ہدایۃ الامۃ علی منہاج القرآن والسنۃ - الجزء الاول

نماز وتر کی فضیلت

فَصْلٌ فِي فَضْلِ صَلَاةِ الْوِتْرِ

{نمازِ وتر کی فضیلت}

1۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه قَالَ : أَوْصَانِي خَلِيْلِي بِثَـلَاثٍ لَا أَدَعُهُنَّ حَتَّی أَمُوْتَ : صَوْمِ ثَـلَاثَةِ أَيَّامٍ مِنْ کُلِّ شَهْرٍ، وَصَلَاةِ الضُّحَی، وَنَوْمٍ عَلَی وِتْرٍ۔ مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔

1 : أخرجه البخاري في الصحیح، أبواب : التطوع، باب : صلاۃ الضحی في الحضر، 1 / 395، الرقم : 1124، ومسلم في الصحیح، کتاب : صلاۃ المسافرین وقصرھا، باب : استحباب صلاۃ الضحی، 1 / 499، الرقم : 721، والنسائي في السنن، کتاب : قیام اللیل وتطوع النهار، باب : الحث علی الوتر قبل النوم، 3 / 229، الرقم : 1677۔

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا : مجھے میرے خلیل (رحمت دو عالم ﷺ ) نے تین باتوں کی وصیت فرمائی ہے کہ مرتے دم تک انہیں نہ چھوڑوں : ہر مہینے میں تین روزے رکھنا، نماز چاشت پڑھنا اور سونے سے پہلے وتر پڑھ لینا۔‘‘ یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

2۔ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ أَنَّهُ سَأَلَ عَائِشَةَ رضي الله عنها کَيْفَ کَانَتْ صَلَاةُ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ فِي رَمَضَانَ؟ فَقَالَتْ : مَا کَانَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ یَزِيْدُ فِي رَمَضَانَ وَلَا فِي غَيْرِهِ عَلَی إِحْدَی عَشْرَةَ رَکْعَةً، یُصَلِّي أَرْبَعًا، فَـلَا تَسَلْ عَنْ حُسْنِھِنَّ وَطُوْلِھِنَّ، ثُمَّ یُصَلِّي أَرْبَعًا، فَـلَا تَسَلْ عَنْ حُسْنِھِنَّ وَطُوْلِھِنَّ، ثُمَّ یُصَلِّي ثَـلَاثًا، قَالَتْ عَائِشَةُ : فَقُلْتُ : یَا رَسُوْلَ اللهِ، أَتَنَامُ قَبْلَ أَنْ تُوْتِرَ؟ فَقَالَ : یَا عَائِشَةُ، إِنَّ عَيْنَيَّ تَنَامَانِ وَلَا یَنَامُ قَلْبِي۔ مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔

2 : أخرجه البخاري في کتاب : التھجد، باب : قیام النبي ﷺ باللیل في رمضان وغیره، 1 / 385، الرقم : 1096، ومسلم في الصحیح، کتاب : صلاۃ المسافرین وقصرھا، باب : صلاۃ اللیل وعدد رکعات النبي ﷺ في اللیل، 1 / 509، الرقم : 738، والترمذي في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : ما جاء في وصف صلاۃ النبي ﷺ باللیل، 2 / 302، الرقم : 439، وأبوداود في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : في صلاۃ الیل، 2 / 40، الرقم : 1341۔

’’حضرت ابو سلمہ بن عبد الرحمن رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے دریافت کیا : رمضان المبارک میں حضور نبی اکرم ﷺ کی نماز کیسی ہوتی تھی؟ تو انہوں نے فرمایا : حضور نبی اکرم ﷺ رمضان المبارک میں اور اس کے علاوہ بھی (نمازِ تہجد) گیارہ رکعات سے زیادہ نہیں پڑھتے تھے۔ چار رکعتیں پڑھتے، تم ان کے ادا کرنے کی خوبصورتی اور طوالتِ (قیام) کے متعلق کچھ نہ پوچھو۔ پھر چار رکعتیں پڑھتے، تم ان کے ادا کرنے کی خوبصورتی اور طوالتِ (قیام) کے متعلق کچھ نہ پوچھو۔ پھر تین رکعتیں (نمازِ وتر) پڑھتے۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا : میں نے عرض کیا : یا رسول اللہ! کیا آپ وتر پڑھنے سے پہلے سو جاتے ہیں؟ آپ ﷺ نے فرمایا : اے عائشہ! بے شک میری آنکھیں سوتی ہیں لیکن میرا دل نہیں سوتا۔‘‘ یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

3۔ عَنْ جَابِرٍ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : مَنْ خَافَ عَلَی أَنْ لَا یَقُوْمَ مِنْ آخِرِ اللَّيْلِ فَلْیُوْتِرْ أَوَّلَهُ، وَمَنْ طَمِعَ أَنْ یَقُوْمَ آخِرَهُ فَلْیُوْتِرْ آخِرَ اللَّيْلِ، فَإِنَّ صَلَاةَ آخِرِ اللَّيْلِ مَشْھُوْدَةٌ مَحْضُوْرَةٌ، وَذَلِکَ أَفْضَلُ۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ، وَأَحْمَدُ۔

3 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : صلاۃ المسافرین وقصرھا، باب : من خاف أن لا یقوم من آخر اللیل فلیوتر أوله، 1 / 520، الرقم : 755، وأحمد بن حنبل في المسند، 3 / 300، الرقم : 14245، وأبو یعلی في المسند، 4 / 188، الرقم : 2278، والبیهقي في السنن الکبری، 3 / 35، الرقم : 4615، والمنذري في الترغیب والترهیب، 1 / 229، الرقم : 871۔

’’حضرت جابر رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : جس شخص کو رات کے آخری حصے میں قیام نہ کر سکنے کا اندیشہ ہو، وہ رات کے شروع میں وتر پڑھ لے اور جو شخص رات کے آخری حصے میں قیام کرنے کے متعلق پر امید ہو تو وہ رات کے آخری حصے میں وتر ادا کرے کیونکہ رات کے آخری حصے کی نماز میں فرشتے حاضر ہوتے ہیں اور گواہی دیتے ہیں اور یہ (وقت عبادت کے لیے) افضل ہے۔‘‘

اس حدیث کو امام مسلم اور احمد نے روایت کیا ہے۔

4۔ عَنْ عَلِيٍّ قَالَ : اَلْوِتْرُ لَيْسَ بِحَتْمٍ کَصَلَاتِکُمْ الْمَکْتُوْبَةِ وَلَکِنْ سَنَّ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ وَقَالَ : إِنَّ اللهَ وِتْرٌ، یُحِبُّ الْوِتْرَ، فَأَوْتِرُوْا یَا أَهْلَ الْقُرْآنِ۔

رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ، وَالنَّسَائِيُّ، وَأَبُوْ دَاوُدَ۔ وَقَالَ أَبُوْ عِيْسَی : حَدِيْثُ عَلِيٍّ حَدِيْثٌ حَسَنٌ۔

4 : أخرجه الترمذي في السنن، أبواب : الوتر، باب : ما جاء أن الوتر لیس بحتم، 2 / 316، الرقم : 453، والنسائي في السنن، کتاب : قیام اللیل وتطوع النهار، باب : الأمر بالوتر، 3 / 228، الرقم : 1675، وأبو داود في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : استحباب الوتر، 2 / 61، الرقم : 1416، وابن ماجه في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : ما جاء في الوتر، 1 / 370، الرقم : 1169، وعبد الرزاق عن أبي عبیدۃ في المصنف، 3 / 4، الرقم : 4571۔

’’حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، آپ فرماتے ہیں کہ وتر فرض نمازوں کی طرح فرض نہیں لیکن حضور نبی اکرم ﷺ نے ایک طریقہ جاری فرمایا اور ارشاد فرمایا : بے شک اللہ تعالیٰ وتر (طاق) ہے اور وتر کو پسند کرتا ہے، پس اے اہل قرآن (مسلمانو!) تم بھی وتر پڑھا کرو۔‘‘

اس حدیث کو امام ترمذی، نسائی اور ابو داود نے روایت کیا ہے نیز امام ترمذی فرماتے ہیں کہ حضرت علی کی یہ حدیث حسن صحیح ہے۔

5۔ عَنْ خَارِجَةَ بْنِ حُذَافَةَ قَالَ : قَالَ أَبُوْ الْوَلِيْدِ الْعَدَوِيُّ : خَرَجَ عَلَيْنَا رَسُوْلُ اللهِ ﷺ فَقَالَ : إِنَّ اللهَ تَعَالَی قَدْ أَمَدَّکُمْ بِصَلَاةٍ وَهِيَ خَيْرٌ لَکُمْ مِنْ حُمْرِ النَّعَمِ وَهِيَ الْوِتْرُ فَجَعَلَهَا لَکُمْ فِيْمَا بَيْنَ الْعِشَاءِ إِلَی طُلُوْعِ الْفَجْرِ۔

رَوَاهُ أَبُوْ دَاوُدَ، وَالطَّبَرَانِيُّ، وَالْحَاکِمُ، وَالْبَيْهَقِيُّ۔

5 : أخرجه أبو داود في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : استحباب الوتر، 2 / 61، الرقم : 1418، والطبراني في المعجم الکبیر، 2 / 279، الرقم : 2168، والحاکم في المستدرک، 1 / 448، الرقم : 1148، والبیهقي في السنن الکبری، 2 / 477، الرقم : 4291، وفي السنن الصغری، 1 / 442، الرقم : 777۔

’’خارجہ بن حذافہ سے روایت ہے کہ حضرت ابو الولید عدوی رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ ﷺ ہمارے پاس تشریف لائے اور فرمایا : بے شک اللہ تعالیٰ نے ایک نماز کے ذریعے تمہاری مدد فرمائی ہے جو تمہارے لیے سرخ اونٹوں سے بھی بہتر ہے، وہ نماز ’’وتر‘‘ ہے پس تمہارے لیے اسے عشاء اور طلوع فجر کے درمیان رکھا ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابو داود، طبرانی، حاکم اور بیہقی نے روایت کیا ہے۔

6۔ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رضي الله عنهما قَالَ : أَنَّ النَّبِيَّ ﷺ کَانَ یُصَلِّي فِي رَمَضَانَ عِشْرِيْنَ رَکْعَةً سِوَی الْوِتْرَ۔ رَوَاهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ، وَالْبَيْهَقِيُّ، وَالطَّبَرَانِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ۔

6 : أخرجه ابن أبي شیبۃ في المصنف، 2 / 164، الرقم : 7692، والطبراني في المعجم الأوسط، 1 / 243، الرقم : 798، 5 / 324، الرقم : 5440، وفي المعجم الکبیر، 11 / 393، الرقم : 12102، والبیهقي في السنن الکبری، 2 / 496، الرقم : 4391، وعبد بن حمید في المسند، 1 / 218، الرقم : 653، والخطیب البغدادي في تاریخ بغداد، 6 / 113۔

’’حضرت عبد اللہ بن عباس رضي الله عنهما سے مروی ہے فرمایا کہ حضور نبی اکرم ﷺ رمضان المبارک میں وتر کے علاوہ بیس رکعت تراویح پڑھا کرتے تھے۔‘‘

اس حدیث کو امام ابن ابی شیبہ، بیہقی اور طبرانی نے روایت کیا ہے اور یہ الفاظ طبرانی کے ہیں۔

7۔ عَنِ ابْنِ عُمَرَ رضي الله عنهما قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ یَقُوْلُ : مَنْ صَلَّی الضُّحَی وَصَامَ ثَـلَاثَةَ أَيَّامٍ مِنَ الشَّھْرِ وَلَمْ یَتْرُکِ الْوِتْرَ فِي حَضَرٍ وَلَا سَفَرٍ کُتِبَ لَهُ أَجْرُ شَھِيْدٍ۔ رَوَاهُ الْمُنْذَرِيُّ، وَقَالَ : رَوَاهُ الطَّبَرَانِي فِي الْکَبِيْرِ۔

7 : أخرجه المنذري في الترغیب والترهیب، 1 / 229، الرقم : 873، والهیثمي في مجمع الزوائد، 2 / 241، وأبو نعیم في حلیۃ الأولیاء، 4 / 332۔

’’حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ہوئے سنا : جو شخص نماز چاشت پڑھے اور مہینے میں تین دن کے روزے رکھے اور سفر و حضر میں وتر نہ چھوڑے اسے شہید کا ثواب ملتا ہے۔‘‘

اس حدیث کو امام منذری نے روایت کیا ہے اور وہ کہتے ہیں کہ اسے امام طبرانی نے ’’المعجم الکبیر‘‘ میں روایت کیا ہے۔

Copyrights © 2020 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved