Merits and Virtues of Sayyiduna Abu Bakr (R.A.)

حصہ دوم

فصل : 10

إن النبي صلي الله عليه وآله وسلم اتخذه رضي الله عنه نائبا

 (صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ. . . نائبِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم )

56. عن الزّهريّ قال أخبرني أنس بن مالک الأنصاريّ أنّ أبابکر کان يصلّي لهم في وجع النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم الّذي توفّي فيه حتّٰي إذا کان يوم الإثنين وهم صفوف في الصّلٰوة فکشف النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم ستر الحجرة ينظر إلينا وهو قائم کأنّ وجهه ورقة مصحف ثمّ تبسّم يضحک فهممنا أن نفتتن من الفرح برؤية النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم فنک رضي الله عنه أبوبکر علٰي عقبيه ليصل الصّفّ وظنّ أنّ النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم خارج الي الصّلٰوة فأشار إلينا النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم أن أتمّوا صلا تکم وأرخٰي السّتر فتوفّي من يومه صلي الله عليه وآله وسلم.

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے مرضِ وصال کے دوران انہیں (صحابہ کرام رضی اللہ عنہ کو) نماز پڑھایا کرتے تھے، یہاں تک کہ پیر کا دن آ گیا اورصحابہ کرام رضی اللہ عنھم نمازکی حالت میں صفیں باندھے کھڑے تھے۔ (اِس دوران) حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے (اپنے) حجرہء مبارک سے پردہ اٹھایا اور کھڑے ہو کر ہمیں دیکھنے لگے۔ ایسے لگ رہا تھاکہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا چہرہِ انور کھلے ہوئے قرآن کی طرح ہے پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تبسم فرماتے ہوئے ہنسنے لگے۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دیدار کی خوشی سے ہم نے نماز توڑنے کا ارادہ کر لیا حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اپنی ایڑیوں کے بَل پیچھے لوٹے تاکہ صف میں شامل ہو جائیں اور گمان کیا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز کے لئے (گھر سے) باہر تشریف لانے والے ہیں۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں اشارہ فرمایا کہ تم لوگ اپنی نماز کو مکمل کرو اور پردہ نیچے سرکا دیا۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا اسی دن وصال ہو گیا۔

1. بخاري، الصحيح، 1 : 240، کتاب الاٰذان، رقم : 648
2. بخاري، الصحيح، 1 : 403، رقم : 1147
3. بخاري، الصحيح، 4 : 1616، رقم : 4183
4. مسلم، الصحيح، 1 : 315، رقم : 419
5. احمد، المسند، 3 : 196، رقم : 13051
6. ابن حبان، الصحيح، 14 : 587، 6620
7. ابن خزيمه، الصحيح، 3 : 75، 1650
8. عبد الرزاق، المصنف، 5 : 433
9. بيهقي، السنن الکبريٰ، 3 : 75، رقم : 4825

57. عن عائشة امّ المؤمنين أنّها قالت : إنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قال في مرضه ’’مروا أبابکر يصلّي بالنّاس‘‘ قالت عائشة : قلت إنّ أبابکر إذا قام في مقامک لم يسمع النّاس من البکاء فمر عمر فليصلّ للنّاس فقالت عائشة فقلت لحفصة قولي له إنّ أبابکر إذا قام في مقامک لم يسمع النّاس من البکاء فمر عمرفليصلّ فقالت عائشة قلت لحفصة قولي له ’’إنّ أبابکر إذا قام في مقامک لم يسمع النّاس من البکاء فمر عمر فليصلّ للنّاس‘‘ ففعلت حفصة فقال رسول اللّٰه صلي الله عليه وآله وسلم : ’’مه، انّکنّ لأ نتنّ صواحب يوسف مروا أبابکر فليصلّ للنّاس‘‘

اُمّ المومنین عائشہ صدیقہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے مرضِ وصال میں ارشاد فرمایا۔ ’’ابوبکر رضی اللہ عنہ کو (میری طرف سے) حکم دو کہ وہ لوگوں کو نماز پڑھائیں۔‘‘ حضرت عائشہ رضی اﷲ عنہا فرماتی ہیں۔ میں نے کہا کہ (حضرت) ابوبکر رضی اللہ عنہ جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی جگہ پر کھڑے ہوں گے تو وہ کثرتِ گریہ (رونے) کی وجہ سے لوگوں کو (کچھ بھی) سنا نہیں سکیں گے۔ (اس لئے) آپ (حضرت) عمر رضی اللہ عنہ کو حکم فرمائیں کہ وہ لوگوں کو نماز پڑھائیں۔ حضرت عائشہ رضی اﷲ عنہا فرماتی ہیں۔ میں نے (اُمُّ المؤمنین حضرت) حفصہ رضی اﷲ عنہا سے کہا کہ آپ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے عرض کریں کہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ جب آپ کے مقام (مصلیٰ) پر کھڑے ہوں گے تو رونے کی وجہ سے لوگوں کو کچھ سنا نہ پائیں گے۔ پس آپ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو حکم فرمائیں کہ وہ لوگوں کو نماز پڑھائیں چنانچہ حضرت حفصہ رضی اﷲ عنہا نے ایسے ہی کیا۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’رُک جاؤ! بیشک تم صواحب یوسف کی طرح ہو. ابوبکر رضی اللہ عنہ کو (میری طرف سے) حکم دو کہ وہ لوگوں کو نماز پڑھائیں۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 1 : 240، کتاب الاذان، رقم : 647
2. بخاري، الصحيح، 1 : 252، رقم : 684
3. بخاري، الصحيح، 6 : 2663، رقم : 6873
4. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 613، رقم : 3672
5. ابن حبان، الصحيح، 14 : 566، رقم : 6601
6. احمد بن حنبل، المسند، 6 : 96، رقم : 24691
7. احمد بن حنبل، المسند، 6 : 202، رقم : 25704
8. مالک، المؤطا، 1 : 170، رقم : 412
9. ابو يعلي، المسند، 7 : 452، رقم : 4478
10. نسائي، السنن الکبريٰ، 6 : 368، رقم : 11252
11. بيهقي، السنن الکبريٰ، 2 : 250، رقم : 3171
12. الربيع، المسند، 1 : 92، رقم : 211
13. بغوي، شرح السنه، 3 : 423، رقم : 853

58. عن عائشة رضي اﷲ عنها، قالت، قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’لا ينبغي لقوم فيهم أبوبکر أن يّؤمّهم غيره.‘‘

ام المومنین سيّدہ عائشہ صِدِّیقہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’کسی قوم کے لئے مناسب نہیں جن میں ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ موجود ہوں کہ ان کی امامت اِن (ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ) کے علاوہ کوئی اور شخص کروائے۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 614، ابواب المناقب، رقم : 3673
2. مبارکپوري، تحفة الأحوذي، 10 : 109
3. ابراهيم بن محمد الحسيني، البيان والتعريف، 2 : 296، رقم : 1785
4. محب طبري، الرياض النضرة، 2 : 82

59. عن محمّد بن جبيربن مطعم عن أبيه؛ أنّ إمرأة سألت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم شيئا، فأمرها أن ترجع إليه، فقالت : يا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ! أرأيت إن جئت فلم أجدک؟ قال أبي : ’’کأنّها تعني الموت‘‘. قال ’’فان لّم تجديني فأتي أبابکر.‘‘

محمد بن جبیر بن مطعم اپنے والدسے روایت کرتے ہیں کہ ایک عورت نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں کسی چیز کے بارے میں پوچھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اسے دوبارہ آنے کا حکم فرمایا، اس نے عرض کی، ’’یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! اگر میں آؤں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو نہ پاؤں تو؟‘‘ (محمد بن جبیر فرماتے ہیں کہ) میرے والد (جبیر بن مطعم) نے فرمایا گویا وہ عورت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وصال مراد لے رہی تھی۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔ ’’اگر تو مجھے نہ پائے تو ابوبکر رضی اللہ عنہ کے پاس آنا۔‘‘

1. مسلم، الصحيح، 4 : 1856، کتاب فضائل الصحابة، رقم : 2386
2. بخاري، الصحيح، 3 : 1338، کتاب المناقب، رقم : 3459
3. بخاري، الصحيح، 6 : 2639، رقم : 6794
4. بخاري، الصحيح، 6 : 2679، رقم : 6927
5. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 615، کتاب المناقب، رقم : 3676
6. ابن حبان، الصحيح، 15 : 34، رقم : 6656
7. طبراني، المعجم الکبير، 2 : 132، رقم : 557
8. ابن ابي عاصم، السنة، 2 : 547، رقم : 1151
9. ابن سعد، الطبقات الکبريٰ، 3 : 177

60. عن جابر ابن عبداﷲ رضي اﷲ عنهما قال : کنّا عندالنّبيّ إذ جائه وفد عبدالقيس فتکلّم بعضهم بکلام لغا في الکلام فالتفت النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم إلٰي أبي بکر و قال : ’’يا أبابکر سمعت ما قالوا؟‘‘ قال : نعم يا رسول اﷲ وفهمته قال : ’’فأجبهم‘‘ قال : فأجابهم أبوبکر رضي الله عنه بجواب وأجاد الجواب فقال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’يا أبابکر أعطاک اﷲ الرّضوان الأکبر‘‘ فقال له بعض القوم ’’وما الرّضوان الأکبر يا رسول اﷲ؟‘‘ قال : ’’يتجلّي اﷲ لعباده في الآخرة عامة وّ يتجلّي لأبي بکر خاصّة‘‘

’’حضرت جابر بن عبداﷲ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہِ اقدس میں حاضر تھے کہ عبدالقیس کا وفد آیا، اس میں سے ایک شخص نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے نامناسب گفتگو کی۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کی طرف متوجہ ہوئے اور ارشاد فرمایا : ’’اے ابوبکر! آپ نے سنا جو کچھ انہوں نے کہا ہے؟‘‘ آپ نے عرض کی : جی ہاں! یا رسول اﷲ! میں نے سن کر سمجھ لیا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’پھر انہیں اس کا جواب دو‘‘۔ راوی کہتے ہیں، حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے انہیں نہایت عمدہ جواب دیا پھر رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’اے ابوبکر رضی اللہ عنہ ! اﷲ رب العزت نے تمہیں رضوانِ اکبر عطا فرمائی ہے۔‘‘ لوگوں میں سے کسی نے بارگاہِ نبوت میں عرض کی۔ ’’یا رسول اﷲ! رضوانِ اکبر کیا ہے؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’اﷲ رب العزت آخرت میں اپنے بندوں کی عمومی تجلی فرمائے گا اور ابوبکر رضی اللہ عنہ کے لئے خصوصی تجلی فرمائے گا۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 83، رقم : 4463
2. ابونعيم، حلية الاولياء، 5 : 12
3. عبداﷲ بن محمد، طبقات المحدثين بأصبهان، 3 : 11، رقم : 240
4. محب طبري، الرياض النضرة، 2 : 76

61. عن أبي هريرة ان ابابکر الصديق بعثه في الحجة التي امّره عليها رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم قبل حجة الوداع يوم النحر في رهط يؤذّن في الناس ألا لا يحج بعد العام مشرک ولا يطوف بالبيت عريان.

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے مجھے حجۃ الوداع سے پہلے حج میں جس کا امیر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت ابو بکر صدیق کو بنا کر بھیجا تھا نحرکے دن ایک جماعت میں بھیجا تاکہ لوگوں میں اعلان کیا جائے کہ خبردار! آج کے بعد کوئی مشرک حج نہ کرے اور نہ کوئی خانہ کعبہ کا برہنہ طواف کرے۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 2 : 586، کتاب التفسير، رقم : 1543
2. بخاري، الصحيح، 2 : 1586، رقم : 4105
3. بخاري، الصحيح، 4 : 1586، رقم : 4105
4. بخاري، الصحيح، 4 : 1710، رقم : 4380
5. نسائي، السنن، 5 : 234، رقم : 2957
6. نسائي، السنن الکبريٰ، 2 : 407، رقم : 3948
7. بيهقي، السنن الکبريٰ، 5 : 87، رقم : 9091
8. ابو يعلي، المسند، 1 : 77، رقم : 76

فصل : 11

إن النبي صلي الله عليه وآله وسلم اتخذه رضي الله عنه وزيراً

(صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ. . . وزیرِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

62. عن أبي سعيد الخدريّ، قال : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’ما من نبيّ إلّا له وزيران من أهل السّماء و وزيران من أهل الارض، فأمّا وزيراي من أهل السّماء فجيريل وميکائيل، و أمّا وزيراي من أهل الارض فأبوبکر و عمر.‘‘

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’ہر نبی کے لئے دو وزیر آسمان والوں میں سے اور دو وزیر زمین والوں میں سے ہوتے ہیں۔ پس آسمان والوں میں سے میرے دو وزیر، جبرئیل و میکائیل علیھما السلام ہیں اور زمین والوں میں سے میرے دو وزیر ابوبکر اور عمر رضی اﷲ عنہما ہیں‘‘۔

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 616، ابواب المناقب، رقم : 3680
2. حاکم، المستدرک، 2 : 290، رقم : 3047
3. ابن الجعد، المسند، 1 : 298، رقم : 2026
4. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 164، رقم : 152
5. نووي، تهذيب الاسماء، 2 : 478
6. محب طبري، الرياض النضره، 1 : 335

63. عن سعيد ابن المسيّب قال : ’’کان أبوبکرالصّدّيق من النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم مکان الوزير فکان يشاوره في جميع أموره وکان ثانيه في الإسلام وکان ثانيه في الغار وکان ثانيه في العريش يوم بدر وکان ثانيه في القبر ولم يکن رّسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقدّم عليه أحدا‘‘

’’حضرت سعید بن المسیب رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ، حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں وزیر کی حیثیت رکھتے تھے اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنے تمام اُمور میں اُن سے مشورہ فرمایا کرتے تھے۔ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ اسلام لانے میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ثانی (دوسرے) تھے، غارِ (ثور) میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ثانی تھے، غزوہء بدر میں عریش (وہ چھپر جو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لئے بنایا گیا تھا) میں بھی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ثانی تھے، قبر میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ثانی ہیں اور رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اُن (حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ) پر کسی کو بھی مقدّم نہیں سمجھتے تھے۔‘‘

حاکم، المستدرک، 3 : 66، رقم : 4408

64. عن ابن عبّاس رضي الله عنه في قوله عزّوجلّ : (وشاورهم في الأمر) (1) قال : ’’أبو بکر وّ عمر.‘‘

’’حضرت عبداﷲ بن عباس رضی اللہ عنہ سے اﷲ رب العزت کے اِس ارشاد (اور تمام معاملات میں اُن سے مشورہ فرمائیں۔ سورۃ آل عمران، آیت : 159) کے بارے جن سے اﷲ تعالیٰ نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو مشورہ فرمانے کا حکم دیا، کون مراد ہیں؟‘‘ حضرت عبداﷲ ابن عباس رضی اللہ عنہ نے فرمایا، وہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ ہیں۔‘‘

1. القرآن، اٰلِ عمران : 159
2. حاکم، المستدرک، 3 : 74، رقم : 4436

65. عن ابن عباس رضي اﷲ عنهما قال، قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إن اﷲ تعالٰي أيدني بأربعة وزراء نقباء قلنا يا رسول اﷲ من هؤلاء الأربع قال اثنين من أهل السماء واثنين من أهل الأرض فقلت من الإثنين من أهل السماء قال جبريل و ميکائيل قلنا من الإثنين من أهل الأرض قال ابوبکر و عمر.

’’حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اﷲ تعالیٰ نے چار وزراء نقباء کے ذریعے میری مدد فرمائی ہم نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! وہ چار کون ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : دو اہل سماء میں سے ہیں اور دو اہل زمین میں سے ہیں۔ میں نے عرض کیا : اہل سماء میں سے دو کون ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : جبریل اور میکائیل. ہم نے عرض کیا : اہل زمین میں سے دو کون ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ابوبکر اور عمر رضی اﷲ عنہما۔‘‘

1. طبراني، المعجم الکبير، 11 : 179، رقم : 11422
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 9 : 51
3. ابو نعيم، حلية الاولياء، 8 : 160
4. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 3 : 298

فصل : 12

إن النبي صلي الله عليه وآله وسلم اتخذه رضي الله عنه سمعا و بصرا

(صدیق اکبر رضی اللہ عنہ. . . سمع و بصرِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

66. عن عبدالعزيز بن المطّلب، عن أبيه، عن جدّه عبداﷲ بن حنطب، أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم راٰي أبابکر و عمر فقال : ’’هذانِِ السّمع والبصر‘‘

’’حضرت عبداﷲ بن حنطب سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت ابوبکر اور حضرت عمر رضی اﷲ عنہما کو دیکھا تو ارشاد فرمایا : یہ دونوں (میرے لئے) کان اور آنکھ کی حیثیت رکھتے ہیں۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 613، ابواب المناقب، رقم : 3671
2. مزي، تهذيب الکمال، 14 : 435، رقم : 3235
3. عسقلاني، الاصابه، 4 : 64، رقم : 4639
4. عبدالباقي، معجم الصحابه، 2 : 100
5. احمد بن ابراهيم، تحفة التحصيل، 1 : 172
6. العلائي، جامع التحصيل، 1 : 209

67. عن عبداﷲ بن حنطب قال : کنت مع رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فنظر إلٰي أبي بکر وّ عمر رضي اﷲ عنهما فقال : ’’هذان السّمع والبصر.‘‘

حضرت عبد اﷲ بن حنطب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں، میں رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی طرف دیکھ کر فرمایا : ’’یہ دونوں (میرے لئے) کان اور آنکھ کی حیثیت رکھتے ہیں۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 73، کتاب معرفة الصحابة، رقم : 4432
2. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 432، رقم : 686

68. عن حذيفة بن اليمان رضي اﷲ عنهما قال : سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول : ’’لقد هممت أن أبعث إلي الاٰفاق رجالا يّعلّمون النّاس السّنن والفرائض کما بعث عيسٰي ابن مريم الحواريّين‘‘ قيل له : فأين أنت من أبي بکر وّ عمر؟ قال : ’’انّه لا غني بي عنهما إنّهما من الدّين کالسّمع والبصر.‘‘

’’حضرت حذیفہ بن یمان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ارشاد فرماتے ہوئے سُنا : ’’میں نے ارادہ کیا ہے کہ تمام آفاق (علاقوں) میں کچھ لوگ بھیجوں جو لوگوں کو سنن و فرائض سکھائیں، جس طرح عیسیٰ بن مریم علیہ السلام نے حواریوں کو بھیجا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں عرض کی گئی کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا (حضرت) ابوبکر و عمر رضی اﷲ عنہما کے بارے میں کیا خیال ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’بیشک اِن دونوں کے سوا میرے لئے کوئی چارہ نہیں، یقیناً یہ دونوں دین میں سمع و بصر (کان اور آنکھ) کا درجہ رکھتے ہیں۔‘‘

حاکم، المستدرک، 1 : 78، کتاب معرفة الصحابة، رقم : 4448

69. حدّثني سعيد بن المسيّب وأبو سلمة بن عبدالرّحمٰن؛ أنّهما سمعا أباهريرة يقول : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’بينما رجل يسوق بقرة له، قد حمل عليهاالتفتت إليه البقرة فقالت : إنّي لم أخلق لهذا ولٰکنّي إنّما خلقت للحرث‘‘ فقال النّاس : سبحان اﷲ! تعجّبا وفزعا أبقرة تکلّم؟ فقال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’فإنّي أومن به و أبوبکر و عمر‘‘ قال أبوهريرة : قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ’’بينا راع في غنمه، حمل عليه الذّئب فأخذ منها شاة فطلبه الرّاعي حتّي استنقذها منه. فالتفت إليه الذّئب فقال له : من لها يوم السّبع، يوم ليس لها راع غيري؟‘‘ فقال النّاس : سبحان اﷲ! فقال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’فإنّي أومن بذٰلک أنا وأبوبکر و عمر‘‘

’’حضرت سعید بن مسیب رضی اللہ عنہ اور ابو سلمہ بن عبد الرحمن رضی اللہ عنہ سے مروی ہے ان دونوں نے حضرت ابو ہریرۃ رضی اللہ عنہ سے سنا کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : اس دوران کہ ایک شخص اپنے بیل پر بوجھ لادے ہوئے ہانک کر لے جا رہا تھا۔ بیل نے اس کی طرف دیکھا اور کہنے لگا میں اِس (کام) کے لئے پیدا نہیں کیا گیا بلکہ میں تو کھیتی باڑی کے لئے تخلیق کیا گیا ہوں۔ لوگوں نے تعجب اور گھبراہٹ کے عالم میں کہا، سبحان اﷲ ! بیل گفتگو کرتا ہے؟ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : بیشک میں تو اس کو سچ مانتا ہوں اور ابوبکر رضی اللہ عنہ و عمر رضی اللہ عنہ بھی اسے سچ تسلیم کرتے ہیں۔ سیدنا ابوہریرۃ رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ حضور رسالت مآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : اس دوران کہ ایک چرواہا اپنی بکریوں (کے ریوڑ) میں تھا، ایک بھیڑیئے نے اُن پر حملہ کر دیا اور اس ریوڑ میں سے ایک بکری کو پکڑ لیا۔ چرواہے نے اس کا پیچھا کیا اور بکری کو اس سے چھڑا لیا۔ بھیڑیا چرواہے کی طرف متوجہ ہوا اور اُسے کہنے لگا : اُس دن بکری کو کون بچائے گا جس دن میرے سوا کوئی چرواہا نہ ہو گا۔ (وہ قیامت کا دن ہے یا عید کا دن جس دن جاہلیت والے کھیل کود میں مصروف رہتے اور بھیڑیئے بکریاں لے جاتے یا قیامت کے قریب فتنہ کا دن جب لوگ مصیبت کے مارے اپنے مال کی فکر سے غافل ہو جائیں گے) لوگوں نے کہا، سبحان اﷲ! پھر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’بیشک اس واقعہ کو میں، ابوبکر اور عمر سچ تسلیم کرتے ہیں۔‘‘

1. مسلم، الصحيح، 4 : 1858، رقم : 2388
2. بخاري، الصحيح، 3 : 1339، رقم : 3463
3. ترمذي، السنن، 5 : 615رقم : 3677
4. نسائي، السنن الکبريٰ، 5 : 37، رقم : 8112
5. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 179، رقم : 184
6. ابن حبان، الصحيح، 14 : 404، رقم : 6485
7. ابن حبان، الصحيح، 15 : 329، رقم : 6903
8. طيالسي، المسند، 1 : 309، رقم : 2354
9. ديلمي، الفردوس بمأثورالخطاب، 2 : 16، رقم : 2113
10. ازدي، الجامع، 11 : 230
11. يوسف بن موسيٰ، معتصر المختصر، 1 : 269
12. ابن منذه، الايمان، 1 : 409، رقم : 255
13. نووي، تهذيب الاسماء، 2 : 328، 476
14. ذهبي، سير اعلام النبلاء، 18 : 230
15. ذهبي، معجم المحدثين، 1 : 199

فصل : 13

أحب خلق اﷲ إلي الرسول صلي الله عليه وآله وسلم

(صدیق اکبر رضی اللہ عنہ. . . حبیب مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

70. عن يحيٰي بن عبدالرّحمٰن بن حاطب قال : قالت عائشة رضي اﷲ عنها لمّا ماتت خديجة رضي اﷲ عنها : جاء ت خولة بنت حکيم إلٰي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فقالت : ألا تزوّج؟ قال من؟ قالت إن شئت بکرا وّإن شئت ثيّبا قال : ومن البکر ومن الثّيّب؟ قالت : أمّا البکر فابنة أحبّ خلق اﷲ إليک عائشة بنت أبي بکر رضي الله عنه وأمّا الثّيّب فسودة بنت زمعة.

’’حضرت یحییٰ بن عبد الرحمٰن بن حاطب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : امّ المؤمنین عائشہ صدّیقہ رضی اﷲ عنھا نے فرمایا : جب (اُمُّ المؤمنین) سیدہ خدیجہ رضی اﷲ عنھا کا انتقال ہو گیا تو حضرت خولہ بنت حکیم رضی اﷲ عنھا حضور رسالتمآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں آئیں اور کہا : کیا آپ شادی نہیں فرمائیں گے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کس سے؟ انہوں نے عرض کی، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چاہیں تو باکرہ (کنواری) سے، چاہیں تو ثیبہ (شوہر دیدہ) سے نکاح فرمائیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا، باکرہ کون ہے اور ثیبہ کون؟ انہوں نے عرض کی۔ ’’باکرہ تو تمام مخلوق خدا میں آپ کے سب سے زیادہ محبوب کی بیٹی عائشہ بنت ابی بکر رضی اﷲ عنھما ہے اور ثیبہ (حضرت) سودہ بنت زمعہ رضی اﷲ عنہا ہیں۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 77، کتاب معرفةالصحابة، رقم : 4445
2. حاکم، المستدرک، 2 : 181، رقم : 2704
3. احمد بن حنبل، المسند، 6 : 210، رقم : 25810
4. طبراني، المعجم الکبير، 23 : 23، رقم : 57
5. بيهقي، السنن الکبريٰ، 7 : 129، رقم : 13526
6. شيباني، الآحاد و المثاني، 5 : 389، رقم : 3006
7. اسحاق بن راهويه، المسند، 2 : 588، رقم : 1164
8. هيثمي، مجمع الزوائد، 9 : 225
9. ذهبي، سير أعلام النبلاء، 2 : 149
10. طبري، تاريخ الأمم والملوک، 2 : 211
11. عسقلاني، الإصابه، 8 : 17، رقم : 11457

71. عن الزّهريّ قال، قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم لحسّان بن ثابت رضي الله عنه هل قلت في أبي بکر شيئا؟ قال نعم، فقال قل وأنا أسمع فقال : ثاني اثنين في الغار المنيف وقد طاف العدوّ به إذ صعّد الجبلا وکان حبّ رسول اﷲ قد علموا من البريّة لم يعدل به رجلا.

’’امام زہری سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت حسان بن ثابت رضی اللہ عنہ سے ارشاد فرمایا : ’’کیا تم نے ابوبکر (صدیق رضی اللہ عنہ) کے بارے کچھ کہا ہے‘‘۔ انہوں نے عرض کی، ہاں (یا رسول اﷲ!)۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ ’’وہ کلام مجھے سناؤ میں سنوں گا۔‘ حضرت حسان رضی اللہ عنہ یوں گویا ہوئے ’’وہ غار میں دو میں سے دوسرے تھے۔ جب وہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو لے کر پہاڑ (جبل ثور) پر چڑھے تو دشمن نے اُن کے ارد گرد چکر لگائے اور تمام صحابہ رضی اللہ عنہ کو معلوم ہے کہ وہ (حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ) رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے محبوب ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کسی شخص کو اُن کے برابر شمار نہیں کرتے ہیں‘‘۔

 (یہ سن کر) رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہنس پڑے یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دندانِ مبارک ظاہر ہو گئے پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ ’’اے حسان تم نے سچ کہا، وہ (ابوبکر رضی اللہ عنہ) بالکل ایسے ہی ہیں جیسے تم نے کہا۔‘‘

1. الحاکم، المستدرک، 3 : 67، کتاب معرفة الصحابة، رقم : 4413
2. حاکم، المستدرک، 3 : 82، رقم : 4461
3. ابن سعد، الطبقات الکبريٰ، 3 : 174
4. بن الجوزي، صفة الصفوة، 1 : 241
5. محب طبري، الرياض النضرة، 1 : 417

72. عن أبي عثمان قال : حدّثني عمرو بن العاص رضي الله عنه : أنّ النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم بعثه علٰي جيش ذات السّلاسل، فأتيته فقلت : ’’أيّ النّاس أحبّ إليک؟‘‘ قال : ’’عائشة‘‘. فقلت : ’’من الرّجال؟‘‘ فقال : ’’أبوها‘‘ قلت : ثمّ من؟ قال : ’’عمر بن الخطّاب‘‘ فعدّ رجالا.

حضرت ابو عثمان رضي اللہ عنہ سے مروی ہے : کہ مجھے حضرت عمرو ابن العاص رضی اللہ عنہ نے بتایا کہ : حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مجھے غزوہ ذاتِ السلاسل کا امیرِ لشکر بنا کر روانہ فرمایا : جب واپس آیا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں عرض گزار ہوا۔ ’’لوگوں میں آپ کو سب سے زیادہ محبت کس کے ساتھ ہے؟‘‘ تو ارشاد فرمایا۔ ’’عائشہ رضی اﷲ عنھا کے ساتھ۔‘‘ میں نے پھر عرض کی ’’مردوں میں سے؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’اُن کے والد ( ابوبکر رضی اللہ عنہ) کے ساتھ۔‘‘ میں نے عرض کی، پھر اُن کے بعد؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ ’’عمر رضی اللہ عنہ بن خطاب کے ساتھ‘‘۔ اور پھر اُن کے بعد چند دوسرے حضرات کے نام لئے۔

1. بخاري، الصحيح، 3 : 1339، کتاب المناقب، رقم : 3462
2. بخاري، الصحيح، 4 : 1584، رقم : 4100
3. مسلم، الصحيح، 4 : 1856 کتاب فضائل الصحابه، رقم : 2384
4. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 706، کتاب المناقب، رقم : 3885، 3886
5. احمدبن حنبل، المسند، 4؛ 203، رقم : 17143
6. ابو يعلي، المسند، 13 : 329، رقم : 7345
7. طبراني، المعجم الکبير، 23، 44، رقم : 114
8. شيباني، السنه لإبن ابي عاصم، 2 : 578، رقم : 123
9. بخاري، التاريخ الکبير، 6 : 24، رقم : 1567
10. عبدين حميد، المسند، 1 : 121، رقم : 295
11. ذهبي، سير أعلام النبلاء، 2 : 147

73. عن عبداﷲ بن شقيق، قال : قلت لعائشة : أيّ أصحاب رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم کان أحبّ إلي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ؟ قالت : أبوبکر، قلت : ثمّ من؟ قالت : عمر، قلت : ثمّ من؟ قالت : ثمّ أبوعبيدة بن الجرّاح، قلت : ثمّ من؟ قال : فسکتت.

’’حضرت عبد اﷲ بن شقیق رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے اُمُّ المؤمنین عائشہ صدّیقہ رضی اﷲ عنھا سے پوچھا : حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ہاں آپ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنھم میں سے کون سب سے زیادہ محبوب تھے؟ اُمُّ المؤمنین رضی اﷲ عنھا نے فرمایا : حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ۔ میں نے عرض کیا : پھر کون زیادہ محبوب تھے؟ آپ نے فرمایا : حضرت عمر رضی اللہ عنہ۔ میں نے عرض کیا : پھر کون زیادہ محبوب تھے؟ اُمُّ المؤمنین رضی اﷲ عنھا نے فرمایا : حضرت ابو عبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہ۔ میں نے پوچھا پھر کون؟ اس پر حضرت عائشہ رضی اﷲ عنھا خاموش ہو گئیں۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 6 : 39، ابواب المناقب، رقم : 3657 ابن ماجه، السنن، 1 : 38، مقدمه، رقم : 102
2. احمد بن حنبل، المسند، 6 : 218، رقم : 25871
3. ابو يعلي، المسند، 8 : 296، رقم : 4887
4. نسائي، السنن الکبريٰ، 5 : 57، رقم : 8201
5. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 198
6. نسائي، فضائل الصحابه، 1 : 30، رقم : 97
7. يوسف بن موسي، معتصر المختصر، 2 : 354
8. محب طبري، الرياض النضره، 1 : 231
9. مزي، تهذيب الکمال، 14 : 56
10. عسقلاني، الإصابه، 3 : 588
11. نووي، تهذيب الأسماء، 2 : 478
12. ذهبي، سيرأعلام النبلاء، 1 : 10

74. عن عائشة، عن عمر بن الخطّاب، قال : أبوبکر سيّدنا وخيرنا وأحبّنا إلٰي رسُول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم.

’’اُمُّ المؤمنین سيّدہ عائشہ صدِّیقہ رضی اﷲ عنھا امیر المؤمنین سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے روایت کرتی ہیں کہ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ ہمارے سردار، ہم سب سے بہتر اور رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ہم سب سے زیادہ محبوب تھے۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 606، ابواب المناقب، رقم : 3656
2. الحاکم، المستدرک، 3 : 69، رقم : 4421
3. مقدسي، الأحاديث المختاره، 1 : 256، رقم : 146
4. نو وي، تهذيب الأسماء، 2 : 478
5. محب طبري، الرياض النضره، 2 : 29

75. عن أنس رضي الله عنه قال : قيل يا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’أيّ النّاس أحبّ إليک؟‘‘ قال : ’’عائشة رضي اﷲ عنها‘‘ قيل من الرّجال؟ قال : ’’أبوها.‘‘

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے عرض کیا گیا، ’’یا رسول اﷲ! آپ کو تمام لوگوں سے زیادہ کون محبوب ہے؟‘‘ تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’عائشہ رضی اﷲ عنھا۔‘‘ عرض کیاگیا۔ ’’مردوں میں سے (کون زیادہ محبوب ہے)؟‘‘ تو رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’عائشہ صدّیقہ رضی اﷲ عنھا کا باپ ابوبکر رضی اللہ عنہ۔‘‘

1. ابن ماجه، السنن، 1 : 38، مقدمه رقم : 101

نوٹ :

و اعلم أن المحبة تختلف بالأسباب والأشخاص فقد يکون للجزئية وقد يکون بسبب الإحسان وقد يکون بسبب الحسن والجمال وأسباب أخر لا يمکن تفصيلها و محبته صلي الله عليه وآله وسلم لفاطمة بسبب الجزئية والزهد والعبادة و محبته لعائشة بسبب الزوجية والتفقه في الدين و محبة أبي بکر و عمر و أبي عبيدة بسبب القدم في الإسلام وإعلاء الدين و وفور العلم.

’’محبت اسباب اور اشخاص کے حوالے سے مختلف ہوتی ہے۔ کبھی جزئیت (اولاد ہونے) کے سبب ہوتی ہے، کبھی کسی احسان کے باعث اورکبھی حسن وجمال کی وجہ سے ہوتی ہے اور دوسرے اسباب کی تفصیل بیان کرنا ممکن نہیں۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت سیدہ فاطمۃ الزھراء سلام اﷲ علیھا کے لیے جزئیت (بیٹی ہونے) اور انکے زہد و عبادت کے سبب ہے اور سیدہ عائشہ رضی اﷲ عنھا سے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت انکی زوجیت اور دین میں تفقہ کی وجہ سے ہے اور حضرت ابوبکر وعمر اور ابو عبیدہ رضی اللہ عنھم کی محبت انکی سبقت سلام، دین کو سر بلند کرنے اور ان کے کمالِ علم کی وجہ سے ہے۔‘‘

1. سيوطي، شرح سنن ابن ماجه، 1 : 11
2. مبارکپوري، تحفة الأحوذي، 1 : 98

فصل : 14

أعلم الناس مزاج رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم

(صدیق اکبر رضی اللہ عنہ. . . شناسائے مزاجِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

76. عن أبي سعيد الخدريّ رضي الله عنه قال : خطب رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم النّاس وقال : ’’إنّ اﷲ خيّر عبدا بين الدّنيا وبين ما عند ه، فاختار ذٰلک العبد ما عند اﷲ‘‘. قال : فبکٰي أبوبکر. فعجبنا لبکائه : أن يّخبر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم عن عبد خيّر، فکان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم هو المخيّر، وکان أبوبکر أعلمنا‘‘.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خطبہ ارشاد فرمایا : ’’بیشک اﷲ تعالیٰ نے ایک بندے کو دنیا اور جو اﷲ کے پاس ہے کے درمیان اختیار دیا ہے۔ پس اُس بندے نے اُس چیز کو اختیار کیا جو اﷲ کے پاس ہے‘‘۔ حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں، اس پر ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ رو پڑے۔ ہم نے اُن کے رونے پر تعجب کیا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم توایک بندے کا حال بیان فرما رہے ہیں کہ اُس کو اختیار دیا گیا ہے۔ پس وہ (بندہ) جس کو اختیار دیا گیا تھا خود تاجدارِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تھے اور ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ ہم سب سے زیادہ علم رکھنے والے تھے (جو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مراد سمجھ گئے)۔‘‘

1. بخاري، الصحيح 3 : 1337، کتاب المناقب رقم : 3454
2. بخاري، الصحيح، 1 : 177، رقم : 454
3. مسلم، الصحيح، 4 : 1854، کتاب فضا ئل الصحابة، رقم : 2382
4. ترمذي، السنن، 5 : 608، رقم : 3660
5. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 607، رقم : 3659
6. ابن حبان، الصحيح، 14 : 559، رقم : 6594
7. ابن حبان، الصحيح، 15 : 277، رقم : 2861
8. احمدبن حنبل، المسند3 : 18، رقم : 11150
9. ابن سعد، الطبقات الکبرٰي، 2 : 227
10. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 13 : 63، رقم : 7045

77. عن ابن أبي المعلّٰي، عن أبيه، أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم خطب يوما فقال : ’’إنّ رجلا خيّره ربّه بين أن يّعيش في الدّنيا ماشاء أن يّعيش ويأکل في الدّنيا ماشاء أن يأکل وبين لقاء ربّه، فاختار لقاء ربّه‘‘. قال : فبکٰي أبوبکر، فقال أصحاب النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم : ألا تعجبون من هذا الشّيخ إذ ذکر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم رجلا صالحا خيّره ربّه بين الدّنيا وبين لقاء ربّه فاختار لقاء ربّه. قال : فکان أبوبکر أعلمهم بما قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، فقال أبوبکر : ’’بل نفديک باٰ بائنا وأموالنا‘‘.

حضرت ابن ابی معلی اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک دن خطبہ ارشاد فرمایا : اﷲ تعالیٰ نے ایک شخص کو اختیار دیا کہ جب تک چاہے دنیا میں رہ کر جو چاہے کھائے یا اپنے رب کے پاس آجائے، تو اُس بندے نے اپنے رب سے جا ملنے کو پسند کیا‘‘۔ (یہ سن کر) حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ رو پڑے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنھم نے (ایک دوسرے سے) کہا تمہیں اس شیخ پر تعجب نہیں ہوتا کہ رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک نیک آدمی کا ذکر فرمایا کہ اﷲ تعالیٰ نے اُسے دنیا میں رہنے یا اپنے رب سے ملاقات کرنے کا اختیار دیا تو اُس بندے نے اپنے رب کی ملاقات کوترجیح دی۔ راوی فرماتے ہیں، رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ارشادِ پاک کو حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سب سے زیادہ جاننے والے تھے۔ چنانچہ انہوں نے عرض کیا۔ ’’ (یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم !) ہمارے ماں باپ اور مال آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر فدا ہوں۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 607، ابواب المناقب، رقم : 3659
2. احمد بن حنبل، المسند، 4؛ 211
3. طبراني، المعجم الکبير، 22 : 328
4. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 209، رقم : 234
5. محب طبري، الرياض النضره، 2 : 51

78. عن أبي سعيد الخدريّ، أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم جلس علي المنبر فقال : ’’إنّ عبدا خيّره اﷲ بين أن يّؤتيه من زهرة الدّنيا ماشاء وبين ما عنده، فاختار ما عنده‘‘. فقال أبوبکر : فديناک يا رسول اﷲ باٰبائنا وأمّهاتنا. قال : فعجبنا! فقال النّاس : أنظروا إلٰي هذا الشّيخ يخبر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم عن عبد خيّره اﷲ بين أن يّؤتيه من زهرة الدّنيا ماشاء وبين ما عنداﷲ وهو يقول : فديناک باٰ بائنا وأمّهتنا! قال : فکان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم هو المخيّر، وکان أبوبکر هو أ علمنا به.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منبر پر تشریف فرماہوئے تو ارشاد فرمایا : ’’اﷲ تعالیٰ نے ایک بندے کو اختیار دیا کہ یا تو دنیا کی آرائش سے جو چاہے لے لے یا جو کچھ اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے وہ حاصل کرے، تو اس بندے نے اُسے پسند کیا جو اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے۔‘‘ (یہ سن کر) حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا۔ یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! ہمارے ماں باپ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر قربان ہوں۔ راوی فرماتے ہیں ہمیں تعجب ہوا، تو لوگوں نے ایک دوسرے سے کہا کہ اس شیخ کی طرف دیکھو! حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تو کسی بندے کے متعلق فرما رہے ہیں کہ اﷲتعالیٰ نے اُسے دنیا کی آرائش یا جو اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے، اُن میں سے ایک کے حصول کا اختیار دیا اور یہ فرما رہے ہیں ہمارے ماں باپ آپ پر فدا ہوں۔ حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ نے فرمایا درحقیقت حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ہی اختیار دیا گیا تھا اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اس بات کو ہم سب سے زیادہ جانتے تھے۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 3 : 1417، رقم : 3691
2. مسلم، الصحيح، 4 : 1854، رقم : 2382
3. ترمذي، الجامع الصحيح، 6 : 41، ابواب المناقب، رقم : 3660
4. ابن حبان، 15 : 277، رقم : 6861

79. عن المسور بن مخرمة و مروان بن حکم قالا. . . قال : عمر بن الخطّاب : فأ تيت نبيّ اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فقلت : ’’ألست نبيّ اﷲ حقّا؟‘‘ قال : ’’بلٰي‘‘. قلت : ألسنا علي الحقّ وعدوّنا علي الباطل؟ قال : ’’بلٰي‘‘ قلت : ’’فلم نعطي الدّ نيّة في ديننا إذا ؟‘‘ قال : ’’إنّي رسول اﷲ، ولست أعصيه، وهو ناصري‘‘. قلت : ’’أوليس کنت تحدّثنا أنّا سنأ تي البيت فنطوف به؟‘‘ قال : ’’بلٰي، فأ خبرتک انّا نأ تيه العام ؟‘‘. قال : قلت : لا قال : ’’فإنّک آتيه ومطّوّف به‘‘. قال : فأ تيت أبابکر فقلت : ’’يا أبابکر، أليس هذا نبيّ اﷲ حقّا؟‘‘ قال : بلٰي قلت : ’’ألسنا علي الحقّ وعدوّنا علي الباطل؟‘‘ قال : بلٰي قلت : ’’فلم نعطي الدّنيّة في ديننا اذا؟‘‘ قال : ’’أيّها الرّجل، إنّه لرسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، وليس يعصي ربّه، وهو ناصره، فاستمسک بغرزه، فواﷲ إنّه علي الحقّ‘‘. قلت : ’’أليس کان يحدّثنا أنّا سناتي البيت و نطوف به؟‘‘ قال : بلٰي أفأخبرک أنّک تاتيه العام؟ قلت : لا، قال : ’’فإ نّک آتيه ومطّوّف به.‘‘

’’حضرت مسور بن مخرمہ اور مروان بن حکم سے مروی صلح حدیبیہ کے بارے طویل حدیث میں ہے حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہِ اقدس میں حاضر ہوا اور عرض کی : ’’کیا آپ سچے نبی نہیں ہیں؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’میں سچا نبی ہوں۔‘‘ میں نے عرض کی، ’’کیا ہم حق پر اور ہمارے دشمن باطل پر نہیں ہیں؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’کیوں نہیں!‘‘ میں نے عرض کی : ’’پھر ہمیں اپنے دینی معاملات میں دبنے کی کیا ضرورت ہے؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔ ’’میں اﷲ کا رسول ہوں اس کے حکم سے سرِمو انحراف نہیں کرتا ہوں اور وہ میرا مددگار ہے۔‘‘ میں نے عرض کی ’’کیا آپ ہمیں ارشاد نہیں فرمایا کرتے تھے کہ ہم عنقریب بیت اﷲ شریف حاضری دیں گے اور اس کا طواف کریں گے۔‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’ہاں! مگر کیا میں نے تمہیں اس سال بیت اﷲ شریف حاضری دینے کی خبر دی تھی؟‘‘ حضرت فاروقِ اعظم رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں، میں نے عرض کی، نہیں! پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’تم ضرور خانہ کعبہ جاؤ گے اور اس کا طواف کرو گے۔‘‘ حضرت فاروقِ اعظم رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ اس کے بعد میں حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے پاس آیا اور کہا : ’’اے ابوبکر! کیا یہ اﷲ رب العزت کے سچے نبی نہیں ہیں؟‘‘ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : ’’یقیناً ہیں‘‘۔ میں نے عرض کی، ’’کیا ہم حق پر اور ہمارا دشمن باطل پر نہیں ہے؟‘‘ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا ’’ایسا ہی ہے‘‘۔ میں نے عرض کی ’’پھر ہمیں اپنے دینی معاملات میں (کفار سے) دبنے کی کیا ضرورت ہے؟‘‘ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا۔ ’’ارے اﷲ کے بندے، وہ اﷲ رب العزت کے رسولِ مکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہیں اور اپنے رب کریم کی نافرمانی نہیں کرتے اور وہ اﷲ اپنے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ناصر و مددگار ہے۔ پس تم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اطاعت پرمضبوطی سے قائم رہو کیونکہ اﷲ رب العزت کی قسم! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حق پر ہیں‘‘۔ میں نے عرض کی ’’کیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہمیں ارشاد فرمایا نہیں کرتے تھے کہ ہم بیت اﷲ شریف حاضری دیں گے اور اس کا طوا ف کریں گے‘‘۔ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : ہاں! حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے کہا کیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے تمہیں اس سال بیت اﷲ حاضری دینے کی خبر ارشاد فرمائی تھی؟ میں نے عرض کی’’نہیں‘‘۔ صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ نے ارشاد فرمایا : ’’یقین رکھو، تم بیت اﷲ شریف حاضری دو گے اور اس کا طواف بھی کرو گے۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 2 : 978، کتاب الشروط، رقم : 2583
2. بخاري، الصحيح، 4 : 1832، رقم : 4563

نوٹ :

صلح حدیبیہ کے موقع پر حضور رحمتِ عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حکمت و فراست کے اعتبار سے جو فیصلہ فرمایا اس کو صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ نے سمجھ لیا اور آپ فاروقِ اعظم رضی اللہ عنہ کو جو جوابات حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمائے بعینہ وہی جوابات حضرت صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ نے بھی فاروقِ اعظم رضی اللہ عنہ کو ارشاد فرمائے۔ جس سے واضح ہوتا ہے کہ آپ رضی اللہ عنہ حکمتِ نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے امین ہیں۔

فصل : 15

اشد توقيرا و تعزيرا لرسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم

(صدیق اکبر رضی اللہ عنہ. . . فنائے ادبِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

80. عن سهل بن سعد السّاعديّ : أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ذهب إلي بني عمر و بن عوف ليصلح بينهم، فحانت الصّلاة، فجاء المؤذّن إلي أبي بکر، فقال : أتصلّي للنّاس فأقيم؟ قا ل : نعم، فصلّٰي أبوبکر فجآء رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم والنّاس في الصّلاة، فتخلّ رضي الله عنه حتّي وقف في الصّفّ، فصفّق النّاس، وکان أبوبکر لا يلتفت في صلا ته فلمّا أکثر النّاس التّصفيق إلتفت فرأي رسو ل اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، فأشار إليه رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’أن امکث مکانک‘‘ فرفع أبوبکر رضي الله عنه يديه، فحمد اﷲ علٰي ما أمره به رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم من ذٰلک، ثمّ استأخر أبوبکر رضي الله عنه حتّي استوٰي في الصّفّ، و تقدّم رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فصلّي، فلمّا انصرف قال : ’’ يا أبابکر، ما منعک أن تثبت إذ أمرتک‘‘. فقال أبوبکر : ما کان لإبن أبي قحافة أن يصلّي بين يدي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم‘‘

’’حضرت سھل بن سعد ساعدی روایت فرماتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بنی عمر و بن عوف کے ہاں تشریف لے گئے تاکہ اُن (کے کسی تنازعہ) کی صُلح کرا دیں۔ اتنے میں نماز کا وقت ہو گیا۔ مؤذن، حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کے پاس آئے اور کہا : اگر آپ رضی اللہ عنہ لوگوں کو نماز پڑھا دیں تو میں اقامت کہہ دوں؟ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا ہاں! پس حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نماز پڑھانے لگے۔ تو اسی دوران رسول اکرم واپس تشریف لے آئے اور لوگ ابھی نماز میں تھے۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم صفوں میں داخل ہوتے ہوئے پہلی صف میں جا کھڑے ہو ئے۔ لوگوں نے تالی کی آواز سے آپ رضی اللہ عنہ کو متوجہ کرنا چاہا۔ مگر چونکہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ حالتِ نماز میں اِدھر اُدھر متوجہ نہ ہوتے تھے اس لئے اِدھر متوجہ نہ ہوئے۔ پھر جب لوگوں نے بہت زور سے تالیاں بجائیں تو آپ رضی اللہ عنہ متوجہ ہوئے اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا۔ آقا علیہ الصلاۃ والسلام نے انہیں (ابو بکر صدیق کو) اشارہ فرمایا کہ اپنی جگہ پر کھڑے رہو۔

حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے اپنے دونوں ہاتھ بلند کئے اور اﷲ رب العزت کی حمد بیان کی اور اﷲ کے رسولِ مکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے انہیں نماز پڑھاتے رہنے کا جو حکم فرمایا اس پر اﷲ کا شکر ادا کیا۔ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ پیچھے ہٹے اور صف میں مل گئے۔ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم آگے تشریف لائے اور نماز پڑھائی۔ جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز سے فارغ ہوئے تو ادھر متوجہ ہوئے اور ارشاد فرمایا : ’’اے ابو بکر! جب میں نے تمہیں حکم دیا تھا تو کس چیز نے تمہیں اپنی جگہ پر قائم رہنے سے منع کیا۔‘‘ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے عرض کی۔ ’’ابو قحافہ کے بیٹے کی کیا مجال کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے آگے کھڑا ہو کر نماز پڑھائے‘‘۔

1. بخاري، الصحيح، 1، 242، کتاب الجماعة والامامة، رقم : 652
2. مسلم، الصحيح، 1 : 316، کتاب الصلاة، رقم : 421
3. نسائي، السنن، 2 : 82، ، کتاب الامامة، رقم : 793
4. نسائي، السنن، 3 : ، 3، کتاب السهو، رقم : 1183
5. ابو داؤد، السنن، 1 : 247، کتاب الصلٰوة، رقم : 940
6. ابن حبان، الصحيح، 6 : 35، رقم : 2260
7. مالک، المؤطا، 1 : 163، رقم : 390
8. احمدبن حنبل، المسند5 : 332، رقم : 22867
9. ابن خزيمه، الصحيح، 3 : 58، رقم : 1623

81. عن طارق عن أبي بکر رضي الله عنه قال : لمّا نُزّلت علي النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم : (إنّ الّذين يغضّون أصواتهم عند رسول اﷲ أولٰئک الّذين امتحن اﷲ قلوبهم للتّقوٰي (الحجرٰت : 3) ) قال أبوبکر رضي الله عنه : ’’فاٰ ليت علٰي نفسي أن لّا أکلّم رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم إلاّ کأخي السّرار.‘‘

’’حضرت طارق حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا : جب سورۃ الحجرات کی آیت ’’بیشک وہ لوگ جو اپنی آوازوں کو رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سامنے پست رکھتے ہیں، یہی وہ لوگ ہیں جن کے دلوں کو اﷲ رب العزت نے تقویٰ کے لئے مختص کر لیا ہے‘‘ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر نازل فرمائی گئی تو حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں، ’’میں نے قسم کھائی کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ کلام صرف سرگوشی کی صورت میں کروں گا، جس طرح رازدان سرگوشی کرتے ہیں۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 78، کتاب معرفة الصحابه، رقم : 4449
2. عسقلاني، المطالب العاليه، 4 : 33، رقم : 3887
3. مروزي، تعظيم قدر الصلاة، 2 : 228، رقم : 729
4. محب طبري، الرياض النضرة، 2 : 138

82. عن أنس بن مالک قال ثم قبض رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم و هو بن ثلاث و ستين و أبوبکر و هو بن ثلاث و ستين.

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وصال ہوا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی عمر مبارک تریسٹھ سال (63) سال تھی اور حضرت ابوبکر صدیق کا وصال ہوا تو ان کی عمر بھی (حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی متابعت میں) تریسٹھ سال تھی۔

مسلم، الصحيح، 4 : 1825، رقم : 2348

83. عن عائشة رضي اﷲ عنها قالت : تذاکر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم وأبوبکر رضي الله عنه ميلادهما عندي. فکان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم أکبر من أبي بکر، فتوفّي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم وهو ابن ثلاث وّ ستّين وتوفّي أبوبکر رضي الله عنه وهو ابن ثلاث وّ ستّين لسنتين ونصف الّتي عاش بعد رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم.

’’امّ المؤمنین حضرت عائشہ صِدِّیقہ رضی اﷲ عنھا سے روایت ہے آپ نے فرمایا۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کا اپنے یومِ ولادت کے حوالے سے میرے پاس بیٹھے ہوئے مذاکرہ ہوا۔ تو حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم، حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے عمر کے اعتبار سے بڑے تھے۔ پھر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وصال ہوا تو آپ رضی اللہ عنہ کی عمر مبارک 63 برس تھی۔ اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کا وصال ہوا تو ان کی عمر بھی تریسٹھ (63) برس تھی۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اڑھائی سال ہی عمر مبارک میں بڑے تھے جو حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے وصال کے بعد دنیا میں حیات رہے۔‘‘

1. طبراني، المعجم الکبير، 1 : 58، رقم : 28

2۔ ہیثمی نے مجمع الزوائد، (9 : 60)، میں کہا ہے کہ اسے طبرانی نے روایت کیا ہے اور اس کی اسناد حسن ہے۔

84. عن جرير ابن عبد اﷲ البجليّ قال : کنت مع معاوية بن أبي سفيان رضي اﷲ عنهم فسمعته يقول : ’’قبض النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم وهو ابن ثلا ث وّ ستّين سنة و قبض أبوبکر رضي الله عنه وهو بن ثلا ث وّ ستّين.‘‘

حضرت جریر بن عبد اﷲ البجلی سے روایت ہے۔ فرماتے ہیں : میں حضرت معاویہ بن ابو سفیان رضی اللہ عنہ کے ساتھ تھا میں نے انہیں فرماتے ہوئے سنا : ’’حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وصالِ مبارک ہوا تو آپ کی عمر مبارک تریسٹھ (63) برس تھی اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کا وصال ہوا تو ان کی عمر بھی تریسٹھ (63) برس تھی۔‘‘

طبراني، المعجم الکبير، 1 : 58، رقم : 29

فصل : 16

اشد حبّا للنبي المصطفي صلي الله عليه وآله وسلم

(صدیق اکبر رضی اللہ عنہ. . . کشتۂ عشقِ مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

85. عن أبي سعيد الخد ريّ رضي الله عنه قال : خطب رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم النّاس وقال : ’’إنّ اﷲ خيّر عبدا بين الدّنيا وبين ما عند ه، فاختار ذٰلک العبد ما عند اﷲ‘‘. قال : فبکٰي أبوبکر. فعجبنا لبکائه : أن يّخبر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم عن عبد خيّر، فکان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم هو المخيّر، وکان أبوبکر أعلمنا‘‘.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خطبہ ارشاد فرمایا : ’’بیشک اﷲ تعالیٰ نے ایک بندے کو دنیا اور جو اﷲ کے پاس ہے کے درمیان اختیار دیا ہے۔ پس اس بندے نے اس چیز کو اختیار کیا جو اﷲ کے پاس ہے‘‘۔ حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں، اس پر ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ رو پڑے۔ ہم نے ان کے رونے پر تعجب کیا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تو ایک بندے کا حال بیان فرما رہے ہیں کہ اس کو اختیار دیا گیا ہے۔ پس وہ (بندہ) جس کو اختیار دیا گیا تھا خود تاجدار کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تھے اور ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ ہم سب سے زیادہ علم رکھنے والے تھے (جو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مراد سمجھ گئے)۔‘‘

1. بخاري، الصحيح 3 : 1337، کتاب المناقب رقم : 3454
2. بخاري، الصحيح، 1 : 177، رقم : 454
3. مسلم، الصحيح، 4 : 1854، کتاب فضا ئل الصحابة، رقم : 2382
4. ترمذي، السنن، 5 : 608، رقم : 3660
5. ابن حبان، الصحيح، 14 : 559 رقم : 6594
6. ابن حبان، الصحيح، 15 : 277، رقم : 2861
7. احمدبن حنبل، المسند3 : 18، رقم : 11150
8. ابن سعد، الطبقات الکبرٰي، 2 : 227
9. خطيب بغدادي، تاريخ بغداد، 13 : 63، رقم : 7045

86. عن ابن أبي المعلّٰي، عن أبيه، أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم خطب يوما فقال : ’’إنّ رجلا خيّره ربّه بين أن يّعيش في الدّنيا ماشاء أن يّعيش ويأکل في الدّنيا ماشاء أن يأکل وبين لقاء ربّه، فاختار لقاء ربّه‘‘. قال : فبکٰي أبوبکر، فقال أصحاب النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم : ألا تعجبون من هذا الشّيخ إذ ذکر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم رجلا صالحا خيّره ربّه بين الدّنيا وبين لقاء ربّه فاختار لقاء ربّه. قال : فکان أبوبکر أعلمهم بما قال رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، فقال أبوبکر : ’’بل نفديک باٰ بائنا وأموالنا.‘‘

حضرت ابن ابی معلی اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک دن خطبہ ارشاد فرمایا : اﷲ تعالیٰ نے ایک شخص کو اختیار دیا کہ جب تک چاہے دنیا میں رہ کر جو چاہے کھائے یا اپنے رب کے پاس آجائے، تو اس بندے نے اپنے رب سے جا ملنے کو پسند کیا‘‘۔ (یہ سن کر) حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ رو پڑے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنھم نے (ایک دوسرے سے) کہا تمہیں اس شیخ پر تعجب نہیں ہوتا کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک نیک آدمی کا ذکر فرمایا کہ اﷲ تعالیٰ نے اسے دنیا میں رہنے یا اپنے رب سے ملاقات کرنے کا اختیار دیا تو اس بندے نے اپنے رب کی ملاقات کوترجیح دی۔ راوی فرماتے ہیں، حضرت رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ارشادِ پاک کو حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سب سے زیادہ جاننے والے تھے۔ چنانچہ انہوں نے عرض کیا۔ ’’(یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم !) ہمارے ماں باپ اور مال آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر فدا ہوں۔‘‘

1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 607، ابواب المناقب، رقم : 3659
2. احمد بن حنبل، المسند، 4؛ 211،
3. طبراني، المعجم الکبير، 22 : 328
4. احمد بن حنبل، فضائل الصحابه، 1 : 209، رقم : 234
5. محب طبري، الرياض النضره، 2 : 51

87. عن أبي سعيد الخدريّ، أنّ رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم جلس علي المنبر فقال : ’’إنّ عبدا خيّره اﷲ بين أن يّؤتيه من زهرة الدّنيا ما شاء وبين ما عنده، فاختار ما عنده‘‘. فقال أبوبکر : فديناک يا رسول اﷲ باٰبائنا وأمّهاتنا. قال : فعجبنا! فقال النّاس : أنظروا إلٰي هذا الشّيخ يخبر رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم عن عبد خيّره اﷲ بين أن يّؤتيه من زهرة الدّنيا ما شاء وبين ما عند اﷲ وهو يقول : فديناک باٰ بائنا وأمّهتنا! قال : فکان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم هو المخيّر، وکان أبوبکر هو أعلمنا به.

’’حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منبر پر تشریف فرما ہوئے توارشاد فرمایا : ’’اﷲ تعالیٰ نے ایک بندے کو اختیار دیا کہ یا تو دنیا کی آرائش سے جو چاہے لے لے یا جو کچھ اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے وہ حاصل کرے، تو اس بندے نے اسے پسند کیا جو اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے۔‘‘ (یہ سن کر) حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا۔ یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! ہمارے ماں باپ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر قربان ہوں۔ راوی فرماتے ہیں ہمیں تعجب ہوا، تو لوگوں نے ایک دوسرے سے کہا کہ اس شیخ کی طرف دیکھو !حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تو کسی بندے کے متعلق فرما رہے ہیں کہ اﷲتعالیٰ نے اسے دنیا کی آرائش یا جو اﷲ تعالیٰ کے پاس ہے، ان میں سے ایک کے حصول کا اختیار دیا اور یہ فرما رہے ہیں ہمارے ماں باپ آپ پر فدا ہوں۔ حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ نے فرمایا درحقیقت حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ہی اختیار دیا گیا تھا اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اس بات کو ہم سب سے زیادہ جانتے تھے۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 3 : 1417، رقم : 3691
2. ترمذي، الجامع الصحيح، 6 : 41، ابواب المناقب، رقم : 3660
3. مسلم، الصحيح، 4 : 1854، رقم : 2382
4. ابن حبان، 15 : 277، رقم : 6861
5. ابن عبدالبر، المتهيد، 20 : 112،

88. و في رواية معاوية بن أبي سفيان رضي اﷲ عنهما فلم يلقنها الا أبوبکر فبکي فقال نفديک بآبائنا و امهاتنا و أبنائنا.

’’حضرت معاویہ بن ابی سفیان رضی اﷲ عنھما کی روایت کے الفاظ ہیں : ’’حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کے علاوہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بات کو کوئی نہ سمجھا۔ ابوبکر رضی اللہ عنہ (بات کی تہہ تک پہنچ کر) رونے لگے پھر عرض کیا : ہمارے ماں باپ اور بیٹے آپ پر قربان۔‘‘

1. طبراني، المعجم الاوسط، 7 : 115، رقم : 7017
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 9 : 42

89. عن عروة بن الزبير قال : سألت عبداﷲ بن عمرو عن أ شدّ ما صنع المشرکون برسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، قال : رأيت عقبة بن أبي معيط، جاء إلي النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم وهو يصلّي، فوضع ردائه في عنقه فخنقه به خنقا شديدا، فجاء أبوبکر حتّٰي دفعه عنه فقال أتقتلون رجلا أن يّقول ربّي اﷲ وقد جآء کم بالبيّنات من رّبّکم.

’’عروہ بن زبیر سے مروی ہے کہ میں نے حضرت عبد اﷲ بن عمر رضی اﷲ عنھما سے سوال کیا کہ ’’مشرکین نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ سب سے شدید اور سخت جو سلوک کیا وہ کیا تھا؟‘‘ انہوں نے جواب دیا کہ ’’میں نے دیکھا عقبہ بن ابی معیط حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس آیا جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز پڑھ رہے تھے اس نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مبارک گردن میں چادر ڈال کر سختی کے ساتھ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا گلا گھونٹنا شروع کیا۔ اِس دوران حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ آ گئے اور پوری قوت سے اس (بدبخت) کو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے دور ہٹایا۔ پھر آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا۔ کیا تم اس شخص کو قتل کرنا چاہتے ہو کہ جو یہ اعلان کرتے ہیں کہ میرا رب اﷲ ہے اور حالانکہ وہ تمہارے پاس اپنے رب کی طرف سے روشن نشانیاں لے کر تشریف لائے ہیں۔‘‘

1. بخاري، الصحيح، 3 : 1345، کتاب المناقب، رقم : 3415
2. بخاري، الصحيح، 3 : 1400، رقم : 3643
3. بخاري، الصحيح، 4 : 1814، رقم : 4537
4. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 204، رقم : 6908
5. ابن جوزي، صفة الصوة، 1 : 107، رقم :
6. نووي، تهذيب الاسماء، 2 : 477
7. محب طبري، الرياض النضرة، 1 : 434
8. قرطبي، الجامع لاحکام القرآن، 15 : 308

90. عن أنس رضي الله عنه قال : لقد ضربوا رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم حتّٰي غشي عليه فقام أبو بکر رضي الله عنه فجعل ينادي يقول : ويلکم أتقتلون رجلا أن يّقول ربّي اﷲ؟ قالوا : من هذا؟ قالوا : هذا ابن أبي قحافة المجنون.

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ کفار و مشرکین نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو مارا پیٹا یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر غشی طاری ہو گئی۔ سیدنا حضرت ’’ابوبکر رضی اللہ عنہ کھڑے ہوئے اور بلند آواز سے کہنے لگے۔ ’’تم تباہ و برباد ہو جاؤ، کیا تم ایک (معزز) شخص کو اِس لئے قتل کرنا چاہتے ہو کہ وہ کہتے ہیں میرا رب اﷲ ہے؟‘‘ ان ظالموں نے کہا، یہ کون ہے؟ (کفار و مشرکین میں سے کچھ) لوگوں نے کہا، ’’یہ ابو قحافہ کا بیٹا ہے جو (محبتِ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں) مجنوں (پاگل) ہے۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 70، رقم : 4424
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 6 : 17
3. مقدسي، الاحاديث المختاره، 6 : 221

91. عن عائشة قالت لمّا اجتمع أصحاب النّبيّ و کانوا ثمانية و ثلاثين رجلا ألحّ أبوبکر علٰي رسول اﷲ في الظّهور فقال يا أبابکر انّا قليل فلم يزل أبوبکر يلحّ حتّٰي ظهر رسول اﷲ و تفرّق المسلمون في نواحي المسجد کلّ رجل في عشيرته و قام أبوبکر في النّاس خطيبا و رسول اﷲ جالس فکان اوّل خطيب دعا إلٰي اﷲ و إلٰي رسوله و ثار المشرکون علٰي أبي بکر و علٰي المسلمين فضربوا في نواحي المسجد ضربا شديدا و وطئ أبوبکر و ضرب ضربا شديدا ودنا منه الفاسق عتبة بن ربيعة فجعل يضربه بنعلين مخصوفتين و يحرفهما لوجهه و نزا علٰي بطن أبي بکر حتّٰي ما يعرف وجهه من أنفه و جاء بنو تيم يتعادون فأجّلت المشرکين عن أبي بکر و حملت بنو تيم أبابکر في ثوب حتّٰي أدخلوه منزله ولا يشکّون في موته ثمّ رجعت بنو تيم فدخلوا المسجد و قالوا واﷲ لئن مات أبوبکر لنقتلن عتبة بن ربيعة فرجعوا إلي أبي بکر فجعل أبو قحافة و بنو تيم يکلمون أبابکر حتي أجاب فتکلم آخر النهار فقال ما فعل رسول اﷲ فمسوا منه بالسنتهم و عذلوه ثم قاموا و قالوا لأمه أم الخير انظري ان تطعميه شيئا او تسقيه إياه فلما خلت به ألحت عليه و جعل يقول ما فعل رسول اﷲ فقالت واﷲ مالي علم بصاحبک فقال إذهبي الي ام جميل بنت الخطاب فاسأليها عنه فخرجت حتي جاء ت أم جميل فقالت إن أبابکر يسألک عن محمد بن عبداﷲ فقالت ما أعرف أبابکر ولا محمد بن عبداﷲ وإن کنت تحبين ان أذهب معک إلي ابنک قالت نعم فمضت معها حتي وجدت أبابکر صريعا دنفا فدنت أم جميل و أعلنت بالصياح و قالت واﷲ إن قوما نالوا هذا منک لأهل فسق و کفر و إني لأرجوا أن ينتقم اﷲ لک منهم قال فما فعل رسول اﷲ قالت هذه أمک تسمع قال فلا شيء عليک منها قالت سالم صالح قال اين هو قالت في دار ابن الأرقم قال فان ﷲ علي أن لا أذوق طعاما ولا أشرب شرابا أو آتي رسول اﷲ فامهلتا حتي اذا هدأت الرجل وسکن الناس خرجتا به يتکيء عليهما حتي أدخلتاه علي رسول اﷲ قال فأکب عليه رسول اﷲ فقبله و أکب عليه المسلمون و رق له رسول اﷲ رقة شديدة فقال أبوبکر بأبي و أمي يا رسول اﷲ ليس بي بأس إلا ما نال الفاسق من وجهي و هذه أمي برة بولدها وانت مبارک فادعها الي اﷲ و ادع اﷲ لها عسي اﷲ أن يستنقذها بک من النار قال فدعا لها رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم و دعاها الي اﷲ فأسلمت.

’’اُمّ المؤمنین عائشۃ صدیقہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے کہ جب حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابہ کی تعداد اڑتیس (38) ہوگئی تو ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اعلان و اظہارِ اسلام کے لئے اجازت طلب کی، حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اے ابوبکر! ہم ابھی تعداد میں کم ہیں مگر ابوبکر رضی اللہ عنہ کے اصرار پر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اظہارِ اسلام کی اجازت مرحمت فرما دی۔ مسلمان مسجد حرام کے اردگرد پھیل گئے، ہر شخص اپنے خاندان کو اسلام کی دعوت پیش کرنے لگا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ لوگوں کے سامنے خطاب کے لیے کھڑے ہو گئے جبکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پاس تشریف فرما تھے۔ چنانچہ آپ پہلے خطیب تھے کہ جنہوں نے اعلانیہ طور پر لوگوں کو اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرف بلایا۔ مشرکین حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور دیگر مسلمانوں پر ٹوٹ پڑے اور انہوں نے بیت اللہ کے اردگرد مسلمانوں کو شدید زود کوب کیا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کو بری طرح زدوکوب کیا گیا اور پاؤں سے روندا گیا۔ عتبہ بن ربیعہ فاسق شخص آپ رضی اللہ عنہ کے نزدیک ہوا اور اپنے جوتے آپ کے چہرے پر مارنے لگا اور آپ کے پیٹ پر چڑھ کر روندنے لگا یہانتک کہ آپ کا چہرہ پہچانا نہیں جاتا تھا۔ (آپ کے قبیلہ) بنو تیم کے لوگ دوڑتے ہوئے آئے اور مشرکین کو حضرت ابوبکر سے دور کیا۔ وہ آپ کو کپڑے میں ڈال کر آپ کے گھر لے گئے، انہیں آپ کے زندہ رہنے کی توقع نہ تھی اس لئے انہوں نے بیت اللہ میں آ کر اعلان کیا کہ اگر ابوبکر زندہ نہ رہے تو ہم ان کے بدلے میں عتبہ بن ربیعہ کو ضرور قتل کریں گے۔ خاندان کے لوگ آپ کے پاس واپس آگئے، آپ کے والد ابو قحافہ اور بنو تیم مسلسل آپ سے گفتگو کرنے کی کوشش کرتے رہے۔ بالآخر دن کے آخری حصے میں آپ نے ان کی بات کا جواب دیا۔ پہلا جملہ یہ کہا ’’رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کس حال میں ہیں؟ تمام خاندان ناراض ہو کر چلا گیا۔ لوگوں نے آپ کی والدہ ام الخیر کو آپ کو کچھ کھلانے پلانے کے لئے کہا۔

آپ کی والدہ جب کچھ کھانے پینے کے لئے کہتیں تو آپ کہنے لگتے : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کس حال میں ہیں؟ یہ حالت دیکھ کر آپ کی والدہ کہنے لگیں اللہ کی قسم مجھے آپ کے دوست کی خبر نہیں کہ وہ کس حال میں ہیں۔ آپ نے کہا آپ ام جمیل بنت خطاب کے پاس چلی جائیں اور ان سے حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بارے میں دریافت کریں۔ وہ ام جمیل بنت خطاب کے پاس آئیں اور کہا کہ ابوبکر آپ سے محمد بن عبداللہ کے بارے میں پوچھ رہا ہے (چونکہ انہیں بھی اسلام خفیہ رکھنے کا حکم تھا اس لئے) انہوں نے کہا میں ابوبکر اور ان کے دوست محمد بن عبداللہ کو نہیں جانتی ہاں اگر آپ چاہتی ہیں تو میں آپ کے ساتھ آپ کے بیٹے کے پاس چلی جاتی ہوں حضرت ام جمیل آپ کی والدہ کے ہمراہ جب حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کے پاس پہنچیں تو آپ کو زخمی اور نڈھال دیکھ کر بے ساختہ پکار اٹھیں : خدا کی قسم ان لوگوں نے اہل فسق اور کفر کی خاطر آپ کو یہ اذیت دی ہے مجھے امید ہے کہ اللہ تعالیٰ ان سے آپ کا بدلہ ضرور لے گا۔ آپ رضی اللہ عنہ نے پوچھا : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کس حال میں ہیں؟ انہوں نے اشارہ کیا کہ آپ کی والدہ سن رہی ہیں۔ آپ نے فرمایا : فکر نہ کرو بلکہ بیان کرو۔ انہوں نے کہا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم محفوظ ہیں اور خیریت سے ہیں۔ آپ رضی اللہ عنہ نے پوچھا : حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس وقت کہاں ہیں؟ انہوں نے جواب دیا دار ارقم میں تشریف فرما ہیں۔ خدا کی قسم میں اس وقت تک نہ کچھ کھاؤں گا اور نہ پیؤں گا جب تک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت اقدس میں نہ پہنچ جاؤں۔ جب سب لوگ چلے گئے تو یہ دونوں خواتین آپ کو سہارا دے کر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں لے گئیں۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے اس عاشق زار کو آگے بڑھ کر تھام لیا اور اس کے بوسے لینے لگے۔ تمام مسلمان بھی (فرطِ جذبات میں) آپ کی طرف لپکے۔ آپ کو زخمی دیکھ کر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر بڑی رقت طاری ہوئی۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا : حضور میں ٹھیک ہوں، میری والدہ حاضر خدمت ہیں۔ اپنی اولاد کے ساتھ اچھا برتاؤ کرنے والی ہیں۔ آپ مبارک شخصیت ہیں، ان کے لئے دعا فرمائیں اللہ تعالیٰ انہیں دولت ایمان سے نوازے۔ امید واثق ہے کہ اللہ تعالیٰ آپ کے وسیلہ سے انہیں دوزخ کی آگ سے محفوظ فرمائے گا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے دعا فرمائی اور وہ وہیں مشرف بہ اسلام ہو گئیں۔

1. ابن کثير، البدايه والنهاية، 3 : 30
2. حلبي، السيرة الحلبيه، 1 : 476
3. محب طبري، الرياض النضره، 1 : 398
4. خيثمه، من حديث خيثمة، 1 : 125
5. عسقلاني، الاصابه، 8 : 200
6. ديار بکري، تاريخ الخمس، 1 : 294

92. عن البراء بن عازب قال : قال أبوبکر رضي الله عنه : فارتحلنا والقوم يطلبوننا فلم يدرکنا أحد منهم إلاسراقة بن مالک بن جعثم علي فرس له فقلت يا رسول اﷲ هذا الطلب قد لحقنا فقال لا تحزن إن اﷲ معنا حتي إذا دنا منا فکان بيننا و بينه قدر رمح أو رمحين أوثلاثة قال قلت يا رسول اﷲ هذا الطلب قد لحقنا و بکيت قال لم تبکي قال قلت أما واﷲ ما علي نفسي أبکي ولکن أبکي عليک قال فدعا عليه رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم فقال اللهم اکفناه بما شئت فساخت قوائم فرسه في أرض صلد. . .

’’حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ ابوبکر رضی اللہ عنہ نے بیان فرمایا : ہم ہجرت پر روانہ ہوئے تو لوگ ہمارے تعاقب میں تھے۔ ان میں سے صرف سراقہ بن مالک اپنے گھوڑے پر سوار ہمارے قریب پہنچ سکا۔ میں نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! یہ تعاقب کرتے ہوئے ہمارے قریب آپہنچا ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : غم نہ کرو بے شک اﷲ تعالیٰ ہمارے ساتھ ہے۔ وہ ہمارے اس قدر نزدیک پہنچ گیا کہ ہمارے اور اس کے درمیان ایک دو یا تین نیزوں کے برابر فاصلہ رہ گیا۔ ابوبکر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں میں نے عرض کیا یا رسول اﷲ! یہ ہم تک آ پہنچا ہے اور ساتھ ہی میں رونے لگا۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرمایا : تم کیوں روتے ہو میں نے عرض کیا۔ بخدا! میں اپنی جان کو خطرے میں دیکھ کر نہیں رو رہا بلکہ آپ کی سلامتی کو خطرے میں دیکھ کر رو رہا ہوں۔ انہوں (ابوبکر رضی اللہ عنہ) نے بیان کیا۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس کے لئے بد دعا کرتے ہوئے کہا : اے اﷲ جس طرح آپ پسند کریں ہمارے لئے اس کے مقابلے میں کافی ہو جائے اس بد دعا کے نتیجے میں اس کے گھوڑے کی ٹانگیں سخت زمین میں دھنس گئیں۔

1. احمد بن حنبل، المسند، 1 : 2، رقم : 3
2. ابن حبان، الصحيح، 14 : 189، رقم : 6281
3. ابن حبان، الصحيح، 15 : 289، رقم : 6870
4. ابن ابي شيبه، المصنف، 7 : 343، رقم : 36610
5. بزار، المسند، 1 : 119
6. بزار، المسند، 1 : 211
7. ابن جوزي، صفة الصفوه، 1 : 36

93. عن أنس، قال : لمّا کان ليلة الغار قال أبوبکر : ’’يا رسول اﷲ دعني أدخل قبلک فإن کان حية او شيء کانت لي قبلک‘‘ قال صلي الله عليه وآله وسلم : ’’أدخل‘‘ فدخل أبوبکر، فجعل يلتمس بيده، کلّما رأٰي جحرا قال بثوبه فشقّه ثمّ ألقمه الجحر، حتّي فعل ذٰلک بثوبه أجمع. قال : فبقي جحر فوضع عقبه عليه ثمّ أدخل رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم. فلمّا أصبح قال له النّبيّ صلي الله عليه وآله وسلم : ’’فأين ثوبک يا أبا بکر؟‘‘ فأخبره بالّذي صنع، فرفع رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يديه وقال : ’’أللّٰهمّ اجعل أبا بکر معي في درجتي يوم القيامة‘‘. فأوحي اﷲ عزّوجلّ إليه أنّ اﷲ تعالٰي قد استجاب لک.

’’حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا : جب غار کی رات تھی تو ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے عرض کی : ’’یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! مجھے اجازت عنایت فرمائیے کہ میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے غار میں داخل ہوں تاکہ اگر کوئی سانپ یا کوئی اور چیز ہو تو وہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بجائے مجھے تکلیف پہنچائے‘‘۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : ’’داخل ہو جاؤ‘‘۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ داخل ہوئے اور اپنے ہاتھ سے ساری جگہ کی تلاشی لینے لگے۔ جب بھی کوئی سوراخ دیکھتے تو اپنے لباس کو پھاڑ کر سوراخ کو بند کر دیتے۔ یہاں تک کہ اپنے تمام لباس کے ساتھ یہی کچھ کیا۔ راوی کہتے ہیں کہ پھر بھی ایک سوراخ بچ گیا تو انہوں نے اپنی ایڑی کو اس سوراخ پر رکھ دیا اور پھر رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اندر تشریف لانے کی گزارش کی۔ جب صبح ہوئی تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے کہا : ’’اے ابوبکر ! تمھارا لباس کہاں ہے؟‘‘ تو انہوں نے جو کچھ کیا تھا اس کے بارے بتا دیا۔ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھ اٹھائے اور دعا کی : ’’اے میرے اﷲ! ابوبکر رضی اللہ عنہ کو قیامت کے دن میرے ساتھ میرے درجہ میں رکھنا‘‘۔ اﷲ رب العزت نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرف وحی فرمائی کہ اس نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی دعا کو قبول فرما لیا ہے۔‘‘

1. ابو نعيم، حلية الاولياء، 1 : 33
2. ابن جوزي، صفة الصفوة، 1 : 240
3. محب طبري، الرياض النضرة، 1 : 451
4. محب طبري، الرياض النضرة، 1 : 105

94. عن علي رضي الله عنه انه قال لجمع من الصحابة اخبروني عن اشجع الناس قالوا انت قال اشجع الناس ابو بکر لما کان يوم بدر جعلنا لرسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم عريشا فقلنا من مع رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم اي من يکون معه لئلا يهوي اليه احد من المشرکين فواﷲ ما دنا منا أحد إلا ابوبکر شاهرا بالسيف علي رأس رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم لا يهوي اليه احد الا اهوي اليه.

حضر ت علی المرتضیٰ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے ایک مرتبہ صحابہ کرام رضی اللہ عنھم سے دریافت کیا کہ لوگوں میں سب سے بہادر کون ہے؟ انہوں نے کہا کہ آپ ہیں۔ آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : لوگوں میں سب سے بہادر ابوبکر رضی اللہ عنہ ہیں۔ کیونکہ غزوۂ بدر کے دن جب ہم نے حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لئے ایک عریش (چھپر) تیار کیا تو ہم نے کہا کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ کون رہے گا تاکہ کوئی مشرک آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرف نہ بڑھ سکے۔ بخدا ہم میں سے کوئی آگے نہ بڑھا سوائے ابوبکر رضی اللہ عنہ کے وہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس تلوار سونت کر اس مستعدی سے کھڑے ہوئے کہ جونہی کوئی دشمن ادھر کا رخ کرتا آپ رضی اللہ عنہ اس پر جھپٹ پڑتے۔

حلبي، السيرة الحلبيه، 2 : 334

95. عن سالم ابن عبد اﷲ عن أبيه قال : ’’کان سبب موت أبي بکر رضي الله عنه موت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم ما زال جسمه يجري حتّٰي مات‘‘.

’’حضرت سالم بن عبداﷲ اپنے والد حضرت عبد اﷲ بن عمر رضی اﷲ عنھما سے روایت کرتے ہیں کہ ’’حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی موت کا سبب حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وصال فرمانا تھا۔ (اس فراق حبیب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے غم میں) آپ رضی اللہ عنہ کا جسم کمزور ہوتا گیا یہاں تک کہ آپ رضی اللہ عنہ کا وصال ہو گیا۔‘‘

1. حاکم، المستدرک، 3 : 66، کتاب معرفة الصحابه، رقم : 4410
2. ابن جوزي، صفة الصفوه، 1 : 263

96. عن أبي هريره رضي الله عنه قال سمعت أبا بکر الصديق رضي الله عنه علي هذا المنبر يقول : سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم في هذا اليوم من عام الأول ثم استعبر أبوبکر و بکي ثم قال سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول لم تؤتوا شيئا بعد کلمة الإخلاص مثل العافية فاسئلوا اﷲ العافية.

’’حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کو اس منبر پر فرماتے ہوئے سنا : میں نے گزشتہ سال اسی دن حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا پھر ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ زار و قطار رونے لگے۔ پھر فرمایا : میں نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : کلمۂ اخلاص کے بعد تمہیں عافیت جیسی کوئی نعمت عطا نہیں کی گئی۔ پس تم اﷲ تعالیٰ سے عافیت کا سوال کرو۔‘‘

1. احمد بن حنبل، المسند، 1 : 4، رقم : 10
2. ابن حبان، الصحيح، 3 : 230، رقم : 950
3. مقدسي، الاحاديث المختارة، 1 : 111، 110، رقم : 27، 28
4. بيهقي، السنن الکبريٰ، 6 : 220، رقم : 10718
5. بيهقي، شعب الايمان، 7 : 237رقم : 10146
6. نسائي، عمل اليوم والليلة، 1 : 502 رقم : 882

Copyrights © 2019 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved