Merits and Virtues of Sayyiduna Umar b. al-Khattab (R.A.)

باب یازدہم

(11) بَابٌ فِيْ جَامِعِ صِفَاتِهِ

(آپ رضی اللہ عنہ کی جامع صفات کا بیان)

70. عَنْ أنَسِ بْنِ مَالِکٍ قَالَ : صَعِدَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم أحُدًا وَ مَعَهُ أبُوْبَکْرٍ وَ عُمَرُ وَ عُثْمَانُ فَرَجَفَ بِهِمْ فَضَرَبَهُ بِرِجْلِهِ وَ قَالَ : اُثْبُتْ أحُدٌ، فَمَا عَلَيْکَ إِلَّا نَبِيٌّ أوْ صِدِّيقٌ، أوْ شَهِيْدَانِ. رَوَاهُ الْبُخَارِيُ وَ التِّرْمِذِيُّ وَ أبُوْدَاؤْدَ.

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ ایک روز حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کوہِ اُحد پر تشریف لے گئے اس وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ حضرت ابوبکر، حضرت عمر اور حضرت عثمان رضی اللہ عنھم تھے۔ ان کی موجودگی کی وجہ سے پہاڑ وجدمیں آگیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس پر اپنا قدم مبارک مارا اور فرمایا : اے اُحد ٹھہر جا! تیرے اوپر ایک نبی، ایک صدیق اور دو شہیدوں کے سوا اور کوئی نہیں۔ اس حدیث کو امام بخاری، ترمذی اور ابوداؤد نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 70 : أخرجه البخاري في الصحيح، کتاب فضائل الصحابة، باب مناقب عمر بن الخطاب، 3 / 1348، الحديث رقم : 3483، و في کتاب فضائل الصحابة، باب لو کنت متخذا خليلا، 3 / 1344، الحديث رقم : 3472، و الترمذي في الجامع الصحيح، کتاب المناقب، باب في مناقب عثمان، 5 / 624، الحديث رقم : 3697، و أبوداؤد في السنن، کتاب السنة، باب في الخلفاء، 4 / 212، الحديث رقم : 4651، و ابن حبان في الصحيح، 15 / 280، الحديث رقم : 6865، و النسائي في السنن الکبریٰ، 5 / 43، الحديث رقم : 8135.

71. عَنِ بْنِ عُمَرَ رضی اﷲ عنهما قَالَ : کُنَّا نَقُوْلُ فِي زمَنِ النَّبِيِّ صلی الله عليه وآله وسلم لَا نَعْدِلُ بِأَبِيْ بَکْرِ أَحَدًا، ثُمَّ عُمَرَ، ثُمَّ عُثْمَانَ، ثُمَّ نَتْرَکُ أَصْحَابَ النَّبيِّ صلی الله عليه وآله وسلم لَا نُفَاضِلُ بَيْنَهُمْ. رَوَاهُ الْبُخَارِیُّ.

’’حضرت عبد اﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما روایت کرتے ہیں کہ ہم حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانے میں کہا کرتے تھے کہ ہم حضرت ابوبکر کے برابر کسی کو نہیں ٹھہراتے، ان کے بعد حضرت عمر اور پھر حضرت عثمان رضی اللہ عنہم کو شمار کیا کرتے تھے اور دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو چھوڑ دیتے تھے اور ان میں کسی کو کسی پر فضلیت نہیں دیتے تھے۔ اس حدیث کو امام بخاری اور ابوداؤد نے راویت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 71 : أخرجه البخاري في الصحيح، کتاب فضائل الصحابة، باب في مناقب عثمان، 3 / 1352، الحديث رقم : 3494، أبوداؤد في السنن، کتاب السنة، باب في التفضيل، 4 / 206، الحديث رقم : 4627، و أبويعلي في المسند، 9 / 454، الحديث رقم : 5602، و ابن أبي عاصم، 2 / 567، الحديث رقم : 1192، و البيهقي في الإعتقاد، 1 / 366.

72. عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رضی اﷲ عنهما قَالَ : قَدِمَ عُيَيْنَةُ بْنُ حِصْنِ بْنِ حُذَيْفَةَ، فَنَزَلَ عَلَی ابْنِ أَخيِهِ الحُرِّ بْنِ قَيْسٍ، وکَانَ مِنَ النَّفَرِ الَّذِينَ يُدْنِيهِمْ عُمَرُ، وَکَانَ الْقُرَّاءُ أَصْحَابَ مَجَالِسِ عُمَرَ وَ مَشَاوَرَتِهِ، کُهُولًا کَانُوا أَوْ شُبَّاناً. فَقَالَ عُيَيْنَةُ لِإِبْنِ أَخِيهِ : يَا ابْنَ أَخِي، لَکَ وَجْهٌ عِنْدَ هَذَا الأمِيرِ، فَاسْتَأذِنْ لِي عَلَيْهِ. قَالَ : سَأَسْتَأْذِنُ لَکَ علَيْهِ. قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ : فاسْتَأْذَنَ الْحُرُّ لِعُيَيْنَةَ، فَأَذِنَ لَهُ عُمَرُ، فَلَمَّا دَخَلَ عَلَيْهِ. قَالَ هِي يَا ابْنَ الْخَطَّابِ، فَوَاﷲِ مَا تُعْطِينَا الْجَزْلَ، وَلاَ تَحْکُمُ بَيْنَنَا بِالْعَدْلِ. فَغَضِبَ عُمَرُ حَتَّی هَمَّ بِهِ. فَقَالَ لَهُ الْحُرُّ : يَا أَمِيرَ الْمُؤمِنِينَ، إِنَّ اﷲَ تَعَالَی قَالَ لِنَبِيِّهِ صلی الله عليه وآله وسلم (خُذِ الْعَفْوَ وَأْمُرْ بالْعُرْفِ وَأَعْرضْ عَنِ الجَاهِلِينَ). وَإِنَّ هٰذَا مِنَ الْجَاهِلِيْنَ وَاﷲِ مَا جَاوَزَهَا عُمَرُ حِينَ تَلاَهَا عَلَيْهِ، وَکَانَ وَقَّافاً عِنْدَ کِتَابِ اﷲِ. رَوَاهُ الْبُخَارِيُّ.

’’حضرت عبداﷲ بن عباس رضی اﷲ عنہما فرماتے ہیں کہ جب عیینہ بن حصن بن حذیفہ آئے تو اپنے بھتیجے حر بن قیس کے پاس ٹھہرے اور یہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے مقربین میں سے تھے۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی مجالس اور مشاورت میں قراء حضرات شریک ہوتے تھے خواہ وہ بوڑھے ہوں یا جوان۔ حضرت عیینہ نے اپنے بھتیجے سے کہا : اے بھتیجے : تمہاری تو امیر المومنین تک رسائی ہے، لہٰذا میرئے لئے انکی خدمت میں حاضر ہونے کی اجازت طلب کرو۔ انہوں نے جواب دیا کہ میں عنقریب آپ کے لئے اجازت حاصل کر لوں گا۔ حضرت عبداﷲ بن عباس رضی اﷲ عنہما کا بیان ہے کہ جب حضرت حر بن قیس نے حضرت عیینہ کے لئے اجازت طلب کی تو آپ رضی اللہ عنہ نے اجازت دے دی، جب یہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی خدمت میں حاضر ہوے تو کہنے لگے، اے ابن خطاب! خدا کی قسم! نہ تو آپ ہم پر مال لٹاتے ہیں اور نہ ہمارے درمیان عدل و انصاف ہی فرماتے ہیں۔ اس پر حضرت عمر رضی اللہ عنہ ناراض ہوئے اور انہیں سزا دینے کا ارادہ کیا لیکن حضرت حر نے عرض کیا : اے امیر المومنین! اﷲ تعالی نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے فرمایا : ’’اے محبوب! معاف کرنا اختیار کیجئے اور بھلائی کا حکم دیجئے اور جاہلوں سے منہ پھیر لیجئے‘‘ اور یہ شخص ایسے ہی جاہلوں میں سے ہے۔ راوی بیان کرتے ہیں کہ خدا کی قسم! حضرت عمر رضی اللہ عنہ (وہیں رک گئے اور) اس حکم الٰہی سے ذرا برابر تجاوز نہ کیا۔ وہ اﷲ کی کتاب کے آگے سر جھکانے والے تھے۔ اس حدیث کو امام بخاری نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 72 : أخرجه البخاري في الصحيح، کتاب التفسير، باب خذ العفو و أمر بالعرف و أعرض عن الجاهلين، 4 / 1702، الحديث رقم : 4366، و في کتاب الإعتصام بالکتاب و السنة، باب الإقتداء بسنن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، 6 / 2657، الحديث رقم؛ 6856، و البيهقي في شعب الإيمان، 6 / 316.

73. عَنْ زَيْدِ بْنَ أسْلَمَ حَدَّثَهُ عَنْ أبِيْهِ قَالَ سَألَنِي ابْنُ عُمَرَ عَنْ بَعْضِ شَأنِهِ يَعنِي عُمَرَ فَأخْبَرْتُهُ فَقَالَ : مَا رَأيْتُ أحَدًا قَطُّ بَعْدَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم مِنْ حِيْنَ قُبِضَ کَانَ أجَدَّ وَ أجْوَدَ حَتَّی انْتَهَی مِنْ عُمَرَ بْنِ الخَطَّابِ. رَوَاهُ الْبُخَارِيُّ.

’’حضرت زید بن اسلم رضی اﷲ عنہما اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ حضرت عبداﷲ ابن عمر رضی اﷲ عنہما نے مجھ سے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے بعض حالات پوچھے تومیں نے انہیں بتایا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی وفات کے بعد میں نے حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ جیسا نیک اور سخی نہیں دیکھا گویا یہ خوبیاں تو آپ کی ذات پر ختم ہوگئی تھیں۔ اس حدیث کو امام بخاری نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 73 : أخرجه البخاري في الصحيح، کتاب فضائل الصحابة باب مناقب عمر بن الخطاب، 3 / 1348، الحديث رقم : 3484، و ابن سعد في الطبقات الکبریٰ، 3 / 292.

74. عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : أَنَا أَوَّلُ مَنْ تَنْشَقُّ عَنْهُ الْأرْضُ ثُمَّ أَبُوْبَکْرٍ ثُمَّ عُمَرُ، ثُمَّ آتِيَ أَهْلَ الْبَقِيْعِ فَيُحْشَرُوْنَ مَعِي، ثُمَّ أَنْتَظِرُ أَهْلَ مَکَّةَ حَتَّی أُحْشَرَ بَيْنَ الْحَرَمَيْنِ. رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ

وَ قَالَ هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ.

’’حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : سب سے پہلے جس کے لئے زمین کو کھولا جائے گا وہ میں ہوں پھر ابوبکر کے لئے اور پھر عمر کے لئے پھر اہل بقیع کی باری آئے گی اور ان کو میرے ساتھ اکٹھا کیا جائے گا پھر میں اہل مکہ کا انتظار کروں گا یہاں تک کہ حرمین شریفین کے درمیان لوگوں کے ساتھ جمع کیا جاؤں گا۔ اس حدیث کو امام ترمذی نے روایت کیا ہے اور کہا : یہ حدیث حسن ہے۔‘‘

الحديث رقم 74 : أخرجه الترمذي في الجامع الصحيح، کتاب المناقب، باب في مناقب عمر، 5 / 622، الحديث رقم : 3692، و ابن حبان في الصحيح، 15 / 324، الحديث رقم : 6899، و الحاکم في المستدرک علي الصححين، 2 / 505، الحديث رقم : 4732، و في 3 / 72، الحديث رقم : 4429، و الهيثمي في موارد الظمان، 1 / 539، الحديث رقم : 2194.

75. عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِاﷲِ رضی اﷲ عنهما قَالَ : إِنَّ عَلِيًّا دَخَلَ عَلَی عُمَرَ وَ هُوَ مُسَجًّی فَقَالَ : صَلَّی اﷲُ عَلَيْکَ! ثُمَّ قَالَ : مَا مِنَ النَّاسِ أَحَدٌ أَحَبُّ إِلَيَّ أنْ أَلْقَی اﷲُ بِمَا فِي صَحِيْفَتِهِ مِنْ هَذَا الْمُسَجّٰی. رَوَاهُ الْحَاکِمُ وَ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت جابر بن عبد اﷲ رضی اﷲ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے پاس تشریف لائے اور وہ ایک چادر میں لپٹے ہوئے تھے تو حضرت علی رضی اللہ عنہ نے فرمایا : اﷲ تعالیٰ تجھ پر رحمت فرمائے پھر فرمایا : لوگوں میں سے کوئی بھی میرے نزدیک اس چادر میں لپٹے ہوئے سے زیادہ محبوب نہیں ہے جو کچھ اﷲ تعالیٰ کے صحیفہ (یعنی قرآن) میں ہے وہ اسے اس کے منشاء کے مطابق نازل فرماتا ہے۔ اس حدیث کو امام حاکم اور ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 75 : أخرجه الحاکم في المستدرک علي الصحيحين، 3 / 100، الحديث رقم : 4523، وابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 359، الحديث رقم : 32018.

76. عَنْ مَالِکِ بْنِ دِيْنَارٍ قَالَ : سُمِعَ صَوْتٌ بِجَبَلٍ تَبَالَةَ حِيْنَ قُتِلَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ رضي الله عنه شِعْرٌ :

لِيَبْکِ عَلَی الإِسْلَامِ مَنْ کَانَ بَاکِيًا
فَقَدْ أوْشَکُوْا هُلْکِی وَ مَا قَدِمَ الْعَهْدُ
وَ أَدْبَرَتِ الدُّنْيَا وَ أَدْبَرَ خَيْرُهَا
وَ قَدْ مَلْهَا مَنْ کَانَ يُؤْقِنُ بِالْوَعْدِ
فَنَظَرُوْا فَلَمْ يَرَوْا شَيْأ. رَوَاهُ الْحَاکِمُ.

’’ حضرت مالک بن دینار رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ جب حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کو شہید کیا گیا تو تبالہ پہاڑ سے یہ آواز سنائی دی گئی۔

(رونے والے کو اب اسلام پر رونا چاہیے اور تحقیق انہوں نے میری ہلاکت کا شکوہ کیا اور جو زمانہ آرہا ہے اور دنیا اور اس کی خیر نے پیٹھ پھیر لی ہے اور جو وعدے پر یقین رکھتا تھا وہ غفلت میں پڑا ہوا ہے۔)

پھر لوگوں نے ادھر ادھر دیکھا لیکن کوئی چیز نہ دیکھ سکے۔ اس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 76 : أخرجه الحاکم في المستدرک علي الصحيحين، 3 / 100، الحديث رقم : 4524، وأبو نعيم في حلية الاولياء، 2 / 376.

77. عَنْ أَبِيْ هُرَيْرَةَ عَنْ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم أنَّ اﷲَ عزوجل بَاهَی مَلَائِکَتَهُ بِعَبِيْدِهِ عَشِيَّةَ عَرَفَةَ عَامَةً وَ بَاهَی بِعُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ خَاصَةً. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْأُوْسَطِ.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ بے شک اللہ تبارک و تعالی عرفہ کی رات کو فرشتوں کے سامنے اپنے تمام بندوں پر فخر کرتا ہے اور خاص طور پر حضرت عمر رضی اللہ عنہ پر فخر کرتا ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام طبرانی نے ’’ المعجم الاوسط‘‘ میں بیان کیا ہے۔

الحديث رقم 77 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 2 / 61، الحديث رقم : 1251، و الهيثمي في مجمع الزوائد، 9 / 70، و ابن أبي عاصم في السنة، 2 / 586، الحديث رقم : 1273.

78. عَنِ عَبْدِاللّٰهِ ابْنِ مَسْعُوْدٍ قَالَ : مَا کُنَّا نَبْعَدُ أَنْ السَّکِيْنَةَ تَنْطِقُ عَلَی لِسَانِ عُمَرَ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْکَبِيْرِ.

’’حضرت عبد اﷲ ابن مسعود رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ ہم یہ خیال کیا کرتے تھے کہ آسمانی سکون قلب حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی زبان سے ٹپکتا تھا۔ اس حدیث کو امام طبرانی نے ’’المعجم الکبیر‘‘ میں بیان کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 78 : أخرجه الطبراني في المعجم الکبير، 9 / 167، الحديث رقم : 8827، و ابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 354، الحديث رقم : 31974، والهيثمي في مجمع الزوائد، 9 / 67، و المقدسي في الأحاديث المختارة، 2 / 171، الحديث رقم : 550، و أبونعيم في حلية الأولياء، 1 / 42، و معمر بن راشد في الجامع، 11 / 222، و أحمد بن حنبل في فضائل الصحابة، 1 / 444، الحديث رقم : 711. .

79. عَنْ طَارِقِ بْنِ شَهَابٍ قَالَ : کُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ السَّکِيْنَةَ تَنْزِلُ عَلَی لِسَانِ عُمَرَ. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْکَبِيْرِ.

’’حضرت طارق بن شہاب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم آپس میں باتیں کرتے تھے کہ آسمانی سکون قلب حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی زبان پر نازل ہوتا ہے۔ اس حدیث کو امام طبرانی نے ’’المعجم الکبیر‘‘ میں روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 79 : أخرجه الطبراني في المعجم الکبير، 8 / 320، الحديث رقم : 8202، و ابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 358، الحديث رقم : 32011، والهيثمي في مجمع الزوائد، 9 / 67، و أحمد بن حنبل في فضائل الصحابة، 1 / 442، الحديث رقم : 707، و أبونعيم في حلية الأولياء، 8 / 211.

80. عَنْ عَمَّارِ بْنِ يَاسِرٍ قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : يَا عَمَّارُ! أَتَانِيْ جِبْرِيْلُ آنِفًا فَقُلْتُ : يَا جِبْرِيْلُ حَدِّثْنِيْ بِفَضَائِلَ عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ فِي السَّمَاءِ! فَقَالَ : يَا مُحَمَّدُ صلی الله عليه وآله وسلم ! لَوْحَدَّثْتُکَ بِفَضَائِلَ عُمَرَ مِثْلَ مَا لَبِثَ نُوْحٌ فِي قَوْمِهِ أَلْفَ سَنَةٍ إِلاَّ خَمْسِيْنَ عَامًا مَا نَفَدَتْ فَضَائِلُ عُمَرَ، وَ إِنَّ عُمَرَ لَحَسَنَةٌ مِنْ حَسَنَاتِ أَبِيْ بَکْرٍ. رَوَاهُ أبُوْيَعْلٰی فِي مُسْنَدِهِ وَالطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الأوْسَطِ.

’’ حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اے عمار! ابھی میرئے پاس جبرائیل امین علیہ السلام آئے تھے اور میں نے ان سے پوچھا، اے جبرائیل مجھے آسمان والوں میں عمر کے فضائل کے بارے میں بتاؤ۔ اس نے کہا یا رسول اﷲ! اگر میں آپ کو اتنی مدت تک حضرت عمر کے فضائل بیان کرتا رہوں جتنی مدت حضرت نوح علیہ السلام زمین پر رہے یعنی نو سو پچاس برس، تب بھی عمر رضی اللہ عنہ کے فضائل ختم نہیں ہوں گے اور بے شک حضرت عمر رضی اللہ عنہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کی نیکیوں میں سے ایک نیکی ہیں۔ اس حدیث کو امام ابویعلی نے ’مسند‘ میں اور طبرانی نے ’’المعجم الاوسط‘‘ میں بیان کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 80 : أخرجه أبويعلي في المسند، 3 / 179، الحديث رقم : 1603، والطبراني في المعجم الاوسط، 2 / 158، الحديث رقم : 1570، و الروياني في المسند، 2 / 367، الحديث رقم : 1342، والديلمي في مسند الفردوس، 5 / 383، الحديث رقم : 8499.

81. عَنْ أَبِيْ سَعِيْدٍ عَنِ النَّبِيِّ صلی الله عليه وآله وسلم قَالَ : إِنَّ أَهْلَ الدَّرَجَاتِ الْعُلَی لَيَرَوْنَ مَنْ فَوْقَهُمْ، کَمَا تَرَوْنَ الْکَوْکَبَ الدُّرِّيَّ فِي أُفُقِ السَّمَاءِ، وَ إِنَّ أَبَابَکْرٍ وَعُمَرَ مِنْهُمْ، وَ أَنْعَمَا. رَوَاهُ أحْمَدُ وَ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الأوْسَطِ وَ الصَّغِيْرِ وَ أبُوْيَعْلَی.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : بے شک بلند درجات والے اپنے سے زیادہ بلند درجات والوں کو دیکھیں گے جس طرح تم آسمان کے افق پر چمکتا ہوا ستارہ دیکھتے ہو اور بے شک ابو بکر اور عمر، ان میں سے ہیں اور وہ کتنے ہی اچھے ہیں۔ اس حدیث کو احمد بن حنبل، طبرانی نے المعجم الاوسط اورالمعجم الصغیر اور ابویعلی نے اپنی مسند میں روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 81 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 3 / 26، الحديث رقم : 11222، و في 3 / 61، الحديث رقم : 11605، و الطبراني في المعجم الأوسط، 3 / 370، الحديث رقم : 3427، و في 9 / 184، الحديث رقم : 9488، و الطبراني في المعجم الصغير، 1 / 220، الحديث رقم : 353، و أبويعلي في المسند، 2 / 369، الحديث رقم : 1130، و الحميدي في المسند، 2 / 333، الحديث رقم : 755.

82. عَنْ عُبَيْدِ اﷲِ بْنِ عَبَّاسِ بْنِ عَبْدِالْمُطَّلِبِ أَخِي عَبْدِ اﷲِ قَالَ کَانَ لِلْعَبَّاسِ مِيْزَّابٌ عَلَی طَرِيْقِ عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ فَلَبِسَ عُمَرُ ثِيَابَهُ يَوْمَ الْجُمُعَةِ وَقَدْ کَانَ ذُبِحَ لِلْعَبَّاسِ فَرْخَانِ، فَلَمَّا وَافِی الْمِيْزَابَ صُبَّ مَاءٌ بِدَمِ الْفَرْخَيْنِ فَأصَابَ عُمَرَ، وَفِيْهِ دَمُ الْفَرْخَيْنِ، فأَمَرَ عُمَرُ بِقَلْعِهِ، ثُمَّ رَجَعَ عُمَرُ فَطَرَحَ ثيَابَهُ، وَلَبِسَ ثِيَابًا غَيْرثِيَابِه ثُمَّ جَاءَ فَصَلیَّ بِالنَّاسِ فَأَتَاهُ الْعَبَّاسُ : فَقَالَ وَاﷲِ اِنَّهُ لَمُوْضِعُ الَّذِيْ وَضَعَهُ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم، فَقَال عُمَرُ لِلْعَبَّاسِ وَأَنَا أَعْزِمُ عَلَيْکَ لَمَّا صَعِدْتَ عَلَی ظَهْرِيْ، حَتَّی تَضَعَهُ فِي الْمَوْضِعِ الَّذِيْ وَضَعَهُ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم، فَفَعَلَ ذَلِکَ الْعَبَّاسُ رضی الله عنه. رَوَاهُ أحْمَدُ.

’’حضرت عبداﷲ ابن عباس کے بھائی حضرت عبید اﷲ ابن عباس کہتے ہیں کہ حضرت عباس رضی اللہ عنہ کے گھر کا ایک پرنالہ حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے راستے کی طرف تھا ایک دفعہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے جمعہ کے روز اپنے کپڑے پہنے اور اسی دن حضرت عباس کے لیے دو چوزے ذبح کئے گئے تھے پس جب پرنالہ سے چوزوں کے خون سے ملا ہوا پانی بہنے لگا تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ پر پانی گرا پس حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اس پر نالے کو وہاں سے اکھاڑنے کا حکم دے دیا پھر آپ رضی اللہ عنہ واپس لوٹ آئے اور اپنا وہ لباس اتارا اور نیا لباس پہنا پھر آ کر لوگوں کی امامت کروائی۔ بعد میں حضرت عباس رضی اللہ عنہ آپ رضی اللہ عنہ کے پاس آئے اور کہا اے عمر! اﷲ کی قسم! بے شک یہ اس جگہ پر نصب ہے جہاں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کو رکھا تھا۔ پس حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے حضرت عباس رضی اللہ عنہ سے کہا اور میں اس وقت تک آپ سے تاکید کرتا رہوں گا جب تک آ؛پ میری پیٹھ پر سوار ہو کر اس پرنالے کو اسی جگہ پردوبارہ نہیں لگالیتے جہاں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کو لگایا تھا پس حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے ایسا ہی کیا۔ اس حدیث کو احمد بن حنبل نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 82 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 1 / 210، الحديث رقم : 1790، و المقدسي في الأحاديث المختارة، 8 / 391، الحديث رقم : 482.

83. عَنْ سَالِمٍ قَالَ : جَاءَ أَهْلُ نِجْرَانَ إِلَی عَلِيٍّ فَقَالُوْا : يَا أَمِيْرَ الْمُؤْمِنِيْنَ کِتَابُکَ بِيَدِکَ وَشِفَاعَتُکُ بِلِسَانِکَ أَخْرَجَنَا عُمَرُ مِنْ أَرْضِنَا فَأُرْدُدْنَا إِلَيْهَا فَقَالَ لَهُمْ عَلِيّ : وَيْحَکُمْ إِنَّ عُمَرَ کَانَ رَشِيْدَ الْأَمْرِ وَلاَ أُغَيِّرُ صَنْعَةَ عُمَرَ. رَوَاهُ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت سالم رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ اہل نجران حضرت علی رضی اللہ عنہ کے پاس آئے اور کہا : اے امیر المومنین! آپ کا نامہ اعمال آپ کے ہاتھ میں ہے اور آپ کی شفاعت آپ کی زبان میں ہے ہمیں عمر نے ہماری زمین سے نکال دیا ہے آپ ہمیں ہماری زمین کی طرف لوٹا دیں۔ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے ان سے کہا : تمہارا برا ہو بے شک عمر بالکل درست کام انجام دینے والے تھے اور میں ان کا کیا ہوا فیصلہ تبدیل نہیں کروں گا۔ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 83 : أخرجه ابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 357، الحديث رقم : 32004، و خطيب البغدادي في التاريخ البغداد، 6 / 185، و أحمد بن حنبل في فضائل الصحابة، 1 / 366.

84. عَنْ أَبِي السَّفْرٍ قَالَ : رُئِيَ عَلٰی عَلِيٍّ بُرْدٌ کَانَ يُکْثِرُ لِبْسَهُ قَالَ : فَقِيْلَ لَهُ : إِنَّکَ لَتُکْثِرُ لِبْسَ هَذَا الْبُرْدَ فَقَالَ : إِنَّهُ کَسَانِيْهِ خَلِيْلِيْ وَصَفِيِّيْ وَصَدِيْقِيْ وَخَاصِيْ عُمَرُ إِنَّ عُمَرَ نَاصِحُ اﷲِ فَنَصَحَهُ اﷲُ ثُمَّ بَکیٰ. رَوَاهُ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت ابو سفر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ پرایک چادر دیکھی گئی جو آپ رضی اللہ عنہ اکثر پہنتے تھے۔ راوی بیان کرتے ہیں آپ رضی اللہ عنہ سے کہا گیا کہ آپ کثرت سے یہ چادر (کیوں) پہنتے ہیں؟ تو آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : بے شک یہ مجھے میر ے نہایت پیارے اور خاص دوست عمر نے پہنائی تھی۔ بے شک عمر اﷲ تعالیٰ کے لئے خالص ہوا تو اﷲ تعالیٰ نے اس کے لیے خالص بھلائی چاہی پھر آپ رضی اللہ عنہ رونے لگ گئے۔ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 84 : أخرجه ابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 356، الحديث رقم : 31997.

85. عَنِ الْأَسْوَدِ قَالَ : قَالَ عَبْدُاﷲِ إِذَا ذُکِرَ الصَّالِحُوْنَ فَحَيَّ هَلاً بِعُمَرَ. رَوَاهُ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت اسود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عبداﷲ نے فرمایا : جب صالحین کا ذکر ہو تو جلدی سے عمر رضی اللہ عنہ کا نام نامی پکارا کرو۔ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 85 : أخرجه ابن أبيشبية في المصنف، 6 / 354، الحديث رقم : 31975.

86. عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ عَنْ عَبْدِ اﷲِ قَالَ : إِنَّ عُمَرَ کَانَ لِلْإِسْلاَمِ حِصْنًا حَصِيْنًا يَدْخُلُ فِيْهِ الْإِسْلَامُ وَلاَ يَخْرُجُ مِنْهُ فَلَمَّا قُتِلَ عُمَرُ انْثَلَمَ الْحِصْنُ فَالْإِسْلَامُ يَخْرُجُ مِنْهُ وَلاَ يَدْخُلُ فِيْهِ. رَوَاهُ ابْنُ أبِي شيبة.

’’حضرت زید بن وہب حضرت عبداﷲ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ بے شک حضرت عمر رضی اللہ عنہ اسلام کے لئے ایک مضبوط قلعہ تھے جس میں اسلام محفوظ تھا اور اس سے باہر نہیں نکلتا تھا پس جب آپ رضی اللہ عنہ کو شہید کر دیا گیا تو اسلام اس قلعہ سے باہر نکل گیا یعنی غیر محفوظ ہو گیا اور اس کے بعداس میں داخل نہیں ہوا (یعنی اس کے بعد فتنوں کے حملوں سے امت محفوظ نہ رہی)۔ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 86 : أخرجه ابن أبيشبية في المصنف، 6 / 354، الحديث رقم : 31977.

87. عَنْ أَبِيْ وَائِلٍ قَالَ : قاَلَ عَبْدُ اﷲِ : مَا رَأَيْتُ عُمَرَ إِلاَّ وَکَانَ بَيْنَ عَيْنَيْهِ مَلَکاً يُسَدِّدُهُ. رَوَاهُ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت ابووائل رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضرت عبداﷲ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : میں نے کبھی بھی حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو نہیں دیکھا مگر یہ کہ آپ کی دونوں آنکھوں کے درمیان ایک فرشتہ ہے جو آپ رضی اللہ عنہ کو سیدھی راہ دکھاتا ہے۔ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 87 : أخرجه ابن أبيشبية في المصنف، 6 / 354، الحديث رقم : 31983.

88. عَنْ سَيَّارِ أَبِيْ الْحَکْمِ أنَّ أبَا بَکْرٍ لَمَّا ثَقُلَ أطْلَعَ رَأسَهُ إِلیَ النَّاسِ مِنْ کَوَّةٍ فَقَالَ : يَا أيُّهَا النَّاسُ إِنِيّ قَدْ عَهَدْتُ عَهْدًا أفْتَرْضَوْنَ بِهِ؟ فَقَامَ النَّاسُ، فَقَالُوْا : قَدْ رَضِيْنَا فَقَامَ عَلِيٌّ، فَقَالَ : لَا نَرْضَی إِلاَّ أنْ يَّکُوْنَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ فَکَانَ عُمَرُ. رَوَاهُ ابْنُ أبِيْ شيبة.

’’حضرت سیار ابو حکم رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ بے شک جب حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی طبیعت بوجھل ہو گئی یعنی قریب الوفات ہو گئے تو آپ نے کھڑکی میں سے لوگوں کی طرف جھانک کر کہا : اے لوگو! بے شک میں نے تم سے ایک عہد کیا ہے۔ کیا تم اس پر راضی ہو؟ لوگ کھڑے ہو کر کہنے لگے ہاں ہم راضی ہیں۔ پس حضرت علی رضی اللہ عنہ کھڑے ہو کر فرمانے لگے ہم اس وقت تک راضی نہ ہوں گے جب تک عنان حکومت حضرت عمر رضی اللہ عنہ نہ سنبھال لیں پس ایسا ہی ہوا آپ رضی اللہ عنہ کے وصال کے بعد خلافت حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے سنبھالی۔ اس حدیث کو ابن شیبہ نے روایت کیا ہے۔‘‘

الحديث رقم 88 : أخرجه ابن أبيشبية في المصنف، 6 / 359، الحديث رقم : 32020.

Copyrights © 2019 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved