السَّمَاءُ مِنْ قَطْرِهَا شَيْئًا إِلَّا صَبَّهُ اﷲُ عَلَيْهِمْ مِدْرَارًا، يَعِيْشُ فِيْهَا سَبْعَ سِنِيْنَ أوْ ثَمَانٍ أوْ تِسْعٍ، تَتَمَنَّي الأحْيَاءُ الأمْوَاتَ مِمَّا صَنَعَ اﷲُ عزوجل بِأهْلِ الْأرْضِ مِنْ خَيْرِهِ. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

وَ قَالَ الْحَاکِمُ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِْسْنَادِ.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک بڑی آزمائش کا ذکر فرمایا جو اس امت کو پیش آنے والی ہے۔ ایک زمانے میں اتنا شدید ظلم ہوگا کہ کہیں پناہ کی جگہ نہ ملے گی۔ اس وقت اللہ تعالیٰ میری اولاد میں ایک شخص کو پیدا فرمائے گا جو زمین کو عدل و انصاف سے پھر ویسا ہی بھر دیگا جیسا وہ پہلے ظلم و جور سے بھر چکی ہوگی۔ زمین اور آسمان کے رہنے والے سب ان سے راضی ہوں گے، آسمان اپنی تمام بارش موسلادھار برسائے گا اور زمین اپنی سب پیدا وار نکال کر رکھ دے گی یہاں تک کہ زندہ لوگوں کو تمنا ہوگی کہ ان سے پہلے جو لوگ تنگی و ظلم کی حالت میں گذر گئے ہیں کاش وہ بھی اس سماں کو دیکھتے اسی برکت کے حال پر وہ سات یا آٹھ یا نو سال تک زندہ رہیں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے اور وہ کہتے ہیں کہ یہ حدیث صحیح الاسناد ہے۔

الحديث رقم 20 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 512، الرقم : 8438.

362 / 21. عَنْ أبِي هُرَيْرَة رضي الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَکُوْنُ فِي أُمَّتِي الْمَهْدِيُّ. إِنْ قَصُرَ فَسَبْعٌ وَ إِلاَّ ثَمَانٌ وَ إِلاَّ فَتِسْعٌ تُنْعَمُ أُمَّتِي فِيْهَا نِعْمَةٌ لَمْ يُنْعَمُوْا مِثْلَهَا : يُرْسِلُ السَّمَاءَ عَلَيْهِمْ مِدْرَارًا، وَلاَ تَدَّخِرُ الْأرْضُ شَيْئًا مِنَ النَّبَاتِ، وَالْمَالُ کَدُوْسٍ يَقُوْمُ الرَّجُلُ يَقُوْلُ : يَامَهْدِيُّ، أعْطِنِي فَيَقُوْلُ خُذْهُ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا میری امت میں ایک مہدی ہوگا (ان کی مدت خلافت) اگر کم ہوئی تو سات یا آٹھ یا نو سال ہوگی۔ میری امت اُن کے زمانہ میں اس قدر خوش حال ہوگی کہ اتنی خوش حالی اسے کبھی نہ ملی ہوگی۔ اﷲ تعالیٰ آسمان سے (حسبِ ضرورت) موسلا دھار بارش برسائے گا اور زمین اپنی تمام پیداوار کو اگا دے گی۔ ایک شخص کھڑا ہو کر مال کا سوال کرے گا تو مہدی کہیں گے (اپنی حسبِ خواہش خزانہ میں جا کر) خود لے لو۔‘‘ اس حدیث کو امام طبرانی نے بیان کیا ہے۔

الحديث رقم 21 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 5 / 311، الرقم : 5406.

363 / 22. عَنْ عَلِيٍّ رضي الله عنه قَالَ : قُلْتُ : يَا رَسُوْلَ اﷲِ، أَمِنَّا آلَ مُحَمَّدٍ الْمَهْدِيُ أَمْ مِنْ غَيْرِنَا؟ فَقَالَ : لاَ، بَلْ مِنَّا، يَخْتِمُ اﷲُ بِهِ الدِّيْنَ کَمَا فَتَحَ بِنَا، وَ بِنَا يُنْقَذُوْنَ مِنَ الْفِتْنَة کَمَا أُنْقِذُوْا مِنَ الشِّرْکِ، وَبِنَا يُؤَلِّفُ اﷲُ بَيْنَ قُلُوْبِهِمْ بَعْدَ عَدَاوَة الْفِتْنَة، کَمَا أَلَّفَ بَيْنَ قُلُوْبِهِمْ بَعْدَ عَدَاوَة الشِّرْکِ، وَ بِنَا يُصْبِحُوْنَ بَعْدَ عَدَاوَة الْفِتْنَة إِخْوَانًا کَمَا أَصْبَحُوْا بَعْدَ عَدَاوَة الشِّرْکِ إِخْوَاناً فِي دِيْنِهِمْ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ.

’’حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے آپ نے فرمایا : میں نے (حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں) عرض کی۔ یا رسول اللہ! کیا (امام) مہدی ہم آل محمد میں سے ہوں گے یا ہمارے علاوہ کسی اور سے؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : نہیں، بلکہ وہ ہم ہی میں سے ہوں گے۔ اللہ رب العزت ان پر(سلطنت) دین اسی طرح ختم فرمائے گا جیسے ہم سے آغاز فرمایا ہے اور ہمارے ذریعے ہی لوگوں کو فتنہ سے بچایا جائیگا جس طرح انہیں شرک سے نجات عطا فرمائی گئی ہے اور ہمارے ذریعے ہی اللہ انکے دلوں میں فتنہ کی عداوت کے بعد محبت و الفت پیدا فرمائیگا۔ جس طرح اللہ نے شرک کی عداوت کے بعد انکے دلوں میں (ہمارے ذریعے) الفت پیدا فرمائی اور ہمارے ذریعے ہی فتنہ (وفساد) کی عداوت کے بعد لوگ آپس میں بھائی بھائی ہو جائیں گے، جس طرح وہ شرک کی عداوت کے بعد اس دین میں بھائی بھائی بن گئے ہیں۔‘‘ اس حدیث کو امام طبرانی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 22 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 1 / 56، الرقم : 157.

364 / 23. عَنْ مَعَاوِيَة بْنِ قُرَّة عَنْ أَبِيْهِ رضي الله عنه قَالَ : إِنَّ النَّبِيَّ. صلي الله عليه وآله وسلم ذَکَرَ الْمَهْدِيَّ فَقَالَ : لَيَمْلَأنَّ الْأرْضَ قِسْطًا کَمَا مُلِئَتْ ظُلْمًا وَ جَوْرًا.

رَوَاهُ الْبَزَّارُ وَقَالَ : الهيثمي وَرِجَالُهُ ثِقَاتٌ.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مہدی کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا : اگر ان کی مدت خلافت کم ہوئی تو سات برس ہوگی ورنہ آٹھ یا نوسال ہوگی وہ زمین کو عدل و انصاف سے بھر دیں گے۔ جس طرح اس سے پہلے ظلم و جور سے بھری ہوگی۔‘‘ اس حدیث کو امام بزار نے روایت کیا ہے۔ اور امام ہیثمی نے فرمایا کہ اس کے رجال ثقات ہیں۔

الحديث رقم 23 : أخرجه البزار في المسند، 8 / 256، الرقم : 3320، والهيثمي في مجمع الزوائد، 7 / 316.

5. فَصْلٌ فِي أنَّ الإِْمَامَ الْمَهْدِيَّ عليه السلام يَکُوْنُ خَلِيْفَة اﷲِ عَلَي الإِْطْلاَقِ

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کے علی الاطلاق خلیفۃ اﷲ ہونے کا بیان)

365 / 24. عَنْ أُمِّ سَلَمَة رضي اﷲ عنها زَوْجِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَکُوْنُ اخْتِلاَفٌ عِنْدَ مَوْتِ خَلِيْفَة، فَيَخْرُجُ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ الْمَدِيْنَة هَارِبًا إِلَي مَکَّة فَيَأتِيْهِ نَاسٌ مِنْ أَهْلِ مَکَّة فَيُخْرِجُونَهُ، وَهُوَ کَارِهٌ فَيُبَايعُونَهُ، بَيْنَ الرُّکْنِ وَالْمَقَامِ، وَيُبْعَثُ إِلَيْهِ بَعْثٌ مِنَ الشَّامِ فَيُخْسَفُ بِهِمْ بِالْبَيْدَاءِ بَيْنَ مَکَّة وَالْمَدِيْنَة، فَإِذَا رَأَي النَّاسُ ذَالِکَ أَتَاهُ أَبْدَالُ الشَّامِ وَ عَصَائِبُ أَهْلِ الْعِرَاقِ فَيُبَايعُوْنَهُ ثُمَّ يَنْشَأُ رَجُلٌ مِنْ قُرَيْشٍ أَخْوَالُهُ کَلْبٌ فَيُبْعَثُ إِلَيْهِمْ بَعْثًا فَيَظْهَرُونَ عَلَيْهِمْ وَ ذَالِکَ بَعْثُ کَلْبٍ وَالْخَيْبَة لِمَنْ لَمْ يَشْهَدْ غَنِيْمَة کَلْبٍ فَيَقْسِمُ الْمَالَ، وَيَعْمَلُ فِيالنَّاسِ بِسُنَّة نَبِيِّهِمْ صلي الله عليه وآله وسلم وَيُلْقِي الإِْسْلَامَ بِجِرَانِهِ إِلَي الْأرْضِ فَيَلْبَثُ سَبْعَ سِنِيْنَ ثُمَّ يُتَوَفَّي وَيُصَلِّي عَلَيْهِ الْمُسْلِمُوْنَ.

رَوَاهُ أَبُوْدَاوُدَ وَقَالَ : قَالَ بَعْضُهُمْ : عَنْ هِشَامٍ تِسْعَ سِنِيْنَ وَ قَالَ بَعْضُهُمْ سَبْعَ سِنِيْنَ.

’’حضرت ام سلمہ رضی اﷲ عنہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا فرمان نقل کرتی ہیں کہ ایک خلیفہ کی وفات کے وقت (نئے خلیفہ کے انتخاب پر مدینہ کے مسلمانوں میں) اختلاف ہوگا ایک شخص (یعنی مہدی اس خیال سے کہ کہیں لوگ مجھے نہ خلیفہ بنا دیں) مدینہ سے مکہ چلے جائیں گے۔ مکہ کے کچھ لوگ (جو انہیں بحیثیت مہدی پہچان لیں گے) ان کے پاس آئیں گے اور انہیں (مکان) سے باہر نکال کر حجرِ اسود و مقام ابراہیم کے درمیان ان سے بیعت (خلافت) کر لیں گے (جب ان کی خلافت کی خبر عام ہوگی) تو ملکِ شام سے ایک لشکر ان سے جنگ کے لئے روانہ ہوگا (جو آپ تک پہنچنے سے پہلے ہی) مکہ و مدینہ کے درمیان بیداء (چٹیل میدان) میں زمین کے اندر دھنسا دیا جائے گا (اس عبرت خیز ہلاکت کے بعد) شام کے ابدال اور عراق کے اولیاء آ کر آپ سے بیعتِ خلافت کریں گے۔ بعد ازاں ایک قریشی النسل شخص (یعنی سفیانی) جس کی ننہال قبیلۂ کلب میں سے ہوگی خلیفۂ مہدی اور ان کے اعوان و انصار سے جنگ کے لئے ایک لشکر بھیجے گا۔ یہ لوگ اس حملہ آور لشکر پر غالب ہوں گے یہی (جنگ) کلب ہے اور خسارہ ہے اس شخص کے لئے جو کلب سے حاصل شدہ غنیمت میں شریک نہ ہو (اس فتح و کامرانی کے بعد) خلیفہ مہدی خوب مال تقسیم کریں گے اور لوگوں کو ان کے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سنت پر چلائیں گے اور اسلام مکمل طور پر زمین میں مستحکم ہو جائے گا (یعنی دنیا میں پورے طور پر اسلام کا رواج و غلبہ ہوگا) بحالتِ خلافت، (امام) مہدی دنیا میں سات سال اور دوسری روایات کے اعتبار سے نو سال رہ کر وفات پا جائیں گے اور مسلمان ان کی نماز جنازہ ادا کریں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابوداود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 24 : أخرجه أبوداود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 107، الرقم : 4286، و أحمد بن حنبل في المسند، 6 / 316، الرقم : 26731، و الحاکم في المستدرک، 4 / 478، الرقم : 8328، وابن أبي شبية في المصنف، 7 / 460، الرقم : 37223.

366 / 25. عَنْ جَابِرِ بْنِ سَمُرَة رضي الله عنه قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ يَقُوْلُ : لاَ يَزَالُ هَذَا الدِّيْنُ قَائِماً حَتَّي يَکُوْنَ عَلَيْکُمْ اثْنَا عَشَرَ خَلِيْفَة، کُلُّهُمْ تَجْتَمِعُ عَلَيْهِ الْأُمَّة. فَسَمِعْتُ کَلَاماً مِنَ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم لَمْ أفْهَمْهُ، قُلْتُ لِأبِي : مَاَيقُوْلُ؟ قَالَ : کُلُّهُمْ مِنْ قُرِيْشٍ. رَوَاهُ أَبُوْدَاوُدَ.

’’حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا : میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : یہ دین قائم رہے گا یہاں تک کہ تم پر بارہ خلفاء ہوں گے۔ ان تمام پر امت مجتمع ہوگی پھر میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے (کچھ) گفتگو سنی جسے میں سمجھ نہ سکا۔ تو میں نے اپنے باپ سے عرض کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کیا فرما رہے ہیں؟ میرے باپ نے بتایا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے ’’وہ تمام (بارہ خلفاء) قریش سے ہوں گے۔‘‘ اس کو امام ابو داود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 25 : أخرجه أبو دا ود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 106، الرقم : 4279.

367 / 26. عَنْ جَابِرِ بْنِ سَمُرَة رضي الله عنه قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ يَقُوْلُ : لَا يَزَالُ هَذَا الدِّيْنُ عَزِيْزًا إِلَي اثْنَي عَشَرَ خَلِيْفَة قَالَ : فَکَبَّرَ النَّاسُ وَ ضَجُّوْا، ثُمَّ قَالَ کَلِمَة خَفِيَة قُلْتُ لِأبِي : يَا أبَتِ مَا قَالَ؟ قَالَ : کُلُّهُمْ مِنْ قُرَيْشٍ. رَوَاهُ أَبُوْدَاوُدَ.

’’حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے انہوں نے فرمایا : میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : یہ دین بارہ خلفاء کے آنے تک غالب رہے گا۔ حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : (اس پر) لوگوں نے (بلند آواز) سے ’’اللہ اکبر‘‘ کہا اور شور برپا ہوگیا پھر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے آہستہ آواز میں ایک کلمہ فرمایا : میں نے اپنے باپ سے عرض کیا : اباجان! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے کیا فرمایا ہے؟ (انہوں نے بتایا) آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے وہ سب (بارہ خلفاء) قریش میں سے ہونگے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابوداود نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 26 : أخرجه أبوداود في السنن، کتاب : المهدي، 4 / 106، الرقم : 4280 / 4281.

368 / 27. عَنْ أُمِّ سَلَمَة رضي اﷲ عنها قَالَتْ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يُبَايَعُ رَجُلٌ مِنْ أُمَّتِي بَيْنَ الرُّکْنِ وَالْمَقَامِ کَعِدَّة أَهْلِ بَدْرٍ، فِيَأْتِيْهِ عَصْبُ الْعِرَاقِ وَ أَبْدَالُ الشَّامِ. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

’’حضرت ام سلمہ رضی اﷲ عنہا روایت کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت کے ایک شخص (مہدی) سے رکنِ حجر اسود اور مقامِ ابراہیم کے درمیان اھلِ بدر کی تعداد کے مثل (یعنی 313) افراد بیعتِ خلافت کریں گے۔ بعد ازاں اس امام کے پاس عراق کے اولیاء اور شام کے ابدال (بیعت کے لئے) آئیں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 27 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 478، الرقم : 8328، و ابن أبيشيبة في المصنف، 7 / 460، الرقم : 37223.

369 / 28. عَنْ جَابِرٍ رضي الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَکُوْنُ فِي أُمَّتِي خَلِيْفَةٌ يَحْثِي الْمَالَ فِي النَّاسِ حَثْيًا لاَ يَعُدُّهُ عَدًّا ثُمَّ قَالَ : وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ لِيَعُوْدَنَّ. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

’’حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت میں ایک خلیفہ ہوگا جو لوگوں کو مال لبالب بھربھر کے تقسیم کرے گا۔ شمار نہیں کرے گا۔ (یعنی سخاوت اور دریا دلی کی بناء پر شمار کئے بغیر کثرت سے لوگوں میں عطیات تقسیم کریں گے) اور قسم ہے اس ذاتِ پاک کی جس کی قدرت میں میری جان ہے، بالتحقیق (غلبہ اسلام کا دور) ضرور لوٹے گا (یعنی امرِ اسلام مضمحل ہو جانے کے بعد ان کے زمانہ میں پھر سے فروغ حاصل کرلے گا)‘‘۔ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 28 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 501، الرقم : 8400.

370 / 29. عَنْ ثَوْبَانَ قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : إِذَا رَأيْتُمُ الرَّايَاتِ السَّوْدَ قَد جَاءَتْ مِنْ قِبَلِ خُرَاسَانَ فَائْتُوْهَا فَإِنَّ فِيْهَا خَلِيْفَة اﷲِ الْمَهْدِيَّ. رَوَاهُ أحْمَدُ وَالْحَاکِمُ.

’’ حضرت ثوبان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : خراسان کی طرف آتے ہوئے کالے جھنڈے جب دیکھو تو ان کے پاس آنا کیونکہ ان میں اﷲ کے خلیفہ مہدی ہوں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام احمد اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 29 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 5 / 277، الرقم : 22441، و الحاکم في المستدرک، 4 / 547، الرقم : 8531.

371 / 30. عَنْ ثَوْبَانَ قَالَ : قَالَ النَّبِيُّ صلي الله عليه وآله وسلم : سَتَطْلَعُ عَلَيْکُمْ رَايَاتٌ سُوْدٌ مِنْ قِبَلِ خُرَاسَانَ، فَائْتُوْهَا وَ لَوْ حَبْوًا عَلَي الثَّلْجِ، فَإِنَّهُ خَلِيْفَة اﷲِ الْمَهْدِيُّ. رَوَاهُ الدَّيْلَمِيُّ.

’’حضرت ثوبان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : عنقریب تم پر خراسان کی طرف سے سیاہ جھنڈے طلوع ہوں گے پس تم ان جھنڈوں کی طرف آو خواہ تمہیں برف پر لڑھک کر ہی کیوں نہ آنا پڑے۔ پس بے شک وہ اﷲ تعالی کے خلیفہ حضرت مہدی علیہ السلام ہوں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام دیلمی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 30 : أخرجه الديلمي في مسند الفردوس، 2 / 323، الرقم : 3470.

372 / 31. عَنِ ابْنِ عُمَرَ رضي اﷲ عنهما قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَخْرُجُ الْمَهْدِيُّ وَعَلَي رَأْسِهِ عَمَامَةٌ، فَيَأَتِي مُنَادٍ يُنَادِي : هَذَا الْمَهْدِيُّ خَلِيْفَة اﷲِ فَاتَّبِعُوْهُ. رَوَاهُ الدَّيْلَمِيُّ.

’’حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ انہوں نے فرمایا کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : امام مہدی علیہ السلام تشریف لائیں گے اور ان کے سر پر عمامہ ہو گا پس ایک منادی یہ آواز بلند کرتے ہوئے آئے گا کہ یہ مہدی ہیں جو اﷲ کے خلیفہ ہیں۔ سو تم ان کی اتباع و پیروی کرو۔‘‘ اس حدیث کو امام دیلمی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم : 31 أخرجه الديلمي في مسند الفردوس، 5 / 510، الرقم : 8920.

6. فَصْلٌ فِي أنَّ الْأُمَّة الْمُحَمَّدِيَة تُنْعَمُ فِي وِلَايَتِهِ نِعْمَة لَمْ تُنْعَمْهَا قَطُّ

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کی خلافت میں اُمّتِ محمدیہ کو وہ نعمتیں حاصل ہوں گی جو اسے کبھی حاصل نہ ہوئی ہوں گی)

373 / 32. عَنْ أبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه قَالَ : خَشِيْنَا أنْ يَکُوْنَ بَعْدَ نَبِيِّنَا حَدَثٌ فَسَأَلْنَا نَبِيَّ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : إِنَّ فِي أُمَّتِي الْمَهْدِيَّ : يَخْرُجُ يَعِيْشُ خَمْساً أوْ سَبْعًا أوْ تِسْعًا زَيْدٌ الشَّاکُّ، قَالَ : قُلْنَا : وَ مَا ذَاکَ؟ قَالَ : سِنِيْنَ قَالَ فَيَجِيْيئُ إِلَيْهِ رَجُلٌ فَيَقُوْلُ : يَا مَهْدِيُّ، أعْطِنِي أَعْطِنِي قَالَ : فَيَحْثِي لَهُ فِي ثَوْبِهِ مَا اسْتَطَاعَ أنْ يَحْمِلَهُ. رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَ أحْمَدُ.

وَقَالَ أبُوعِيْسَي : هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں کہ ہم نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بعد وقوع حوادث کے خیال سے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پوچھا کہ آپ کے بعد کیا ہوگا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت میں امام مہدی ہوں گے جو پانچ سات یا نو تک حکومت کریں گے (زید راوی حدیث کو ٹھیک مدت میں شک ہے) میں نے پوچھا کہ اس عدد سے کیا مراد ہے؟ آپ. صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : (اس عدد سے مراد) سال ہیں۔ ان کا زمانہ ایسی خیر و برکت کا ہوگا کہ ایک شخص ان سے آ کر سوال کرے گا اور کہے گا کہ اے مہدی! مجھے کچھ دیجئے، مجھے کچھ دیجئے۔ آپ نے فرمایا کہ امام مہدی ہاتھ بھر بھر کر اس کو اتنامال دے دیں گے جتنا وہ اٹھانے کی استطاعت رکھتا ہوگا۔‘‘ اس حدیث کو امام ترمذی اور امام احمد نے روایت کیا ہے اور امام ترمذی فرماتے ہیں کہ یہ حدیث حسن ہے۔

الحديث رقم 32 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الفتن، باب : 53، 4 / 506، الرقم : 2232، وأحمد بن حنبل في المسند، 3 / 21، الرقم : 11179.

374 / 33. عَنْ أبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ صعَنِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَکُوْنُ فِي أُمَّتِي الْمَهْدِيُّ إِنْ قَصُرَ فَسَبْعٌ وَ إِلاَّ فَتِسْعٌ تُنْعَمُ أُمَّتِي فِيْهِ نِعْمَةٌ لَمْ يُنْعَمُوْا مِثْلَهَا قَطُّ تُؤْتِي الْأرْضُ أُکَلَهَا لَا تَدَّخِرُعَنْهُمْ شَيْئًا وَالْمَالُ يَوْمَئِذٍ کَدُوْسٍ يَقُوْمُ الرَّجُلُ يَقُوْلُ : يَا مَهْدِيُّ، أعْطِنِي فَيَقُوْلُ : خُذْ.

رَوَاهُ ابْنُ ماجة وَالْحَاکِمُ.

’’حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت میں مہدی ہوگا جو کم سے کم سات سال ورنہ نو سال تک رہے گا۔ ان کے زمانے میں میری امت اتنی خوشحال ہوگی کہ اس سے قبل کبھی ایسی خوشحال نہ ہوئی ہوگی۔ زمین اپنی ہر قسم کی پیداوار ان کے لئے نکال کر رکھ دے گی اور کچھ بچا کر نہ رکھے گی اور مال اس زمانے میں کھلیان میں اناج کے ڈھیر کی طرح پڑا ہوگا حتی کہ ایک شخص کھڑا ہو کر کہے گا اے مہدی! مجھے کچھ دیجئے۔ وہ فرمائیں گے (جتنا مرضی میں آئے) اٹھالے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 33 : أخرجه ابن ماجة في السنن کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1366، الرقم : 4083، والحاکم في المستدرک، 4 / 601، الرقم : 8675، وابن أبي شيبة في المصنف، 7 / 512، الرقم : 37638.

375 / 34. عَنْ أبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَخْرُجُ فِي آخِرِ أُمَّتِي الْمَهْدِيُّ. يَسْقِيهِ اﷲُ الْغَيْثَ، وَتُخْرِجُ الْأرْضُ نِبَاتَهَا، وَيُعْطِي الْمَالَ صِحَاحًا، وَتَکْثُرُ الْمَاشِيَة وَ تَعْظُمُ الْأُمَّة يَعِيْشُ سَبْعًا أوْ ثَمَانِيًا يَعْنِي حِجَجًا. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

وَ قَالَ الْحَاکِمُ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِْسْنَادِ وَ وَافَقَهُ الذَّهْبِيُّ.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت کے آخری دور میں مہدی پیدا ہونگے۔ اللہ تعالیٰ ان پر خوب بارش برسائے گا اور زمین اپنی پیداوار باہر نکال دے گی اور وہ لوگوں کو مال یکساں طور پر دیں گے۔ ان کے زمانۂ (خلافت) میں مویشیوں کی کثرت اور امت کی عظمت ہوگی (وہ خلافت کے بعد) سات سال یا آٹھ سال زندہ رہیں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیاہے اور فرمایا کہ یہ حدیث صحیح الاسناد ہے اور امام ذہبی نے ان کی موافقت کی ہے۔

الحديث رقم 34 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 601، الرقم : 8673.

376 / 35. عَنْ مُجَاهِدٍ قَالَ : حَدَّثَنِي فُلاَنٌ : رَجُلٌ مِنْ أصْحَابِ النَّبِيِّ صلي الله عليه وآله وسلم : أنَّ الْمَهْدِيَّ لاَ يَخْرُجُ حَتَّي تُقْتَلَ النَّفْسُ الزَّکِيَة، فَإِذَا قُتِلَتِ النَّفْسُ الزَّکِيَة غَضِبَ عَلَيْهِمْ مَنْ فِي السَّمَاءِ وَمَنْ فِي الْأرْضِ فَأتَي النَّاسُ الْمَهْدِيَّ فَزَفُّوْهُ کَمَا تُزَفُّ الْعُرُوْسُ إِلَي زَوْجِهَا لَيْلَة عُرْسِهَا، وَهُوَ يَمْلَأُ الْأرْضَ قِسْطًا وَعَدْلاً، وَتُخْرِجُ الْأرْضُ نَبَاتَهَاَ و تُمْطِرُ السَّمَاءُ مَطْرَهَا، وَتُنْعَمُ أُمَّتِي فِي وِلَايَتِهِ نِعْمَةٌ لَمْ ُتنْعَمْهَا قَطُّ. رَوَاهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَة.

’’امام مجاہد (مشہور تابعی) ایک صحابی رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے کہا ’’نفس زکیہ‘‘ کے قتل کے بعد ہی خلیفہ مہدی کا ظہور ہوگا۔ جس وقت نفس زکیہ قتل کردیے جائیں گے تو زمین و آسمان والے ان قاتلین پر غضب ناک ہوں گے۔ بعد ازاں لوگ(امام) مہدی کے پاس آئیں گے اور انہیں دلہن کی طرح آراستہ و پیراستہ کریں گے اور (امام) مہدی زمین کو عدل و انصاف سے بھر دیں گے۔ (ان کے زمانہ خلافت میں) زمین اپنی پیداوار کو اُگا دے گی اور آسمان خوب برسے گا اور میری امت پر ان کی ولایت و سلطنت میں اس قدر نعمتیں نازل ہوں گی کہ اتنی نعمتوں سے اسے پہلے کبھی نہیں نوازا گیا ہوگا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 35 : أخرجه ابن أبي شيبة في المصنف : 7 / 514، الرقم : 37653.

7. فَصْلٌ فِي جَامِعِ مَنَاقِبِ صِفَاتِهِ وَ مَنَاقِبِهِ عليه السلام

(سیدنا امام مہدی علیہ السلام کی جامع صفات اور مناقب کا بیان)

377 / 36. عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ جَزْءِ الزَّبِيْدِيِّ رضي الله عنه، قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : يَخْرُجُ نَاسٌ مِنَ الْمَشْرِقِ، فَيُوَطِّئُونَ لِلْمَهْدِيِّ يَعْنِي سُلْطَانَهُ. رَوَاهُ ابْنُ ماجة وَالْبَزَّارُ وَالطَّبَرَانِيُّ.

’’حضرت عبد اﷲ بن حارث بن جزء زبیدی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مشرق کی جانب سے لوگوں کا ظہور ہوگا جو امام مہدی کی حکومت کے سامنے سرِ تسلیم خم کریں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ، بزار اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 36 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الفتن، باب : خروج المهدي، 2 / 1368، الرقم : 4088، والبزار في المسند، 9 / 243، الرقم : 3784، والطبراني في المعجم الأوسط، 1 / 94، الرقم : 285، والهيثمي في مجمع الزوائد، 7 / 318، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 127.

378 / 37. عَنْ أبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه : أنَّ رَسُوْلَ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ : يَخْرُجُ فِي آخِرِ أُمَّتِي الْمَهْدِيُّ يَسْقِيْهِ اﷲُ الْغَيْثَ وَ تُخْرِجُ الْأرْضُ نَبَاتَهَا وَ يُعْطِي الْمَالَ صِحَاحًا وَ تَکْثُرُ الْمَاشِيَة وَ تُعَظَّمُ الْأُمَّة يَعِيْشُ سَبْعًا أوْ ثَمَانِيًا يَعْنِي حِجَاجًا. رَوَاهُ الْحَاکِمُ، وَأبُوْ نُعَيْمٍ کَمَا قَالَ السُّيُوْطِيُّ.

وَ قَالَ الْحَاکِمُ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ.

’’حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میری امت کے آخری دور میں مہدی علیہ السلام کا ظہور ہوگا جسے اﷲ تعالیٰ اپنی نعمتوں سے خوب نوازے گا اور زمین بھی اپنے خزانے اگل دے گی اور وہ مال کی بالکل ٹھیک تقسیم کرے گا اور (اس کے دور میں) مویشیوں کی بہتات ہوگی اور میری امت کی خوب تعظیم ہوگی وہ (اپنی خلافت میں) سات یا آٹھ سال زندہ رہے گا۔‘‘ اس حدیث کو امام حاکم اور ابو نعیم نے روایت کیا ہے جیسا کہ امام سیوطی نے ’’الحاوی للفتاوی‘‘ میں بیان کیا ہے اور امام حاکم کہتے ہیں یہ حدیث صحیح الاسناد ہے۔

الحديث رقم 37 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 4 / 601، الرقم : 8673، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 132.

379 / 38. عَنْ جَعْفَرٍ رضي الله عنه قَالَ : يَقُوْمُ الْمَهْدِيُّ سَنَة مِائَتَيْنِ.

رَوَاهُ ابْنُ حَمَّادٍ.

’’حضرت امام جعفر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ امام مہدی علیہ السلام سن دو سو (200ھ) میں ظاہر ہوں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام نعیم بن حماد نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 38 : أخرجه نعيم بن حماد في الفتن، 1 / 332، الرقم : 953، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 144.

380 / 39. عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْحَنَفِيَة رضي الله عنه قَالَ : يَمْلِکُ بَنُو الْعَبَّاسِ حَتَّي يَأتِيَنَّ النَّاسَ مِنَ الْخَيْرِ، ثُمَّ يَتَشَعَّثُ أمْرُهُمْ فِي سَنَة خَمْسٍ وَ تِسْعِيْنَ، فَإِنْ لَمْ تَجِدُوا إِلَّا جُحْرَ عَقْرَبٍ فَادْخُلُوا فِيْهِ فَإِنَّهُ يَکُوْنُ فِي النَّاسِ شَرٌّ طَوِيْلٌ، ثُمَّ يَزُولُ مُلْکُهُمْ سَنَة سَبْعٍ وَتِسْعِيْنَ أوْتِسْعٍ وَتِسْعِيْنَ، وَيَقُوْمُ الْمَهْدِيُّ فِي سَنَة مِائَتَيْنِ. رَوَاهُ أبُو نُعَيْمٍ وَالسُّيُوْطِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ.

’’حضرت محمد بن حنفیہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ بنو عباس لوگوں پر حکومت کریں گے یہاں تک کہ انہیں ہر طرح کی خبر ملے گی، پھر ان کی حکومت کا شیرازہ سن پچانوے ہجری میں بکھر جائے گا، پس اس وقت اگر تم کسی بچھو کا بل بھی پاؤ تو اس میں داخل ہو جانا کیونکہ اس وقت لوگوں میں ایک کبھی نہ ختم ہونے والا شر بپا ہوگا، پھر سن ستانوے یا ننانوے میں ان کی حکومت ختم ہو جائے گی اور پھر سن دو سو (200ھ) میں امام مہدی علیہ السلام کا ظہور ہوگا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابو نعیم اور امام سیوطی نے روایت کیا ہے یہ الفاظ امام سیوطی کے ہیں۔

الحديث رقم 39 : أخرجه أبو نعيم في الفتن، 1 / 217، الرقم : 599، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 163 - 164.

381 / 40. عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ حُمَيْرٍ عَنْ أبِيْهِ، قَالَ : يَمْلِکُ الْمَهْدِيُّ سَبْعَ سِنِيْنَ وَشَهْرَيْنِ وَأيَامٍ. رَوَاهُ نُعَيْمُ بْنُ حَمَّادٍ وَ السُّيُوطِيُّ.

’’محمد بن حمیر اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے بیان کیا : امام مہدی علیہ السلام سات سال دو ماہ اور کچھ دن حکومت کریں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام نعیم بن حماد اور سیوطی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 40 : أخرجه نعيم بن حماد في الفتن، 1 / 378، الرقم : 1130، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 155.

382 / 41. عَنْ أبِي جَعْفَرٍ قَال : يَظْهُرُ الْمَهْدِيُّ بِمَکَّة عِنْدَ الْعِشَاءِ، وَ مَعَهُ رَايَة رَسُوْلِ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم وَ قَمِيْصُهُ وَسَيْفُهُ وَ عَلَامَاتٌ وَ نُوْرٌ وَبَيَانٌ، فَإِذَا صَلَّي الْعِشَاءَ نَادَي بِأعْلَي صَوْتِهِ يَقُوْلُ : أُذَکِّرُکُمُ اﷲَ أيَهَا النَّاسُ وَمُقَامُکُمْ بَيْنَ يَدَي رَبِّکُمْ فَقَدْ اتَّخَذَ الْحَجَرَ وَبَعَثَ الْأنْبِيَاءَ، وَأنْزَلَ الْکِتَابَ، وَآمُرُکُمْ أنْ لَا تُشْرِکُوْا بِهِ شَيْئًا، وَأنْ تُحَافِظُوْا عَلَي طَاعَتِهِ وَطَاعَة رَسُوْلِهِ صلي الله عليه وآله وسلم، وَأنْ تُحْيُوْا مَا أحْيَا الْقُرْآنُ، وَتُمِيْتُوْا مَا أمَاتَ، وَتَکُوْنُوْا عَلَي الْهُدَي، وَوُزَرَاءَ عَلَي التَّقْوَي، فَإِنَّ الدُّنْيَا قَدَ دَنَا فَنَاؤُهَا وَزَوَالُهَا، وَ آذَنْتُ بِانْصِرَامٍ، فَإِنِّي أدْعُوْکُمْ إِلَي اﷲِ وَإِلَي رَسُوْلِهِ، وَالْعَمَلِ بِکِتَابِهِ، وَإِمَاتَة الْبَاطِلِ، وَإِحْيَاءِ سُنَّتِهِ، فَيَظْهُرُ فِي ثَلَثِمِائَة وَثَلَاثَة عَشَرَ رَجُلًا عَدَدَ أهْلِ بَدْرٍ عَلَي غَيْرِ مِيْعَادِ قَزَعًا کَقَزَعِ الْخَرِيْفِ، رُهْبَانٌ بِاللَّيْلِ أُسَدٌ بِالنَّهَارِ، فَيَفْتَحُ اﷲُ لِلْمَهْدِيِّ أرْضَ الْحِجَازِ، وَيَسْتَخْرِجُ مَنْ کَانَ فِي السِّنِّ مِنْ بَنِي هَاشِمٍ، وَتَنْزِلُ الرَّايَاتُ السُّوْدُ الْکُوْفَة، فَيَبْعَثُ اﷲُ بِالْبَيْعَة إِلَي الْمَهْدِيِّ، وَيَبْعَثُ الْمَهْدِيُّ جُنُوْدَهُ فِي الْآفَاقِ، وَيُمِيْتُ الْجَوْرَ وَأهْلَهُ، وَتَسْتَقِيْمُ لَهُ الْبُلْدَانُ، وَيَفْتَحُ اﷲُ عَلَي يَدَيْهِ الْقُسْطُنْطَيْنِيَة. رَوَاهُ ابْنُ حَمَّادٍ وَالسُّيُوْطِيُّ.

’’حضرت ابو جعفر بیان کرتے ہیں کہ امام مہدی علیہ السلام کا عشا کے وقت مکہ میں ظہور ہوگا اور اُن کے ساتھ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا (عطا کردہ) جھنڈا اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا کرتہ مبارک اور تلوار ہوگی (اس کے علاوہ دیگر) علامات، نور اور واضح بیان ہوگا۔ پس آپ جب عشاء کی نماز ادا کر لیں گے بآوازِ بلند ندا دیں گے : اے لوگو! میں تمہیں اﷲ اور اس کے حضور تمہارے کھڑے ہونے کی یاد دلاتا ہوں۔ جس نے اپنی شان کے لائق اپنے مقام کو لازم پکڑا اور (لوگوں کی اصلاح کے لئے) انبیاء مبعوث کئے اور کتابیں نازل کیں اور میں تمہیں حکم دیتا ہوں کہ اس اﷲ کا کسی کو شریک نہ ٹھہراؤ اور اس کی اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اطاعت کو لازم پکڑو اور اس طریقہ کو زندہ کرو جسے قرآن نے زندہ کیا اور اس طریقے کو ختم کرو جسے قرآن نے ختم کیا ہے اور ہدایت کے راستہ میں ایک دوسرے کے مددگار ہو جاؤ اور تقویٰ کے کاموں میں ایک دوسرے کے معاون بن جاؤ۔ پس بے شک دنیا تباہی اور بربادی کے دہانے پر ہے اور میں تمہیں ہر طرف سے کٹ کر ایک اﷲ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور ان کی کتاب پر عمل کرنے، باطل کو ختم کرنے، سنت کو زندہ کرنے کی طرف بلاتا ہوں۔ پس آپ علیہ السلام کا ظہور اصحاب بدر کی تعداد کے برابر تین سو تیرہ لوگوں میں ہوگا جو بغیر کسی معینہ وقت کے آئیں گے اور خریف کے پتوں کی طرح دنیا میں بکھرے ہوئے ہوں گے جو رات کے وقت راہوں کی طرح ہوں گے لیکن دن کے وقت شیروں کی طرح ہوں گے۔ پس اﷲ تعالیٰ امام مہدی علیہ السلام کے لئے ارض حجاز کو فتح کرے گا اور وہ بنو ہاشم کے نوجوانوں کو اپنے ساتھ جہاد کے لئے نکالیں گے۔ اور وہ سیاہ جھنڈوں کے ساتھ سرزمین کوفہ میں اتریں گے۔ پس اﷲ تعالیٰ امام مہدی کو اذنِ بیعت عطا فرمائے گا اور وہ اپنے لشکروں کو پوری دنیا میں پھیلا دیں گے اور ظلم اور ظالموں کو ختم کریں گے۔ پس تمام ممالک ان کے زیر سایہ ہو جائیں گے اور اﷲ تعالیٰ ان کے ہاتھ قسطنطنیہ کو فتح کرے گا۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن حماد اور سیوطی نے بیان کیا ہے۔

الحديث رقم 41 : أخرجه نعيم بن حماد في الفتن، 1 / 345، الرقم : 999، والسيوطي في الحاوي للفتاوي، 2 / 144. 145.

383 / 42. عَنْ حُذَيْفَة رضي الله عنه : قَالَ : قَالَ رَسُولُ اﷲِ صلي الله عليه وآله وسلم : الْمَهْدِيُّ رَجُلٌ مِنْ وَلَدِي، لَوْنُهُ لَوْنٌ عَرَبِيُّ، وَ جِسْمُهُ جِسْمٌ إِسْرَائِيْلِيٌّ، عَلَيخَدِّهِ الْأيْمَنِ خَالٌ کَأَنَّهُ کَوْکَبٌ دُرِّيٌّ يَمْلَأُ الْأرْضَ عَدْلًا کَمَا مُلِئَتْ جَوْرًا، يَرْضَي فِيخَلَافَتِهِ أَهْلُ الْأرْضِ وَ أَهْلُ الْسَّمَاءِ وَالطَّيْرُ فِي الْهَوَاء يَمْلِکُ عِشْرِيْنَ سَنَة. رَوَاهُ الدَّيْلَمِيُّ.

’’حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا کہ حضور نبی اکرم. صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مہدی میری اولاد میں سے ہوں گے۔ ان کا رنگ عربی اور ان کی جسمانی ساخت اسرائیلی ہوگی۔ انکے دائیں رخسار پر تل ہوگا گویا وہ نور افشاں ستارہ ہوں گے۔ وہ زمین کو عدل سے بھر دیں گے جس طرح وہ پہلے ظلم سے بھری ہوئی تھی ان کی خلافت پر اھلِ زمین اور اھلِ آسمان سب راضی ہوں گے اور فضا میں پرندے بھی راضی (خوش) ہوں گے۔‘‘ اس حدیث کو امام دیلمی نے روایت کیا ہے۔

الحديث رقم 42 : أخرجه الديلمي في مسند الفردوس، 4 / 221، الرقم : 6667.

Copyrights © 2019 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved