Full-shine Blessings of Invoking Salutations on the Exalted Prophet (PBUH)

حصہ چہارم

فصل : 32

من صلي علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم صلي اﷲ عليه ومن سلم عليه صلي الله عليه وآله وسلم سلم اﷲ عليه

(جو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر درود بھیجتا ہے اور جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجتا ہے اللہ اس پر سلام بھیجتا ہے)

210 (1) عن عبدالرحمٰن بن عوف رضي اﷲ عنه قال : خرج رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فاتبعته حتٰي دخل نخلا فسجد فأطال السجود حتٰي خفت أوخشيت أن يکون اﷲ قد توفاه أو قبضه قال فجئت أنظر فرفع رأسه فقال مالک يا عبدالرحمٰن قال فذکرت ذلک له فقال إن جبريل عليه السلام قال لي : ألا أبشرک أن اﷲل يقول لک من صلٰي عليک صليت عليه ومن سلم عليک سلمت عليه.

1. احمد بن حنبل، المسند، 1 : 191، رقم : 1662
2. حاکم، المستدرک علي الصحيحين، 1 : 344، رقم : 810
3. بيهقي، السنن الکبريٰ، 2 : 370، رقم : 3752
4. هيثمي، مجمع الزوائد، 2 : 287
5. مقدسي، الاحاديث المختاره، 3 : 126، رقم : 926
6. منذري، الترغيب والترهيب، رقم : 2561
7. مروزي، تعظيم قدر الصلاة، 1 :. 249، رقم : 236
8. صنعاني، سبل السلام، 1 : 211

’’حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم باہر تشریف لے گئے تو میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پیچھے پیچھے چل دیا یہاں تک کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کھجوروں کے ایک باغ میں داخل ہو گئے پھر وہاں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک لمبا سجدہ کیا اتنا لمبا کہ میں ڈر گیا کہ اللہ تعالیٰ نے کہیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی روح قبض نہ کرلی ہو آپ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھنے کے لئے آگے بڑھا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنا سر انور اٹھایا اور فرمایا اے عبدالرحمٰن تیرا کیا معاملہ ہے؟ آپ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو سارا ماجرا بیان کر دیا تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ جبریل علیہ السلام نے مجھے کہا کیا میں آپ کو خوش خبری نہ دوں کہ اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے کہ جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجتا ہے میں اس پر درود (بصورت رحمت) بھیجتا ہوں اور جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجتا ہے میں اس پر سلامتی بھیجتا ہوں۔‘‘

211 (2) عن عبدالرحمٰن بن عوف، أن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال : إني لقيت جبرائيل عليه السلام فبشرني و قال : إن ربک يقول : من صلي عليک صليت عليه، و من سلم عليک سلمت عليه، فسجدت ﷲ عزَّوجلّ شکرًا.

1. حاکم، المستدرک علي الصحيحين، 1 : 735، رقم : 2019
2. عبد بن حميد، المسند، 1 : 82، رقم : 157
3. بيهقي، السنن الکبري، 2 : 371، رقم : 3753
4. هيثمي، مجمع الزوائد، 2 : 287، باب سجود الشکر
5. منذري، الترغيب و الترهيب، 2 : 343، رقم : 5261
6. مقدسي، الاحاديث المختارة، 3 : 126، رقم : 926
7. شافعي، الام، 2 : 240
8. مروزي، تعظيم قدر الصلاة، 1 : 249، 236

’’حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بے شک میں جبرئیل علیہ السلام  سے ملا تو اس نے مجھے یہ خوشخبری دی کہ بے شک آپ کا رب فرماتا ہے کہ اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جو شخص آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود و سلام بھیجتا ہے میں بھی اس پر درود و سلام بھیجتا ہوں پس اس بات پر میں اﷲ کے حضور سجدہ شکر بجا لایا۔‘‘

212 (3) عن ابن عمر و أبي هريرة رضي الله عنه قالا : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم صلُّوا عَلَيَّ صَلَّي اﷲُ عليکم.

مناوي، فيض القدير، 4 : 204

’’حضرت ابن عمر اور حضرت ابوہریرۃ رضی اﷲ عنہما روایت کرتے ہیں کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا مجھ پر درود بھیجا کرو اﷲ تبارک و تعالیٰ تم پر درود (بصورتِ رحمت) بھیجے گا۔‘‘

213 (4) عن عبداﷲ بن عمرو بن العاص رضي الله عنهم قال مَنْ صَلَّي علي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم صلاة صلي اﷲ عليه وسلم و ملائکته سبعين صلاة، فَلْيقلَّ عبد من ذلک أولِيُکْثر.

1. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 172، رقم : 6605
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 10 : 160
3. منذري، الترغيب و الترهيب، 2 : 325، رقم : 2566
4. عجلوني، کشف الخفاء، 2 : 337، رقم : 2517
5. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 512

’’حضرت عبداﷲ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنھم روایت کرتے ہیں کہ جو شخص حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر ایک مرتبہ درود بھیجتا ہے اﷲ تبارک و تعالیٰ اور اس کے فرشتے اس پر ستر مرتبہ درود بھیجتے ہیں پس اب بندہ کو اختیار ہے چاہے تو وہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر کم درود بھیجے یا زیادہ۔‘‘

214 (5) عن عبدالرحمٰن بن عوف رضي الله عنه أن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم خرج عليهم يوما وفي وجهه البشر فقال : إن جبريل جاء ني فقال ألا أبشرک يا محمد صلي الله عليه وآله وسلم بما أعطاک اﷲ من أمتک و ما أعطا أمتک منک من صلي عليک منهم صلاة صلي اﷲ عليه و من سلم عليک سلم اﷲ عليه.

مقدسي، الاحاديث المختاره، 3 : 129، رقم : 932

’’حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم باہر تشریف لائے توآپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے چہرہ انور پر خوشی کے آثار نمایاں تھے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بے شک جبرئیل امین نے میری خدمت میں حاضرہوئے اور کہا اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کیا میں آپ علیہ الصلاۃ و السلام کو اس چیز کے بارے میں خوشخبری نہ سناؤں جو اﷲ نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی امت کی طرف سے اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی امت کو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرف سے عطاء کی ہے اور وہ یہ کہ ان میں سے جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجتا ہے اﷲ تعالیٰ اس پر درود بھیجتا ہے اور ان میں سے جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجتا ہے اﷲ اس پر سلام بھیجتا ہے۔‘‘

215 (6) عن أبي طلحة : قال دخلت علٰي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فرأيت من بشره وطلاقته شيئا لم أره علٰي مثل تلک الحال قط فقلت يارسول اﷲ ما رأيتک علٰي مثل هذه الحال قط فقال وما يمنعي يا أباطلحه وقد خرج من عندي جبريل عليه السلام أنفأ فأ تاني ببشارة من ربي قال إن اﷲ عزوجل بعثني إليک أبشرُک أنَّه ليس أحَد من أمتک يصلي عليک صلاة إلا صلي اﷲ و ملائکته عليه بها عشرًا.

1. طبراني، المعجم الکبير، 5 : 100، رقم : 4719

’’حضرت ابوطلحہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ بیان کرتے ہیں کہ ایک دن میں رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں حاضرا ہوا تو میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے چہرہ انور کو کھلا ہوا اور اس طرح مسکراتا ہوا پایا کہ اس سے پہلے اس طرح بھی نہیں دیکھا تھا۔ میں نے عرض کیا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس سے پہلے میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اس حال میں نہیں دیکھا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اے ابو طلحہ بات یہ ہے کہ ابھی ابھی جبرئیل امین میرے پاس سے گئے ہیں اور وہ میرے رب کی طرف سے میرے لئے بشارت لے کر حاضر ہوئے تھے اور کہا کہ اﷲ تبارک و تعالیٰ نے مجھے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرف بھیجا ہے تاکہ میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو خوشخبری سنا سکوں اور وہ یہ کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی امت میں سے جو شخص بھی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر ایک مرتبہ درود بھیجتا ہے اﷲ سبحانہ و تعالیٰ اور اس کے فرشتے اس پر دس مرتبہ درود (بصورتِ رحمت و دعا) بھیجتے ہیں۔‘‘

فصل : 33

من ذکرت عنده فليصل علي

(جس شخص کے پاس میرا ذکر کیا جائے اسے (سن کر) چاہیے کہ مجھ پر درود بھیجے )

216 (1) عن أنس بن مالک أن النبي صلي الله عليه وآله وسلم قال : من ذکرت عنده فليصل عَلَيَّ ومن صلي عَلَيَّ مرة واحدة صلي اﷲ عليه عشرًا.

1. نسائي، السنن الکبريٰ، 6 : 21، رقم : 9889
2. ابويعلي، المسند، 7 : 75، رقم : 4002
3. ابو یعلی، المعجم، 1 : 203، رقم : 240
4. طبرانی، المعجم الاوسط، 5 : 162، رقم : 4948
5. هيثمي، مجمع الزوائد، 1 : 137، باب کتابة الصلاةعلي النبي صلي الله عليه وآله وسلم لمن ذکره اوذکرعنده
6. طيالسي، المسند، 1 : 283، رقم : 2122
7. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 323، رقم : 2559
8. مناوي، فيض القدير، 6 : 129
9. نسائي، عمل اليوم الليلة، 1 : 165، رقم : 61
10. ابونعيم، حلية الاولياء، 4 : 347
11. ذهبي، سيراعلام النبلاء، 7 : 383
12. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 512

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جس شخص کے پا س میرا ذکر ہو تو اسے چاہیے کہ وہ (ذکر سن کر) مجھ پر درود بھیجے اور جومجھ پر ایک مرتبہ درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر دس مرتبہ درود (بصورتِ رحمت) بھیجتا ہے۔‘‘

217 (2) عن جابر بن عبداﷲ قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من ذکرت عنده فلم يصل عَلَيَّ فقد شقي.

1. طبراني، المعجم الاوسط، 4 : 162، رقم : 3871
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 3 : 139، باب فيمن ادرک شهر رمضان فلم يصمه
3. مناوي، فيض القدير، 6 : 129، رقم : 8678

’’حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بدبخت ہے وہ شخص جس کے پاس میرا ذکر ہو اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

218 (3) عن أنس قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من ذکرني فليصل عَلَيَّ ومن صلي عَلَيَّ واحدة صليت عليه عشرا.

1. ابو يعلي، المسند، 6 : 354، رقم : 3681
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 1 : 137، باب کتابة الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم لمن ذکره او ذکر عنده
3. مقدسي، الاحاديث المختارة، 4 : 395، رقم : 1567

’’حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جو شخص بھی میرا ذکر کرتا ہے اسے چاہے کہ وہ مجھ پر درود بھیجے اور جو مجھ پر ایک مرتبہ درود بھیجتا ہے میں اس پر دس مرتبہ درود (بصورتِ رحمت) بھیجتا ہوں۔‘‘

219 (4) عن محمد بن علي قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من الجفاء أن أذکر عند رجل فلا يصلي عَلَيَّ.

عبدالرزاق، المصنف، 2 : 217، رقم : 3121

’’حضرت محمد بن علی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : یہ جفا (بے وفائی) ہے کہ کسی شخص کے پاس میرا ذکر ہو اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

220 (5) عن أنس بن مالک عن النبي صلي الله عليه وآله وسلم قال : من ذکرت عنده فليصل عَلَيَّ وقال صلي الله عليه وآله وسلم أکثروا الصلاة عَلَيَّ في يوم الجمعة.

(1) ابونصر، تهذيب مستمر الاوهام، 1 : 178

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ جس شخص کے پاس میرا ذکر ہو اسے چاہیے کہ وہ مجھ پر درود بھیجے اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جمعہ کے دن مجھ پر درود کی کثرت اپنا معمول بنا لو۔‘‘

فصل : 34

البخيل هوالذي إن ذکر عنده النبي صلي الله عليه وآله وسلم لم يصل عليه صلي الله عليه وآله وسلم

(بخیل ہے وہ شخص کہ جس کے سامنے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ذکر ہو اور وہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود نہ بھیجے)

221 (1) عن حسين بن علي بن أبي طالب رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : البخيل الذي من ذُکِرتُ عنده لم يُصلِّ عليَّ.

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 551، کتاب الدعوات، باب قول رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ’’رغم أنف رجل‘‘ رقم : 3546
2. نسائي، السنن الکبري، 6 : 20، رقم : 9885
3. ابو يعلي، المسند، 12 : 147، رقم : 6776
4. بزار، المسند، 4 : 185
5. طبراني، المعجم الکبير، 3 : 127، رقم : 2885
6. بيهقي، شعب الايمان، 2 : 214، رقم : 1567
7. منذري، الترغيب و الترهيب، 2 : 332، رقم : 2600
8. شيباني، الآحاد و المثاني، 1 : 311، رقم : 432
9. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 513

’’حضرت حسین بن علی بن ابو طالب رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : بے شک وہ شخص بخیل ہے جس کے سامنے میرا ذکر ہو اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

222 (2) عن أبي ذر رضي الله عنه أنَّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال : إنَّ أبخلَ الناس من ذُکِرتُ عنده، فلم يصلِّ عليَّ.

1. حارث، المسند، 2 : 963، رقم : 1064
2. مناوي، فيض القدير، 2 : 404
3. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 513

’’حضرت ابو ذر غفاری رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بے شک لوگوں میں سب سے زیادہ بخیل وہ شخص ہے جس کے سامنے میرا ذکر ہو اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

223 (3) عن الحسن رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم کفي به شُحًا أن أذکر عنده ثم لا يصلي عَلَيَّ.

1. ابن ابي شيبه، المصنف، 2 : 253، رقم : 8701
2. ابن قيم، جلاء الافهام، 545

’’حضرت حسن رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کسی کے کنجوس ہونے کے لئے اتنا کافی ہے کہ میرا ذکر اس کے سامنے کیا جائے اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

224 (4) عن أبي ذر رضي الله عنه قال : خرجت ذات يوم فأتيت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال صلي الله عليه وآله وسلم : ألا أخبرکم بأبخل الناس؟ قالوا : بلي يا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، قال : من ذکرت عنده فلم يصل عَلَيَّ.

1. منذري، الترغيب و الترهيب، 2 : 332، رقم : 2601
2. عجلوني، کشف الخفاء، 1 : 332، رقم : 886

’’حضرت ابو ذر غفاری رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ میں ایک دن باہر نکلا اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس آیا حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کیا میں تمہیں لوگوں میں سے سب سے زیادہ بخیل شخص کے بارے میں نہ بتاؤں صحابہ نے عرض کیا : کیوں نہیں یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : سب سے زیادہ بخیل وہ شخص ہے جس کے سامنے میرا ذکر کیا جائے اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔‘‘

فصل : 35

من صلي علٰي محمد صلي الله عليه وآله وسلم طهر قلبه من النفاق

(جو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجتا ہے اس کا دل نفاق سے پاک ہو جاتا ہے)

225 (1) عن أنس بن مالک رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم من صلي عَلَيَّ صلاة واحدة صلي اﷲ عليه عشراً ومن صلي عَلَيَّ عشرا صلي اﷲ عليه مائة ومن صلي عَلَيَّ مائة کتب اﷲ بين عينيه براء ة من النفاق و براء ة من النار وأسکنه اﷲ يوم القيامة مع الشهداء.

1. طبراني، المعجم الاوسط، 7 : 188، رقم : 7235
2. طبراني، المعجم الصغير، 2 : 126، رقم : 899
3. هيثمي، مجمع الزوائد، 10 : 163
4. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 323، رقم : 2560

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جو مجھ پر ایک دفعہ درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر دس مرتبہ درود (بصورتِ رحمت) بھیجتا ہے اورجو مجھ پر دس مرتبہ درود بھیجتاہے اللہ اس پر سو مرتبہ درود (بصورتِ دعا) بھیجتا ہے اور جو مجھ پرسو مرتبہ درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس کی آنکھوں کے درمیان نفاق اور جہنم کی آگ سے براء ت لکھ دیتا ہے اور اللہ تعالیٰ قیامت کے روز اس کا ٹھکانہ شہداء کے ساتھ کرے گا۔‘‘

226 (2) عن أبي المظفر محمد بن عبد اﷲ الخيام السمر قندي قال دخلت يومًا في مغارة لعب فضللت الطريق فإذا برجل رأيته فقلت ما إسمک قال أبو العباس و رأيت معه صاحبًا له فقلت ما إسمه فقال الياس بن سام فقلت هل رأيتما محمدًا صلي الله عليه وآله وسلم قالا نعم فقلت بعزة اﷲ أن تخبراني شيئًا حتي أروي عنکما قالا سمعنا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول ما من مؤمن يقول صلي اﷲ علي محمدٍ الا طهر قلبه من النفاق و سمعاه يقول من قال صلي اﷲ علي محمد فقد فتح سبعين بابًا من الرحمة.

عسقلاني، لسان الميزان، 5 : 221، رقم : 776

’’حضرت ابو مظفر محمد بن عبداﷲ خیام سمر قندی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک دن میں کھیل والے غار میں داخل ہوا اور اپنا راستہ بھول گیا اچانک میں نے ایک آدمی کو دیکھا میں نے اس سے اس کا نام پوچھا اس نے کہا میرا نام ابو عباس ہے اس کے ساتھ اس کا دوست بھی تھا میں نے اس کا بھی نام پوچھا تو اس نے کہا کہ اس کا نام الیاس بن سام ہے پھر میں نے ان سے پوچھا کیا تم نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا ہوا ہے انہوں نے ہاں میں جواب دیا پھر میں نے کہا اﷲ کی عزت کا واسطہ مجھے کسی ایسی چیز کے بارے بتاؤ جو میں تم سے روایت کر سکوں تو ان دونوں نے کہا کہ ہم نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا ہے کہ جو مومن بھی صلی اﷲ علی محمد کہتا ہے اس کا دل نفاق سے پاک ہو جاتا ہے اور ہم نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو یہ بھی فرماتے ہوئے سنا ہے کہ جو صلی اﷲ علی محمد کہتا ہے اﷲ تعالیٰ اس پر رحمت کے ستر دروازے کھول دیتا ہے۔‘‘

فصل : 36

إن النبي صلي الله عليه وآله وسلم يرد السلام علي من سَلَّمَ عليه صلي الله عليه وآله وسلم

(حضور علیہ الصلاۃ والسلام اپنے اوپر ہدیۂ سلام بھیجنے والے کو سلام کا جواب دیتے ہیں)

227 (1) عن أبي هريرة رضي الله عنه أن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال : مامن أحدٍ يسلم عَلَي إلا ردَّ اﷲ عَلَي روحي حتي أرد عليه السلام.

1. ابو داؤد، السنن، 2 : 218، کتاب اللقطة، باب زيارة القبور، رقم : 2041
2. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 527، رقم : 10827
3. بيهقي، السنن الکبريٰ، 5 : 245، رقم : 10050
4. بيهقي، شعب الايمان، باب تعظيم النبي صلي الله عليه وآله وسلم واجلاله و توقيره، رقم : 1581
5. هندي، کنزالعمال، 1 : 491، باب الصلاة عليه، رقم : 2161

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : جب کوئی شخص مجھ پر سلام بھیجتا ہے تو اللہ تبارک تعالیٰ مجھے میری روح لوٹا دیتا ہے پھر میں اس سلام بھیجنے والے کو سلام کا جواب دیتا ہوں۔‘‘

228 (2) عن أنس بن مالک رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من صلي عَلَيَّ بلغتني صلاته وصليت عليه وکتبت له سوي ذلک عشر حسنات.

1. طبراني، المعجم الاوسط، 2 : 178، رقم : 1462
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 10 : 162
3. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 326، رقم : 2572

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جو مجھ پر درود بھیجتا ہے اس کا درود مجھے پہنچ جاتا ہے اور جواباً میں بھی اس پر درود بھیجتا ہوں اور اس کے علاوہ اس کے نامۂ اعمال میں دس نیکیاں لکھ دی جاتی ہیں۔‘‘

229 (3) عن محمد بن عبدالرحمٰن أن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال : ما منکم من أحد يسلم علي إذا مت إلا جاء ني سلامه مع جبريل يقول يا محمد هذا فلان بن فلان يقرأ عليک السلام فأقول و عليه سلام اﷲ وبرکاته.

قرطبي، الجامع لأحکام القرآن، 14 : 237

’’حضرت محمد بن عبدالرحمٰن رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ میرے مرنے کے بعد جو بھی تم میں سے مجھ پر سلام بھیجتا ہے تو اس کا سلام جبرئیل علیہ السلام کے ساتھ مجھے پہنچ جاتا ہے اور جبرئیل علیہ السلام مجھے کہتا ہے یا محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فلاں بن فلاں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجتا ہے پس میں کہتا ہوں کہ اس پر بھی اﷲ کی سلامتی اور برکات ہوں۔‘‘

230 (4) عن أبي هريرة قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : مامن مسلم سلم علي في شرق ولا غرب إلا أنا وملائکة ربي نرد عليه السلام. . .

ابو نعيم، حلية الاولياء، 6 : 349

’’حضرت ابوہريرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا شرق و غرب میں جو بھی مسلمان مجھ پر سلام بھیجتا ہے میں اور میرے رب کے فرشتے اسے اس کے سلام کا جواب دیتے ہیں۔‘‘

231 (5) عن أبو قرصافة قال : سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم من أوي إلي فراشه ثم قرأسورة تبارک ثم قال أللهم رب الحل والحرام ورب البلد الحرام ورب الرکن والمقام ورب المشعر الحرام وبحق کل آية أنزلتها في شهر رمضان بلغ روح محمد صلي الله عليه وآله وسلم مني تحية وسلاما أربع مرات وکل اﷲ به الملکين حتي يأتيا محمدا صلي الله عليه وآله وسلم فيقولا له ذلک فيقول صلي الله عليه وآله وسلم وعلي فلان بن فلان مني السلام و رحمة اﷲ و برکاته.

ابن حيان، طبقات المحدثين بأصفهان، 3 : 434، رقم : 441

’’حضرت ابو قرصافہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا جو شخص اپنے بستر میں داخل ہونے کے بعد سورہ تبارک پڑھتا ہے اور پھر یوں کہتا ہے : اے حلال و حرام کے رب! اے حرمت والے شہر کے رب! اے رکن اور مقام کے رب! اور مشعرالحرام کے رب! تو ہر اس آیت کے واسطے جس کو تو نے شہر رمضان میں نازل فرمایا، حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی روح مقدسہ کو میری طرف سے سلام بھیج اور وہ اس طرح چار مرتبہ کہے تو اﷲ تعالیٰ دو فرشتوں کو مقرر کردیتا ہے کہ وہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس جائیں اور ان کو ایسا ہی کہیں تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماتے ہیں کہ فلاں بن فلاں کو میری طرف سے سلام ہو اور اﷲ کی رحمت اور برکت عطا ہو۔‘‘

فصل : 37

زينوا مجالسکم بالصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم

(تم اپنی مجالس کو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے ذریعے سجایا کرو)

232 (1) عن ابن عمر رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم زينوا مجالسکم بالصلوات عَلَيَّ فإن صلواتکم عَلَيَّ نور لکم يوم القيامة.

ديلمي، مسند الفردوس، 2 : 291، رقم : 3330

’’حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ تم اپنی مجالس کو مجھ پر درود بھیج کر سجایا کرو بے شک تمہارا مجھ پر درود بھیجنا قیامت کے دن تمہارے لئے نور کا باعث ہوگا۔‘‘

233 (2) عن ابن عمر الخطاب رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم زينوا مجالسکم بالصلاة عَلَيَّ فإن صلا تکم عَلَيَّ نور لکم يوم القيامة.

مناوي، فيض القدير، 4 : 69

’’حضرت ابن عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ اپنی مجالس کو مجھ پر درود بھیج کر سجایا کرو پس بے شک تمہارا مجھ پر درود بھیجنا قیامت کے روز تمہارے لئے نور کا باعث ہوگا۔‘‘

234 (3) عن عائشه رضي اﷲ تعالي عنها زينوا مجالسکم بالصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم و بذکر عمر بن الخطاب.

1. عجلوني، کشف الخفاء، 1 : 536، رقم : 1443
2. عسقلاني، لسان الميزان، 2 : 294، رقم : 1221
3. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 7 : 207، رقم : 3674

’’حضرت عائشہ رضی اﷲ تعالیٰ عنھا بیان فرماتی ہیں کہ (اے لوگوں) تم اپنی مجالس کو حضور علیہ السلام پر درود بھیج کر اور حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کا ذکر کر کے سجایا کرو۔‘‘

235 (4) عن عائشه رضي اﷲ تعالي عنها مرفوعًا قالت : قال النبي صلي الله عليه وآله وسلم : زينوا مجالسکم بالصلاة عَلَيَّ، فان صلاتکم عَلَيَّ نور لکم يوم القيامة.

عجلوني، کشف الخفاء، 1 :. 536، رقم : 1443

’’حضرت عائشہ رضی اﷲ تعالیٰ عنھا سے مرفوعًا روایت ہے وہ فرماتی ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا (اے لوگو) تم اپنی محافل و مجالس کومجھ پر درود بھیج کر سجایا کرو بے شک تمہارا مجھ پر درود بھیجنا قیامت کے روز تمہارے لئے نور کا باعث ہو گا۔‘‘

236 (5) عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال : رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : زينوا مجالسکم بالصلاة عَلَيَّ فإن صلاتکم تعرض عَلَيَّ أو تبلغني.

عجلوني، کشف الخفاء، 1 : 536، رقم : 1443

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ (اے لوگو) مجھ پر درود بھیجنے کے ذریعے اپنی مجالس کو سجایا کرو بے شک تمہارا درود مجھے پیش کیا جاتا ہے یا مجھے پہنچ جاتا ہے۔‘‘

فصل : 38

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم تکفي الهموم

(حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا دافع رنج و بلاء ہے)

237 (1) عن أبي بن کعب رضي الله عنه قال : کا ن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إذا ذهب ثلثا الليل قام فقال يا أيهاالناس أذکروا اﷲ جاء ت الراجفة تتبعها الرادفة، جاء الموت بما فيه جاء الموت بما فيه قال أبي : قلت يارسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إني أکثر الصلاة عليک فکم أجعل لک من صلاتي فقال ما شئت قال قلت الربع قال ماشئت فإن زدت فهو خيرلک قلت النصف قال ماشئت فإن زدت فهو خير لک قال قلت فالثلثين قال ماشئت فإن زدت فهو خيرلک قلت أجعل لک صلاتي کلها قال إذا تکفي همک ويغفرلک ذنبک.

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 4 : 636، کتاب صفة القيامة والرقائق والورع، باب نمبر 23، رقم : 2457
2. احمد بن حنبل، المسند، 5 : 136، رقم : 21280
3. حاکم، المستدرک علي الصحيحين، 2 : 457، رقم : 3578
4. مقدسي، الاحاديث المختارة، 3 : 389، رقم : 1185
5. بيهقي، شعب الايمان، 2 : 187، رقم : 1499
6. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 327، رقم : 2577
7. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 511

’’حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب رات کا دو تہائی حصہ گزر جاتا تو گھر سے باہر تشریف لے آتے اور فرماتے اے لوگو! اللہ کا ذکر کرو اللہ کا ذکر کرو ہلا دینے والی(قیامت) آگئی۔ اس کے بعد پیچھے آنے والی (آ گئی) موت اپنی سختی کے ساتھ آگئی موت اپنی سختی کے ساتھ آ گئی۔ میرے والد نے عرض کیا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں کثرت سے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پردرود بھیجتا ہوں۔ پس میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر کتنا درود بھیجوں؟ تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جتنا تو بھیجنا چاہتا ہے میرے والد فرماتے ہیں میں نے عرض کیا (یارسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) کیا میں اپنی دعا کا چوتھائی حصہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر دعاء بھیجنے کے لئے خاص کردوں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اگر تو چاہے (تو ایسا کرسکتا ہے) لیکن اگر تو اس میں اضافہ کرلے تو یہ تیرے لئے بہتر ہے میں نے عرض کیا اگرمیں اپنی دعا کا آدھا حصہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کردوں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اگر تو چاہے لیکن اگر تو اس میں اضافہ کر دے تو یہ تیرے لئے بہتر ہے میں نے عرض کیا اگر میں اپنی دعا کا تین چوتھائی حصہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کردوں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اگر تو چاہے لیکن اگر تو زیادہ کردے تو یہ تیرے لئے بہتر ہے۔ میں نے عرض کیا (یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) اگر میں ساری دعا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کردوں تو؟ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا پھر تو یہ درود تیرے تمام غموں کا مداوا ہوجائے گا اور تیرے تمام گناہ معاف کردیے جائیں گے۔‘‘

238 (2) عن حبان بن منقذ رضي الله عنه أن رجلاً قال يارسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم أجعل ثلث صلاتي عليک قال نعم إن شئت قال الثلثين قال نعم قال فصلاتي کلها قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إذن يکفيک اﷲ ماأهمک من أمر دنياک وآخرتک.

1. طبراني، المعجم الکبير، 4 : 35، رقم : 3574
2. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 328، رقم : 2578

’’حضرت حبان بن منقذ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک آدمی نے عرض کیا یارسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کیا میں اپنی دعا کا تیسرا حصہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کردوں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہاں اگر تو چاہے (تو ایسا کرسکتا ہے) پھر اس نے عرض کیا دعا کا دو تہائی حصہ (آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کردوں) آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہاں پھر اس نے عرض کیا ساری کی ساری دعا (آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے لئے خاص کر دوں) یہ سن کر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا پھر تو اللہ تعالیٰ تیرے دنیا اور آخرت کے معاملات کے لئے کافی ہو گا۔‘‘

239 (3) عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم من صلي عَلَيَّ عند قبري سمعته ومن صلي عَلَيَّ نائيا وکل بها ملک يبلغني وکفي أمر دنياه وآخرته وکنت له شهيدًا أو شفيعًا.

1. هندي، کنزالعمال، 1 : 498، رقم : 2197، باب الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم
2. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 3 : 292

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : جو میری قبر کے نزدیک مجھ پر درود بھیجتا ہے میں خود اس کو سنتا ہوں اور جو دور سے مجھ پر درود بھیجتا ہے تو اس کے لیے ایک فرشتہ مقرر ہے جو مجھے وہ درود پہنچاتا ہے اور یہ درود اس درود بھیجنے والے کی دنیا وآخرت کے معاملات کے لئے کفیل ہوجاتا ہے اور (قیامت کے روز) میں اس کا گواہ اور شفاعت کرنے والا ہوں گا۔‘‘

240 (4) عن أبي بکر نالصديق قال : الصلاة عَلٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم أمحق للخطايا من الماء للنار، والسلام عَلٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم أفضل من عتق الرقاب، وحب رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم أفضل من مهج الأنفس أوقال : من ضرب السيف في سبيل اﷲ عزوجل.

1. هندي، کنزالعمال، 2 : 367، رقم : 3982، باب الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم
2. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 7 : 161

’’حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا پانی کے آگ کو بجھانے سے بھی زیادہ گناہوں کو مٹانے والا ہے۔ اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجنا یہ غلاموں کو آزاد کرنے سے بڑھ کر فضیلت والا کام ہے اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت یہ جانوں کی روحوں سے بڑھ کر فضیلت والی ہے یا اللہ کی راہ میں جہاد کرنے سے بھی بڑھ کر فضیلت والی ہے۔‘‘

فصل : 39

صَلُّوا علٰي أنبياء اﷲ وَرُسُلِه

(اللہ کے انبیاء اور رسولوں پر درود بھیجو)

241 (1) عن ابن عباس رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : يا علي إذا فرغت من التشهد فاحمد اﷲ وأحسن الثناء علي اﷲ و صل عَلَيَّ وعلٰي سائر النبيين. . . الخ.

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 563، کتاب الدعوات، باب في دعاء الحفظ، رقم : 3570
2. حاکم، المستدرک علي الصحيحين، 1 : 461، رقم : 1190
3. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 235، رقم : 2226
4. عسقلاني، فتح الباري، 11 : 169
5. ذهبي، سيراعلام النبلاء، 9 : 218

’’حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اے علی(رضی اللہ عنہ) جب تو تشھد سے فارغ ہو تو اﷲ تعالیٰ کی حمد بیان کر اور اﷲتعالیٰ کی خوب ثناء بیان کر پھر مجھ پر اور تمام انبیاء پر نہایت ہی خوبصورت انداز سے درود بھیج۔‘‘

242 (2) عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال رسول الله صلي الله عليه وآله وسلم : صلوا علي أنبياء اﷲ ورسله، فإن اﷲ بعثهم.

1. عبدالرزاق، المصنف، 2 : 216، رقم : 3118
2. بيهقي، شعيب الايمان، 1 : 149، رقم : 131
3. ديلمي، مسند الفردوس، . 2 : 385، رقم : 3710
4. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 695، رقم : 675
5. مناوي، فيض القدير، 4 : 204
6. قزويني، التدوين في اخبار قزوين، 3 : 330
7. عجلوني، کشف الخفائ. 1 : 96، رقم : 250
8. عسقلاني، المطالب العالية، 3 : 225، رقم : 3327
9. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 8 : 105
10. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 517

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اللہ کے نبیوں اور رسولوں پر درود بھیجا کرو بے شک اللہ تبارک وتعالیٰ نے انہیں بھی بعثت عطاء کی (جس طرح کہ مجھے عطاء کی، اللہ تعالیٰ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود و سلام بھیجے اور تمام انبیاء و رسل پر سلامتی ہو)۔‘‘

243 (3) عن أنس أن النبي صلي الله عليه وآله وسلم قال إذا سلمتم علي فسلموا علٰي المرسلين فإنما أنا رسول من المرسلين.

1. قرطبي، الجامع لاحکام القران، 15 : 142
2. طبري، تفسير الاحکام القرآن، 23 : 116
3. ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 4 : 26
4. ابن حبان، طبقات المحدثين بأصبهان : 2 : 11

’’حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : جب تم مجھ پر سلام بھیجو تو میرے ساتھ تمام رسولوں پر بھی سلام بھیجو بے شک میں ان رسولوں میں سے ایک ہوں۔‘‘

فصل : 40

المواطن التي تستحب فيها الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم

(وہ مقامات جہاں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا مستحب ہے)

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم بعد الأذان

(اذان کے بعد حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

244 (1) عن عبداﷲ بن عمرو رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : إذا سمعتم المؤذن فقولوا مثل ما يقول ثم صلوا علي فإنه ليس من أحد يصلي عليَّ واحدة إلا صلي اﷲ عليه بها عشرا، ثم سلوا اﷲ لي الوسيلة فإنها منزلة في الجنة، لا تنبغي إلا لعبد من عباداﷲ عزوجل وأرجو أن أکون أنا هو فمن سألها لي حلت له شفاعتي.

مسلم، الصحيح، 1 : 288، کتاب الصلاة، باب استحباب القول مثل قول المؤذنِلمن سمعه ثم يصلي علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم ثم يسأل اﷲ له الوسيلة، رقم : 384

’’حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا جب تم مؤذن کو آذان دیتے ہوئے سنو تو اسی طرح کہو جس طرح وہ کہتا ہے پھر مجھ پر درود بھیجو پس جو بھی شخص مجھ پر ایک دفعہ درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر دس مرتبہ درود (بصورت رحمت) بھیجتاہے۔ پھر اللہ تعالیٰ سے وسیلہ طلب کرو بے شک وسیلہ جنت میں ایک منزل ہے جوکہ اللہ کے بندوں میں سے صرف ایک کو ملے گی اور مجھے امیدہے کہ وہ بندہ میں ہی ہوں گا پس جس نے اس وسیلہ کو میرے لئے طلب کیا اس کے لئے میری شفاعت واجب ہوجائے گی۔‘‘

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عند قضاء الحاجات

(ضرورتوں کو پورا کرنے کے وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

245 (2) عن عبداﷲ بن أبي أوفي رضي الله عنه قال خرج علينا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فقال من کانت له إلي اﷲ حاجة أو إلي أحد من بني ادم فليتوضأ فليحسن وضوء ه وليصل رکعتين ثم ليثن علي اﷲ تعالٰي و يصل علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم ثم ليقل لا إله إلا اﷲ الحليم الکريم سبحان اﷲ رب العرش العظيم والحمدﷲ رب العالمين أسألک موجبات رحمتک وعزائم مغفرتک والغنيمة من کل بروالسلامة من کل ذنب وأن لا تدع لي ذنبا إلا غفرته ولا همَّا إلأ فرجته ولا حاجة هي لک فيها رضا إلا قضيتها يا أرحم الراحمين.

’’حضرت عبداﷲ بن ابی اوفی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ایک دن ہمارے پاس تشریف لائے اور فرمایا : جس شخص کو اﷲ تبارک وتعالیٰ یا کسی بندے سے کوئی حاجت درکار ہو تو وہ اچھی طرح سے وضؤ کرے پھر دو رکعت نماز نفل ادا کر پھر اﷲتعالیٰ کی ثناء بیان کرے اور مجھ پر درود بھیجے پھر یہ کہے کہ اﷲ کے سواء کوئی معبود نہیں جو کہ حلم والا اور عزت والا ہے اس کی ذات (ہر عیب ونقص سے) پاک ہے اور وہ عرش عظیم کا رب ہے اور تمام تعریفیں ہوں اس کے لئے جو تمام جہانوں کا پالنے والا ہے۔ اے اﷲ ! میں تجھ سے تیری رحمت کے موجبات اور تیری بخشش کے عزائم اور ہر نیکی کی غنیمت اور ہر گناہ سے سلامتی کا سوال کرتا ہوں اے اﷲ! میرے ہر گناہ کو معاف کردے اور میرے ہر غم کو دور کردے اور میری ہر اس حاجت کو جس میں تیری رضاء کارفرما ہے پورا کردے اے ارحم الراحمین۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عند العطاس

(چھینک کے وقت حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

246 (3) عن نافع أن رجلاً عطس إلٰي حبنب بن عمرفقال : الحمد ﷲ والسلام عَلٰي رسول اﷲ، قال بن عمر : وأنا أقول الحمد ﷲ والسلام علي رسول اﷲ وليس هکذا علمنا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم علمنا أن نقول : الحمد ﷲ علٰي کل حالٍ.

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 81، کتاب ا لأدب، باب ما يقول العاطس إذا عطس، رقم : 2738
2. حاکم، المستدرک علي الصحيحين، 4 : 295، رقم : 7691
3. حارث، المسند، 2 : 797، باب ماجاء في العطاس، رقم : 807
4. زرعي، حاشيه ابن قيم، 13 : 252
5. مزي، تهذيب الکمال، 6 : 553

’’حضرت نافع رضي اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک آدمی نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کے پاس چھینکا اور کہا کہ تمام تعریفیں اللہ کے لئے ہیں اور سلامتی ہو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر یہ سن کر ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا کہ چھینک کے وقت میں بھی اسی طرح کہتا ہوں کہ تمام تعریفیں اللہ کے لئے ہیں اور سلامتی ہو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر لیکن حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں ایسے نہیں سکھایا بلکہ ہمیں سکھایا ہے کہ ہم ہر حال میں اللہ کی حمد بیان کریں۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم في يوم الجمعة

(جمعہ کے دن حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

247 (4) عن أوس بن أوس رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إن من أفضل أيامکم يوم الجمعة، فيه خلق آدم و فيه قبض، وفيه الصعقة، فأکثروا عَلَيَّّ من الصلاة فيه، فأن صلاتکم معروضة عَلَيَّ قالوا : يارسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، وکيف تعرض صلاتنا عليک وقد أرمت يعني بليت قال : إن اﷲ عزوجل حرم عَلٰي الارض أن تأکل أجساد الأنبياء.

ابواداؤد، السنن، ابواب الوتر، 2 : 88، باب في الاستغفار رقم : 1531

’’حضرت اوس بن اوس رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بے شک تمہارے بہترین دنوں میں سے جمعہ کا دن سب سے بہتر ہے اس میں حضرت آدم علیہ السلام  پیدا ہوئے اور اسی دن وفات پائی اور اسی دن صور پھونکا جائے گا اور اسی دن سخت آواز ظاہر ہوگی پس اس دن مجھ پر کثرت سے درود بھیجا کرو کیونکہ تمہارا درود مجھے پیش کیا جاتا ہے صحابہ نے عرض کیا یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہمارا درود آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے وصال کے بعد کیسے آپ کو پیش کیا جائے گا؟ جبکہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم خاک میں مل چکے ہوں گے تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ بے شک اللہ عزوجل نے زمین پر انبیاء کرام علیھم السلام کے جسموں کو کھانا حرام کر دیا ہے۔‘‘

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم إذا قام الرجل من نوم الليل

(سو کر اٹھنے کے بعد حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

248 (5) عن عبداﷲ بن مسعود رضي الله عنه قال : يضحک اﷲ عزوجل إلي رجلين رجل لقي العدو و هو علي فرس من أمثل خيل أصحابه فإنهزموا وثبت فإن قتل إستشهد، وإن بقي فذلک الذي يضحک اﷲ إليه، ورجل قام في جوف الليل لا يعلم به أحد فتوضأ فأسبغ الوضوء ثم حمد اﷲ و مجده وصلي علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم واستفتح القرآن، فذلک الذي يضحک اﷲ إليه يقول : انظروا إلي عبدي قائماً لايراه أحد غيري.

1. نسائي، السنن الکبريٰ، 6 : 217، رقم : 10703
2. نسائي، عمل اليوم والليلة، 1 : 496، رقم : 867

’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ دو آدمیوں پر اپنی رضا کا اظہار فرماتے ہیں، ایک وہ جو دشمن سے ملے درانحالیکہ وہ اپنے ساتھیوں کے گھوڑے پرسوار ہو وہ تمام پسپا ہوجائیںمگر وہ ثابت قدم رہے، اگر قتل ہوگیا تو شہید اگر زندہ رہا تو اللہ تعالیٰ اس پر اپنی رضا کا اظہار فرماتا ہے دوسرا وہ شخص جو نصف رات کو اٹھتا ہے حالانکہ اس کی کسی کو خبر نہیں ہوتی وہ اچھی طرح وضو کرتا ہے پھر اللہ تعالیٰ کی حمد اور بزرگی بیان کرتا ہے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجتا ہے اور قرآن شریف سے فتح طلب کرتا ہے یہ وہ شخص ہے جس پر اللہ تعالیٰ اپنی رضا کا اظہار فرماتا ہے اور فرماتا ہے میرے بندے کو قیام کی حالت میں دیکھو کہ میرے سواء اسے کوئی نہیں دیکھ رہا۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عند ذکره

(حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ذکر کے وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

249 (6) عن أنس بن مالک قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من ذکرت عنده فليصل عَلَيَّ ومن صلي عَلَيَّ مرة واحدة صلي اﷲ عليه عشرًا.

نسائي، السنن الکبري، 6 : 21، رقم : 9889

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جس شخص کے پا س میرا ذکر ہو تو اسے چاہیے کہ وہ مجھ پر درود بھیجے اور جو مجھ پر ایک مرتبہ درود بھیجتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر دس مرتبہ درود (بصورت رحمت) بھیجتا ہے۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عند دخول المسجد و خروجه

(مسجد میں داخل ہوتے اور باہر نکلتے وقت حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

250 (7) عن فاطمة رضي اﷲ عنها بنت رسول اﷲ قالت : کان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إذا دخل المسجد صلي علي محمد ثم قال : أللهم أغفرلي ذنوبي، وافتح لي أبواب رحمتک وإذا خرج صلي علي محمد ثم قال : أللهم أغفرلي ذنوبي وافتح لي أبواب فضلک.

احمد بن حنبل، المسند، 6 : 282، رقم : 26459

’’حضرت فاطمہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب مسجد میں داخل ہوتے تو فرماتے اے اﷲ تو محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی آل پر درود بھیج پھر فرماتے اے اﷲ میرے گناہ معاف فرما اور میرے لئے اپنی رحمت کے دروازے کھول دے اور جب مسجد سے باہر تشریف لاتے تو فرماتے اے اﷲ تو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیج پھر فرماتے اے اﷲ میرے گناہ بخش دے اور میرے لئے اپنے فضل کے دروازے کھول دے۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم علٰي الصفاء والمروة

(صفاء و مروہ کے درمیان سعی کرتے وقت حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

251 (8) عن وهب بن الأجدع أنه سمع عمر يقول يبدأ بالصفاء ويستقبل البيت ثم يکبر سبع تکبيرات بين کل تکبيرتين حمد اﷲ والصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم ويساله لنفسه و علي المروة مثل ذٰلک.

1. ابن أبي شيبه، المصنف، 3 : 311، رقم : 14501
2. ابن أبي شيبه، المصنف، 6 : 82، رقم : 29638

’’حضرت وہب بن اجدع رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو فرماتے ہوئے سنا صفاء سے (سعی کی) ابتداء کرو اور پھر بیت اﷲ کی طرف منہ کرکے سات تکبیریں کہو ہر دو تکبیروں کے درمیان اﷲ کی حمد بیان کرو اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجو اور پھر اﷲ سے اپنے حق میں دعا کرو اور مروہ کے مقام پر بھی ایسا ہی کرو۔‘‘

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عقب الذنب إذا أراد ان يکفر عنه

(گناہ کے بعد اس کی بخشش کے لئے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

252 (9) عن أبي کاهل قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : يا أبا کاهل أنه من صلي عَلَيَّ کل يوم ثلاث مرات وکل ليلة ثلاث مرات حباً بي و شوقًا کان حقًا علي اﷲ أن يغفر له ذنوبه تلک الليلة وذلک اليوم.

1. طبراني، المعجم الکبير، 18 : 362، رقم : 928
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 4 : 219
3. منذري، الترغيب والترهيب، 2 : 328، رقم : 2580
4. منذري، الترغيب والترهيب، 4 : 132، رقم : 5115
5. عسقلاني، الاصابة في تمييز الصحابة، 7 : 340

’’حضرت ابوکاھل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اے ابو کاہل جو شخص ہر دن اور رات مجھ پر محبت اور شوق کے ساتھ تین تین مرتبہ درود بھیجتا ہے تو یہ بات اللہ تعالیٰ پر واجب ہو جاتی ہے کہ اس شخص کے اس دن اور رات کے گناہ معاف فرما دے۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم عند طنين الأذن

(کان کے بجنے کے وقت حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

253 (10) عن أبي رافع عن أبيه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : إِذا طنت أذن أحدکم فليذکرني و ليصل عَلَيَّ وليقل ذکر اﷲ بخير من ذکرني.

1. طبراني، المعجم الکبير، 1 : 321، رقم : 958
2. طبراني، المعجم الاوسط، 9 : 92، رقم : 9222
3. طبراني، المعجم الصغير، 2 : 245، رقم : 1104
4. هيثمي، مجمع الزوائد، 10 : 138، باب مايقول إذا طنت اذنه
5. ديلمي، الفردوس بماثور الخطاب، 1 : 332، رقم : 1321

’’حضرت ابو رافع رضی اللہ عنہ اپنے باپ سے روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جب تم میں سے کسی کا کان بجے تو اسے مجھے یاد کرنا چاہیے اور مجھ پر درود بھیجنا چاہیے اور یہ کہنا چاہیے کہ اللہ تعالیٰ اس کو خیر کے ساتھ یاد فرمائے جس نے مجھے (خیر کے ساتھ) یاد کیا۔‘‘

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم بعد فراغ من الوضوء

(وضو سے فارغ ہونے کے بعد حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

254 (11) عن عبداﷲ بن مسعود رضي الله عنه قال : سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول : إذا تطهر أحدکم فليذکر اسم اﷲ عليه فإنه يطهر جسده کله فإن لم يذکر أحدکم إسم اﷲ علٰي طهوره لم يطهر إلا مامر عليه الماء فإذا فرغ أحدکم من طهوره فليشهد أن لا إله إلّا اﷲ و أن محمد عبده و رسوله ثم ليصل عَلَيَّ فإذا قال ذٰلک حسنة له أبواب الرحمة.

1. بيهقي، السنن الکبريٰ، 1 : 44، رقم : 199
2. صيداوي، معجم الشيوخ، 1 : 292، رقم : 252

’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا کہ جب تم میں سے کوئی وضو کرے تو (وضو کے دوران) اس کو اللہ تعالیٰ کے نام کا ذکر کرنا چاہیے بے شک (وضو کے دوران) اللہ تعالیٰ کا نام لینا اس کے تمام جسم کو پاک کر دے گا اور اگر تم میں سے کوئی وضو کے دوران اللہ تعالیٰ کا نام نہیں لیتا تو اس کو سوائے ان اعضاء کے جن پر پانی پھرا ہے طہارت حاصل نہیں ہوتی اور جب تم میں سے کوئی طہارت سے فارغ ہو تو یہ گواہی دے کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اللہ کے رسول ہیں پھر مجھ پر درود بھیجے پس جب وہ یہ کلمات اچھی طرح کہے گا تو جنت کے دروازے اس پر کھول دیے جائیں گے۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عند زيارة قبره

(آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی قبر مبارک کی زیارت کے وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

255 (13) عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال النبي صلي الله عليه وآله وسلم من صلي عَلَيَّ عند قبري سمعته ومن صلي عَلَيَّ نائياً أبلغته.

بيهقي، شعب الايمان، 2 : 218، رقم : 1583

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جو میری قبر کے نزدیک مجھ پر درود بھیجتا ہے میں خود اس کو سنتا ہوں اور جو دور سے مجھ پر درود بھیجتا ہے وہ مجھے پہنچا دیا جاتا ہے۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم في أثنا صلاة العيدفإنه يستحب أن يحمد اﷲ ويصلي علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم

(نماز عید کے دوران حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا مستحب ہے)

256 (14) عن علقمة أن ابن مسعود، وأبا موسي وخذيفة خرج إليهم الوليد بن عقبة قبل العيد فقال لهم : إن هذا العيد قد دنا فکيف التکبيرفيه؟ فقال عبداﷲ : تبدأ فتکبر تکبيرة تفتح بها الصلاة، وتحمد ربک وتصلي علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم ثم تدعوو تکبر وتفعل مثل ذلک، ثم تکبر وتفعل مثل ذلک، ثم تکبر و تفعل مثل ذٰلک، ثم تکبر و تفعل مثل ذٰلک ثم تقرأ و ترکع، ثم تقوم فتقرأ وتحمد ربک، وتصلي علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم ثم تدعو ثم تکبر وتفعل مثل ذلک ثم تکبر وتفعل مثل ذلک، ثم تکبر و تفعل مثل ذلک، ثم تکبر و تفعل مثل ذٰلک.

1. بيهقي، السنن الکبري، 3 : 291، رقم : 5981
2. ابن قدامة، المغني، 2 : 120

’’حضرت علقمہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ عید سے ایک دن قبل حضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ اور حضرت ابوموسیٰ الاشعری رضی اللہ عنہ اور حضرت خذیفہ یمانی رضی اللہ عنہ کے پاس حضرت ولید بن عقبہ رضی اللہ عنہ آئے اور ان سے کہا کہ عید قریب ہے پس اس کی تکبیر کیسے کہی جائے تو حضرت عبداللہ رضی اللہ عنہ نے کہا شروع میں ایک تکبیر کہو جس کے ساتھ تم اپنی نماز شروع کرتے ہو اور اپنے رب کی حمد بیان کرو اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجو پھر تکبیر کہو اور پہلے والا عمل دہراؤ پھر قراء ت کرو اور تکبیر کہو اور رکوع کرو پھر کھڑے ہوجاؤ اور قراء ت کرو اور اپنے رب کی حمد بیان کرو اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجو پھر دعا کرو اور تکبیر کہو اور پھر پہلے والا عمل دہراؤ پھر تکبیر کہو اور پہلے والا عمل دہراؤ پھر تکبیر کہو اور پہلے والا عمل دہراؤ پھر رکوع کرو پس حضرت حذیفہ اور حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنھم نے کہا حضرت ابو عبدالرحمٰن رضی اللہ عنہ نے سچ کہا ہے۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم أول النهار وآخره

(صبح و شام حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

257 (15) عن أبي الدرداء رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : من صلي عَلَيَّ حين يصبح عشرًا وحين يمسي عشرًا أدرکته شفاعتي يوم القيامة.

1. هيثمي، مجمع الزوائد، 10 : 120
2. منذري، الترغيب والترهيب، 1 : 261، رقم : 987
3. مناوي، فيض القدير، 6 : 169

’’حضرت ابو درداء رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جو شخص صبح کے وقت مجھ پر دس مرتبہ درود بھیجتاہے اور شام کے وقت دس مرتبہ درود بھیجتا ہے تو قیامت کے روز میری شفاعت کا حق دار ٹھہرتا ہے۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم في الدعاء

(دعا میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

258 (16) عن جابر رضي الله عنه قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم لا تجعلوني کقدح الراکب إن الراکب إذا علق معاليقه أخذ قدحه فملأه من الماء فإن کان له حاجة في الوضؤ تَوَضَّأ وإن کان له حاجة في الشرب شرب وَ إلَّا أهراق مافيه : اجْعَلُوْنِي فِي أَوَّل الدُّعَاءِ وَ وسط الدعاءِ وَ آخِرِ الدعاء.

عبد بن حميد، المسند، 1 : 340، رقم : 1132

’’حضرت جابر بن عبداﷲ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا مجھے قدح الراکب (مسافر کے پیالہ) کی طرح نہ بناؤ بیشک مسافر جب اپنی چیزوں کو اپنی سواری کے ساتھ لٹکاتا ہے تو اپنا پیالہ لے کر اس کو پانی سے بھر لیتا ہے پھر اگر (سفر کے دوران) اس کو وضو کی حاجت ہوتی ہے تو وہ (اس پیالے کے پانی سے) وضو کرتا ہے اور اگر اسے پیاس محسوس ہو تو اس سے پانی پیتا ہے وگرنہ اس کو بہا دیتا ہے۔ فرمایا مجھے دعا کے شروع میں وسط میں اور آخر میں وسیلہ بناؤ۔‘‘

الصلاة علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم عندکتابة اسمه الشريف

(حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا اسم گرامی لکھتے وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

259 (17) عن خالد صاحب الخلقان قال : کان لي صديق يطلب الحديث فتوفي فرأيته في منامي عليه ثياب خضر يرفل فيها فقلت له أليس کنت يافلان صديقًا لي وطلبت معي الحديث؟ قال بلي قلت فبم نلت هذا؟ قال لم يکن يمر حديث فيه ذکرالنبي صلي الله عليه وآله وسلم إلاکتبت فيه صلي اﷲ عليه و آله وسلم فکافأني بهذا.

خطيب بغدادي، الجامع لأخلاق الراوي وآداب السامع، 1 : 271، رقم : 566

’’حضرت خالد صاحب خلقان رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میرا ایک دوست تھا جو احادیث جمع کرتا تھا پھروہ وفات پاگیا تو میں نے اسے خواب میں دیکھا کہ اس نے سبز لباس زیب تن کیا ہوا ہے تو میں نے اسے کہا اے فلاں کیا تو میرا دوست نہیں تھا اور میرے ساتھ احادیث نہیں طلب کیا کرتا تھا؟ اس نے کہا ہاں پھر میں نے کہا تمہیں یہ رتبہ کیسے نصیب ہوا؟ تو اس نے کہا کہ حدیث لکھتے وقت ہر حدیث میں جہاں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا نام آتا تو میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اسم گرامی کے ساتھ (صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم) لکھتا پس اسی چیز نے مجھے یہ مقام عطاء کیا ہے۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم عند النوم

(سونے سے قبل آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر سلام بھیجنا)

260 (18) عن أبي قرصافة قال سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول : من آوي إلي فراشه ثم قرأ تبارک الذي بيده الملک ثم قال : اللهم رب الحل و الحرام، ورب البلد الحرام و رب الرکن والمقام ورب المشعر الحرام و بحق کل آية أنزلتها في شهر رمضان بلغ روح محمد صلي الله عليه وآله وسلم مني تحية و سلامًا أربع مرات وکل اﷲ تعالٰي به ملکين حتي يأتيا محمدًا صلي الله عليه وآله وسلم فيقولا له : ذٰلک فيقول صلي الله عليه وآله وسلم و علٰي فلان بن فلان مني.

ابن حيان، طبقات المحدثين بأصبهان، 3 : 434، رقم : 441

’’حضرت ابوقرصافہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص سونے کے لئے اپنے بستر میں داخل ہوا اور پھر اس نے سورہ تبارک پڑھی پھر اس نے یہ دعا کی اے اللہ اے حلال و حرام کے رب، اے بلدالحرام اور رکن اور مشعرالحرام کے رب ہر اس آیت کے واسطے جو تونے رمضان کے مبارک مہینے میں نازل کی تو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی روح مقدسہ کو میری طرف سے سلام پہنچا اور اس طرح چار مرتبہ کہے تو اللہ تبارک و تعالیٰ دو فرشتوں کو مقرر کردیتا ہے یہاں تک کہ وہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس حاضر ہوتے ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اس بندے کا سلام پہنچاتے ہیں تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماتے ہیں کہ فلاں بن فلاں کو میری طرف سے بھی سلام ہو۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم عند کل أمرٍ خير ذي بال

(ہر اچھے کام سے قبل آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

261 (19) عن أبي هريرة رضي الله عنه عن النبي صلي الله عليه وآله وسلم أنه قال : کل أمر لم يبدأ فيه بحمد اﷲ والصلاة عَلَيَّ فهو أقطع أبتر ممحوق من کل برکة.

1. ابويعلي، الارشاد، 1 : 449، رقم : 119
2. مناوي، فيض القدير، 5 : 14
3. عجلوني، کشف الخفاء، 2 : 156، رقم : 1964

’’ہر وہ نیک اور اہم کام جس کو نہ تو اللہ تعالیٰ کی حمد کے ساتھ اور نہ ہی حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنے کے ساتھ شروع کیا جائے تو وہ ہر طرح کی برکت سے خالی ہو جاتا ہے۔‘‘

الصلاة علٰي النبي صلي الله عليه وآله وسلم في کل مجلس

(ہر مجلس میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

262 (20). عن أبي هريرة صلي الله عليه وآله وسلم قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : زينوا مجالسکم بالصلاة عَلَيَّ فإن صلاتکم تعرض عَليَّ أو تبلغني.

عجلوني، کشف الخفاء، 1 : 536، رقم : 1443

’’حضرت ابو ہریرۃ رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ تم اپنی مجالس کو مجھ پر درود بھیجنے کے ذریعے سجایا کرو بے شک تمہارا درود مجھے پیش کیا جاتا ہے یا مجھے پہنچ جاتا ہے۔‘‘

الصلاة عليه صلي الله عليه وآله وسلم عند المرور علي المساجد ورؤيتها

(مساجد کے پاس گزرنے اور ان کے دیکھنے کے وقت حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجنا)

263 (21) عن علي بن حسين قال : قال علي بن أبي طالب رضي الله عنه : إذا مررتم بالمساجد فصلوا علي النبي صلي الله عليه وآله وسلم.

ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 3 : 514

’’حضرت علی بن حسین رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت علی بن ابو طالب رضی اللہ عنہ نے فرمایا جب تم مساجد کے پاس سے گزرو تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجا کرو۔‘‘

Copyrights © 2019 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved