Intercession Substantiated by Fine Traditions

باب چہارم

بَابٌ فِي اخْتِيَارِ النَّبِيِّ صلی الله عليه وآله وسلم الشَّفَاعَةَ لِأُمَّتِهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ

(حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا اپنی امت کے لیے قیامت کے دن شفاعت اختیار فرمانے کا بیان)

84 / 1. عَنْ عَوْفِ بْنِ مَالِکٍ الْأَشْجَعِيِّ رضی اﷲ عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : أَتَانِي آتٍ مِنْ عِنْدِ رَبِّي فَخَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ أُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ، وَهِيَ لِمَنْ مَاتَ لَا يُشْرِکُ بِاﷲِ شَيْءًا.

رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ.

1 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : صفة القيامة، باب : ما جاء في الشفاعة، 4 / 627، الرقم : 2441.

’’حضرت عوف بن مالک اشجعی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میرے پاس اللہ کی طرف سے پیغام لے کر آنے والا آیا کہ اللہ تعالیٰ نے مجھے میری آدھی امت کو بغير حساب جنت میں داخل کرنے اور شفاعت کرنے کے درمیان اختیار دیا؟ پس میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا کیونکہ یہ ہر اس شخص کے لئے ہے جو اللہ کے ساتھ شرک کرتا ہوا نہیں مرے گا۔‘‘

اس حدیث کو امام ترمذی نے روایت کیا ہے۔

85 / 2. عَنْ أَبِي مُوْسَی الْأَشْعَرِيِّ رضی اﷲ عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : خُيِّرْتُ بَيْنَ الشَّفَاعَةِ وَبَيْنَ أَنْ يَدْخُلَ نِصْفُ اُمَّتِي الْجَنَّةَ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ لِأَنَّهَا أَعَمُّ وَأَکْفَی. أَتَرَوْنَهَا لِلْمُتَّقِيْنَ؟ لَا، وَلَکِنَّهَا لِلْمُذْنِبِيْنَ الْخَطَّائِيْنَ الْمُتَلَوِّثِيْنَ. رَوَاهُ ابْنُ مَاجَةَ.

2 : أخرجه ابن ماجة في السنن، کتاب : الزهد، باب : ذکر الشفاعة، 2 / 1441، الرقم : 4311، والکناني في مصباح الزجاجة، 4 / 260، الرقم : 1549.

’’حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مجھے اختیار دیا گیا کہ چاہے میں (قیامت کے روز) شفاعت کا حق اختیار کروں یا میری آدھی امت بغير حساب کے جنت میں داخل ہو جائے؟ پس میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا کیونکہ وہ عام تر اور زیادہ کفایت کرنے والی ہے۔ تمہارے خیال میں وہ پرہیزگاروں کے لئے ہوگی؟ نہیں، بلکہ وہ گناہ گاروں، خطا کاروں اور گناہوں سے آلودہ لوگوں کے لیے ہے۔‘‘

اسے امام ابنِ ماجہ نے روایت کیا ہے۔

86 / 3. عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ عُمَرَ رضي اﷲ عنهما عَنِ النَّبِيِّ صلی الله عليه وآله وسلم قَالَ : خُيِّرْتُ بَيْنَ الشَّفَاعَةِ أَوْ يَدْخُلُ نِصْفُ أُمَّتِي الْجَنَّةَ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ لِأَنَّهَا أَعَمُّ وَأَکْفَی، أَتَرَوْنَهَا لِلْمُتَّقِيْنَ؟ لَا، وَلَکِنَّهَا لِلْمُتَلَوِّثِيْنَ الْخَطَّاؤُوْنَ.

رَوَاهُ أَحْمَدُ وابْنُ أبِي عَاصِمٍ وَالْبَيْهَقِيُّ. وَقَالَ الْمُنْذَرِيُّ : إِسْنَادُهُ جَيِّدٌ.

3 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 2 / 75، الرقم : 5452، وابن أبي عاصم في السنة، 2 / 368، الرقم : 791، والبيهقی في الإعتقاد، 1 / 202، والمنذري في الترغيب والترهيب، 4 / 242، الرقم : 5518، والهيثمي في مجمع الزوائد، 10 : 378.

’’حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مجھے اختیار دیا گیا کہ چاہے میں (قیامت کے روز) شفاعت اختیار کروں یا میری آدھی امت بغير حساب کے جنت میں داخل ہو جائے؟ پس میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا کیونکہ وہ عام تر اور زیادہ کفایت کرنے والی ہے۔ تمہارے خیال میں وہ پرہیزگاروں کے لئے ہوگی؟ نہیں، بلکہ وہ گناہوں سے آلودہ لوگوں اور خطاکاروں کے لیے ہے۔‘‘

اسے امام احمد بن حنبل، ابنِ ابی عاصم اور بیہقی نے روایت کیا ہے۔ امام منذری نے کہا ہے : اس کی اِسناد ٹھیک ہے۔

87 / 4. عَنْ أَبِي مُوْسَی رضی اﷲ عنه قَالَ : غَزَوْنَا مَعَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم فِي بَعْضِ أَسْفَارِهِ. قَالَ : فَعَرَّسَ بِنَا رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم، فَانْتَهَيْتُ بَعْضَ اللَّيْلِ إِلَی مُنَاخِ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم أَطْلُبُهُ فَلَمْ أَجِدْهُ. قَالَ : فَخَرَجْتُ بَارِزًا أَطْلُبُهُ، وَإِذَا رَجُلٌ مِنْ أَصْحَابِ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم يَطْلُبُ مَا أَطْلُبُ. قَالَ : فَبَيْنَا نَحْنُ کَذَالِکَ، إِذِ اتَّجَهَ إِلَيْنَا رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم. قَالَ : فَقُلْنَا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! أَنْتَ بأَرْضِ حَرْبٍ، وَلَا نَأْمَنُ عَلَيْکَ، فَلَوْ لَا إِذْ بَدَتْ لَکَ الْحَاجَةُ، قُلْتَ لِبَعْضِ أَصْحَابِکَ فَقَامَ مَعَکَ؟ قَالَ : فَقَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : إِنِّي سَمِعْتُ هَزِيْزًا کَهَزِيْزِ الرَّحَی أَوْ حَنِيْنًا کَحَنِيْنِ النَّحْلِ وَأَتَانِي آتٍ مِنْ رَبِّي عَزَّوَجَلَّ، قَالَ : فَخَيَرَنِي أَنْ يُدْخِلَ ثُلُثَ أُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ شَفَاعَتِي لَهُمْ؟ فَاخْتَرْتُ شَفَاعَتِي لَهُمْ وَعَلِمْتُ أَنَّهَا أَوْسَعُ لَهُمْ. فَخَيَرَنِي : بِأَنْ يُدْخِلَ شَطْرَ اُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ لَهُمْ؟ فَاخْتَرْتُ لَهُمْ شَفَاعَتِي وَعَلِمْتُ أَنَّهَا أَوْسَعُ لَهُمْ، فَقَالَا : يَا رَسُولَ اﷲِ! أُدْعُ اﷲَ تَعَالٰی أَنْ يَجْعَلَنَا مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِکَ. قَالَ : فَدَعَا لَهُمَا، ثُمَّ إِنَّهُمَا نَبَّهَا أَصْحَابَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم وَأَخْبَرَاهُمْ بِقَوْلِ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم. قَالَ : فَجَعَلُوْا يْتُوْنَهُ، وَيَقُوْلُوْنَ : يَارَسُوْلَ اﷲِ! اُدْعُ اﷲَ تَعَالٰی أَنْ يَجْعَلَنَا مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِکَ فَيَدْعُوَ لَهُمْ. قَالَ : فَلَمَّا أَضَبَّ عَلَيْهِ الْقَوْمُ وَکَثَرُوْا. قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : إِنَّهَا لِمَنْ مَاتَ وَهُوَ يَشْهَدُ أَنْ لَا إِلٰهَ إِلَّا اﷲُ. رَوَاهُ أَحْمَدُ وَالرُّوْيَانِيُّ.

4 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 4 / 415، الرقم : 19724، والروياني في المسند، 1 / 330، الرقم : 501، والهيثمي في مجمع الزوائد، 10 / 368.

’’حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : ہم کسی غزوہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ سفر پر تھے۔ فرماتے ہیں : حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم رات کے آخری حصہ میں ہمارے ساتھ آرام کے لیے اترے، پس میں رات کے ایک حصے میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ڈھونڈتا ہوا آپ کی آرام گاہ کی طرف گیا تو میں نے آپ کو وہاں نہ پایا۔ میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ڈھونڈتا ہوا میدان کی طرف نکل گیا تو ایک اور صحابی کو دیکھا کہ وہ بھی میری طرح آپ کی تلاش میں ہے۔ فرماتے ہیں : ہم اسی حالت میں تھے کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اپنی طرف تشریف لاتے دیکھ کر ہم نے عرض کیا : یارسول اﷲ! آپ دارالحرب میں ہیں اور ہمیں آپ کی فکر ہے لہذا اگر آپ کو کوئی حاجت پیش آئی تو کیوں نہ آپ نے کسی غلام کو فرمایا کہ وہ آپ کے ساتھ جاتا؟ حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں نے ہوا کی سرسراہٹ یا شہد کی مکھیوں کی بھنبھناہٹ جیسی آواز سنی اس اثناء میں میرے رب کی طرف سے آنے والا (جبرائیل وحی لے کر) آیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اس نے مجھے میری تہائی امت (بغير حساب کے) جنت میں داخل کرنے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا؟ تو میں نے ان کے لیے شفاعت کو اختیار فرما ليا اس لئے کہ مجھے معلوم ہے کہ وہ ان کے لیے زیادہ وسیع ہے۔ پھر اس نے مجھے (دوبارہ) میری آدھی امت جنت میں داخل فرمانے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا؟ تو میں نے ان کے لیے اپنی شفاعت کو اختیار کر ليا اور میں جانتا ہوں کہ وہ ان کے لیے زیادہ وسعت کی حامل ہے۔ ان دونوں نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! آپ اﷲ تعالیٰ سے دعاکیجئے کہ وہ ہمیں آپ کی شفاعت کا اہل بنائے۔ آپ نے ان دونوں کے لیے دعا فرمائی پھر انہوں نے (دیگر) صحابہ کو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اس فرمان کے بارے میں آگاہ کیا تو وہ آپ کے پاس آنا شروع ہوگئے اور عرض کرنے لگے : یا رسول اﷲ! آپ اﷲتعالیٰ سے دعا کیجئے کہ وہ ہمیں آپ کی شفاعت سے نوازے تو آپ نے ان کے لیے دعا فرمائی۔ جب آپ کے پاس لوگوں کا کثیر جھرمٹ ہوگیا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : یقیناً وہ شفاعت ہر اس شخص کے لیے ہے جو اس حال میں فوت ہوا کہ لَا إِلٰهَ إِلاَّ اﷲُ کی گواہی دیتا ہو۔‘‘

اسے امام احمد اور رویانی نے روایت کیا ہے۔

88 / 5. عَنْ أَبِي مُوْسَی رضی اﷲ عنه أَنَّ النَّبِيَّ صلی الله عليه وآله وسلم کَانَ يَحْرُسُهُ أَصْحَابُهُ، فَقُمْتُ ذَاتَ لَيْلَةٍ فَلَمْ أَرَهُ فِي مَنَامِهِ، فَأَخَذَنِي مَا قَدُمَ وَمَا حَدَثَ. فَذَهَبْتُ أَنْظُرُ، فَإِذَا أَنَا بِمُعَاذٍ قَدْ لَقِيَ الَّذِي لَقِيْتُ. فَسَمِعْنَا صَوْتًا مِثْلَ هَزِيْزِ الرَّحَا، فَوَقَفَا عَلَی مَکَانِهِمَا. فَجَاءَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم مِنْ قِبَلِ الصَّوْتِ، فَقَالَ : هَلْ تَدْرُوْنَ يْنَ کُنْتُ؟ وَفِيْمَ کُنْتُ؟ أَتَانِي آتٍ مِنْ رَبِّي عَزَّوَجَلَّ، فَخَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ أُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ. فَقَالَا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! أُدْعُ اﷲَ عَزَّوَجَلَّ أَنْ يَجْعَلَنَا فِي شَفَاعَتِکَ. فَقَالَ : أَنْتُمْ وَمَنْ مَاتَ لَا يُشْرِکُ بِاﷲِ شَيْءًا فِي شَفَاعَتِي.

رَوَاهُ أَحْمَدُ وَإِسْنَادُهُ حَسَنٌ.

5 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 4 / 404، الرقم : 19618.

’’حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ بے شک حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابہ آپ کی حفاظت کا فریضہ سرانجام دیتے تھے۔ ایک رات میں بیدار ہوا تو آپ کو اپنی آرام گاہ میں نہ دیکھ کر میرے دل میں کسی ناگہانی واقعہ کے پیش آنے کا خیال آیا۔ پس میں حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تلاش میں نکلا تو دیکھا کہ معاذ رضی اللہ عنہ بھی میری طرح اسی لگن میں ہے۔ اسی اثناء میں ہم نے ہوا کی سرسراہٹ جیسی آواز سنی تو اپنی جگہ پر ٹھہر گئے۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے آواز کی سمت سے تشریف لا کر فرمایا : کیا تم جانتے ہو کہ میں کہاں تھا؟ اور کس حال میں تھا؟ میرے رب عزوجل کی طرف سے ایک پیغام لیکر آنے والا آیا کہ اس نے مجھے میری آدھی امت بغير حساب کے جنت میں داخل کرنے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا ہے؟ میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا۔ انہوں نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! آپ اﷲتعالیٰ سے دعا کیجئے کہ وہ ہمیں آپ کی شفاعت سے بہرہ مند فرمائے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تم اور ہر وہ شخص جو اس حال میں فوت ہوا کہ اﷲ کے ساتھ شرک نہ کرتا ہو میری شفاعت کا مستحق ہوگا۔‘‘

اسے امام احمد نے روایت کیا ہے اور اس کی اِسناد حسن ہے۔

89 / 6. عَنْ مُعَاذِ بْن جَبَلٍ وَعَنْ أَبِي مُوْسَی رضي اﷲ عنهما قَالَا : کَانَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم إِذَا نَزَلَ مَنْزِلًا کَانَ الَّذِي يَلِيْهِ الْمُهَاجِرُوْنَ. قَالَ : فَنَزَلْنَا مَنْزِلًا، فَقَامَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم وَنَحْنُ حَوْلَهُ. قَالَ : فَتَعَارَرْتُ مِنَ اللَّيْلِ أَنَا وَمُعَاذٌ فَنَظَرْنَا. قَالَ : فَخَرَجْنَا نَطْلُبُهُ، إِذْ سَمِعْنَا هَزِيْزًا کَهَزِيْزِ الْأَرْحَاءِ. إِذْ أَقْبَلَ فَلَمَّا أَقْبَلَ نَظَرَ، قَالَ : مَا شَأْنُکُمْ؟ قَالُوْا : اِنْتَبَهْنَا فَلَمْ نَرَکَ حَيْثُ کُنْتَ، خَشِيْنَا أَنْ يَکُوْنَ أَصَابَکَ شَيْئٌ، جِئْنَا نَطْلُبُکَ. قَالَ : أَتَانِيآتٍ فِي مَنَامِي فَخَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ الْجَنَّةَ نِصْفَ أُمَّتِي أَوْ شَفَاعَةٍ؟ فَاخْتَرْتُ لَهُمُ الشَّفَاعَةَ. فَقُلْنَا : فَإِنَّا نَسْأَلُکَ بِحَقِّ الْإِسْلَامِ وَبِحَقِّ الصُّحْبَةِ لَمَا أَدْخَلْتَنَا الْجَنَّةَ. قَالَ : فَاجْتَمَعَ عَلَيْهِ النَّاسُ، فَقَالُوْا لَهُ : مِثْلَ مَقَالَتِنَا وَکَثُرَ النَّاسُ، فَقَالَ : إِنِّي أَجْعَلُ شَفَاعَتِي لِمَنْ مَاتَ لَا يُشْرِکُ بِاﷲِ شَيْءًا.

رَوَاهُ أَحْمَدُ وَإِسْنَادُهُ حَسَنٌ.

6 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 5 / 232، الرقم : 22025، والهيثمي في مجمع الزوائد، 10 / 368.

’’حضرت معاذ بن جبل اور ابو موسیٰ رضی اﷲ عنہما فرماتے ہیں : حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (سفر کے دوران) جب کسی منزل پر پڑاؤ ڈالتے تو مہاجرین آپ کے ارد گرد (کیمپ) ڈال لیتے۔ فرماتے ہیں : (اسی طرح کسی سفر کے دوران) ہم ایک جگہ پر اترے تو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے قیام فرمایا اور ہم آپ کے ارد گرد تھے۔ فرماتے ہیں : میں اور معاذ رات کو نیند سے بیدار ہوئے تو (آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو) دیکھا۔ (آپ کو اپنی جگہ پر نہ پاکر) ہم آپ کی تلاش میں نکل پڑے تو ہم نے بادلوں کی گڑگڑاہٹ جیسی آواز سنی، اس اثناء میں آپ کو تشریف لاتے دیکھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تمہارا کیا معاملہ ہے؟ انہوں نے عرض کیا : ہم نیند سے بیدار ہوئے تو آپ کو اپنی جگہ پر نہ دیکھ کر ہم ڈرگئے کہ شاید آپ کے ساتھ کوئی معاملہ پیش آیا ہے لہذا ہم آپ کی تلاش میں نکل کھڑے ہوئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : (اﷲ تعالیٰ کی طرف سے) ایک آنے والا حالتِ نیند میں میرے پاس آیا تو اس نے مجھے میری آدھی امت کے بغير حساب کے جنت میں داخل کیے جانے یا شفاعت کرنے کا اختیار دیا؟ پس میں نے ان کے لیے شفاعت کو اختیار کر ليا۔ ہم نے عرض کیا : ہم آپ سے اسلام کے صدقے اور آپ کے ساتھ صحابیت کا شرف پانے کے وسیلہ سے التجا کرتے ہیں کہ آپ ہمیں جنت میں داخل فرمائیں گے۔ فرماتے ہیں : لوگ آپ کے اردگرد جمع ہوگئے اور انہوں نے بھی آپ سے ہمارے کہنے کی طرح عرض کیا اور لوگوں کی تعداد بڑھتی گئی تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں اپنی شفاعت ہر اس شخص کے لیے کروں گا جو اس حال میں فوت ہوا کہ اﷲ تعالیٰ کے ساتھ شرک نہ کرتا ہو۔‘‘

اسے امام احمد نے روایت کیا ہے اور اس کی اِسناد حسن ہے۔

90 / 7. عَنْ عَوْفِ بْنِ مَالِکٍ الْأَشْجَعِيِّ رضی اﷲ عنه قَالَ : عَرَّسَ بِنَا رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم ذَاتَ لَيْلَةٍ فَافْتَرَشَ کُلُّ رَجُلٍ مِنَّا ذِرَاعَ رَاحِلَتِهِ. قَالَ : فَانْتَهَيْتُ إِلَی بَعْضِ الْإِبِلِ فَإِذَا نَاقَةُ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم لَيْسَ قُدَّامَهَا أَحَدٌ. قَالَ : فَانْطَلَقْتُ أَطْلُبُ رَسُوْلَ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم، فَإِذَا مُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ وَعَبْدُ اﷲِ بْنُ قَيْسٍ قَائِمَانِ. قُلْتُ : أَيْنَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم ؟ قَالَا : مَا نَدْرِي غَيْرَ أَنَّا سَمِعْنَا صَوْتًا بِأَعْلَی الْوَادِی، فَإِذَا مِثْلُ هَزِيْزِ الرَّحَی، قَالَ : أُمْکُثُوْا يَسِيْرًا ثُمَّ جَاءَ نَا رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم فَقَالَ : إِنَّهُ أَتَانِي اللَّيْلَةَ آتٍ مِنْ رَبِّي فَخَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ أُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ. فَقُلْنَا : نَنْشُدُکَ اﷲَ وَالصُّحْبَةَ لَمَا جَعَلْتَنَا مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِکَ، قَالَ : فَإِنَّکُمْ مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِي قَالَ : فَأَقْبَلْنَا مَعَانِيْقَ إِلَی النَّاسِ فَإِذَا هُمْ قَدْ فَزِعُوْا وَفَقَدُوْا نَبِيَهُمْ، وَقَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : إنَّه أَتَانِي اللَّيْلَةَ آتٍ مِنْ رَبِّي، فَخَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ أُمَّتِيالْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ. قَالُوْا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! نَنْشُدُکَ اﷲَ وَالصُّحْبَةَ، لَمَا جَعَلْتَنَا مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِکَ؟ قَالَ : فَأَنَا أُشْهِدُکُمْ أَنَّ شَفَاعَتِي لِمَنْ لَا يُشْرِکُ بِاﷲِ شَيْءًا مِنْ أُمَّتِي.

رَوَاهُ أَحْمَدُ وَابْنُ حِبَّانَ وَابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَالطَّبَرَانِيُّ فِي الْکَبِيْرِ وَغَيْرُهُمْ. وَقَالَ الْأَلْبَانِيُّ فِي ’الظِّلَال‘ : إِسْنَادُهُ صَحِيْحٌ، رِجَالُهُ کُلُّهُمْ ثِقَاتٌ عَلَی شَرْطِ الشَّيْخَيْنِ.

7 : أخرجه أحمد بن حنبل في المسند، 6 / 28. 29، الرقم : 24002، وابن حبان في الصحيح، 14 / 388، الرقم : 6470، وابن أبي شيبة في المصنف، 6 / 320، الرقم : 31751، والطبراني في المعجم الکبير، 18 / 73، الرقم : 134، والطيالسي في المسند، 1 / 134، الرقم، 998، والروياني في المسند، 1 / 391، الرقم : 597، وابن أبي عاصم في السنة، 2 / 389، الرقم : 818.

’’حضرت عوف بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہوئے فرماتے ہیں : حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (دورانِ سفر) ایک رات ہمارے ساتھ آرام کے لیے اترے تو ہم میں سے ہر شخص اپنی سواری پر سو گیا۔ فرماتے ہیں : میں بعض اونٹوں کی طرف گیا تو دیکھا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنی اونٹنی پر موجود نہیں ہیں۔ پس میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تلاش میں نکل پڑا تو اس دوران دیکھا کہ معاذ بن جبل اور عبد اﷲ بن قیس بھی جاگ رہے ہیں۔ میں نے پوچھا : رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کہاں ہیں؟ انہوں نے کہا : ہم اس کے علاوہ کچھ نہیں جانتے کہ وادی کے اوپر سے ہم نے بادل کے گڑگڑانے جیسی آواز سنی ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تھوڑی دیر یہاں ٹھہرو پھر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہماری طرف تشریف لائے تو فرمایا : میرے رب کی طرف سے آنے والا رات کو میرے پاس آیا تو اس نے مجھے میری آدھی امت کے بغير حساب کے جنت میں داخل کیے جانے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا؟ میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا۔ ہم نے عرض کیا : ہم آپ سے اﷲ اور صحابیت کے واسطے سے سوال کرتے ہیں کہ آپ ہمیں اپنی شفاعت سے نوازیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : یقیناً تم میری شفاعت کے حق دار ہو۔ فرماتے ہیں : ہم جلدی سے (دوسرے) لوگوں کی طرف آئے تو وہ بھی حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو نہ پا کر پریشان تھے۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے (ان سے بھی) فرمایا : میرے رب کی طرف سے آنے والے نے رات کو میرے پاس آ کر مجھے اپنی آدھی امت کے (بغير حساب کے) جنت میںداخل کیے جانے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا؟ میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا۔ انہوں نے عرض کیا : یا رسول اﷲ صلی اﷲ علیک وسلم ہم آپ سے اﷲ اور صحابیت کے واسطے سوال کرتے ہیں کہ آپ ہمیں اپنی شفاعت کے حقدار بنائیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں تم کو گواہ بناتا ہوں کہ میری شفاعت میری امت کے ہر اس فرد کے لیے ہوگی جو اﷲ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا ہوگا۔‘‘

اسے امام احمد، ابنِ حبان، ابنِ ابی شیبہ، طبرانی اور دیگر ائمہِ حدیث نے روایت کیا ہے۔ علامہ البانی نے ’ظلال الجنۃ في تخریج السنۃ‘ میں کہا ہے : اس حدیث کی اِسناد صحیح ہے اور اس کا ہر راوی شیخین کی شرط پر ثقہ ہے۔

91 / 8. عَنْ عَوْفِ بْنِ مَالِکٍ الْأَشْجَعِيِّ رضی اﷲ عنه قَالَ : نَزَلْنَا مَعَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم مَنْزِلًا فَاسْتَيْقَظْتُ مِنَ اللَّيْلِ، فَإِذَا لَا أَرَی شَيْءًا أَطْوَلَ مِنْ مُؤْخِرَةِ رَحْلِي، قَدْ لَصِقَ کُلُّ إِنْسَانٍ وَبَعِيْرِهِ بِالْأَرْضِ، فَقُمْتُ أَتَخَلَّلُ النَّاسَ حَتّٰی دَفَعْتُ إِلَی مَضْجَعِ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم فَإِذَا هُوَ لَيْسَ فِيْهِ، فَوَضَعْتُ يَدَيَّ عَلَی الْفِرَاشِ فَإِذَا هُوَ بَارِدٌ. فَخَرَجْتُ أَتَخَلَّلُ النَّاسَ وَأَقُوْلُ : إِنَّاِﷲِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعُوْنَ، ذُهِبَ بِرَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم حَتَّی خَرَجْتُ مِنَ الْعَسْکَرِ کُلِّهِ. فَنَظَرْتُ سَوَادًا فَمَضَيْتُ فَرَمَيْتُ بِحَجَرٍ، فَمَضَيْتُ إِلَی السَّوَادِ، فَإِذَا مُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ وَأَبُوْ عُبَيْدَةَ بْنُ الْجَرَّاحِ، وَإِذَا بَيْنَ يْدِيْنَا صَوْتٌ کَدَوِيِّ الرَّحَا أَوْ کَصَوْتِ الهَضْبَاءِ حِيْنَ يُصِيْبُهَا الرِّيْحُ. فَقَالَ بَعْضُنَا لِبَعْضٍ : يَا قَوْمُ! أَثْبِتُوْا حَتَّی تُصْبِحُوْا أَوْ يْتِيَکُمْ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم. قَالَ : فَلَبِثْنَا مَا شَاءَ اﷲُ، ثُمَّ نَادَی : أَثُمَّ مُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ وَأَبُوْ عُبَيْدَةَ وَعَوْفُ بْنُ مَالِکٍ؟ فَقُلْنَا : نَعَمْ! فَأَقْبَلَ إِلَيْنَا فَخَرَجْنَا لَا نَسْأَلُه عَنْ شَيْئٍ وَلَا يُخْبِرُنَا حَتَّی قَعَدَ عَلَی فِرَاشِهِ، فَقَالَ : أَتَدْرُوْنَ مَا خَيَرَنِي رَبِّی اللَّيْلَةَ؟ فَقُلْنَا : أَﷲُ وَرَسُوْلُه أَعْلَمُ. قَالَ : فَإِنَّهُ خَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ اُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ. قُلْنَا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! أُدْعُ اﷲَ أَنْ يَجْعَلَنَا مِنْ أَهْلِهَا؟ قَالَ : هِيَ لِکُلِّ مُسْلِمٍ.

رَوَاهُ الْحَاکِمُ والطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْکَبِيْرِ، وَقَالَ الْحَاکِمُ : هَذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحٌ عَلَی شَرْطِ مُسْلِمٍ.

8 : أخرجه الحاکم في المستدرک، 1 / 60، 135، الرقم : 36، 221، والطبراني في المعجم الکبير، 18 / 68، الرقم : 126، وابن منده في الإيمان، 2 / 873، الرقم : 932.

’’حضرت عوف بن مالک اشجعی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : ہم حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ (دورانِ سفر) ایک منزل پر (آرام کے لیے اترے) تو رات کے کسی حصے میں مجھے جاگ آگئی۔ میں نے کسی چیز کو اپنے کجاوہ کے پچھلے حصہ سے بڑھ کر طویل نہ دیکھا، ہر انسان اور اس کا اونٹ زمین کے ساتھ چپکا ہوا تھا۔ میں لوگوں کے درمیان سے گزرتا ہوا حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی آرام گاہ تک پہنچا تو آپ وہاں موجود نہ تھے، میں نے اپنا ہاتھ بستر مبارک پر رکھا تو وہ ٹھنڈا تھا۔ پس میں آپ کی تلاش میں لوگوں کے درمیان سے  إِنَّا لِلّهِ وَإِنَّـا إِلَيْهِ رَاجِعُونَ پڑھتا ہوا گزرنے لگا کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو کوئی لے گیا ہے یہاں تک کہ پورے لشکر سے باہر نکل گیا۔ اسی دوران میںنے ایک سایہ دیکھا تو میں نے آگے بڑھتے ہوئے اسے پتھر مارا۔ میں سایہ کی طرف بڑھا تو دیکھا کہ وہ معاذ بن جبل اور ابوعبیدہ بن جراح تھے۔ ہم نے اپنے آگے بادل کی گڑگڑاہٹ یا ہوا میں بارش کے برسنے جیسی آواز سنی تو ہم میں سے بعض نے بعض سے کہا : لوگو! تم یہی رکے رہو یہاں تک کہ صبح ہوجائے یا حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تشریف لے آئیں۔ فرماتے ہیں : جب تک اﷲ تعالیٰ نے چاہا ہم وہیں ٹھہرے رہے۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے(کہیں سے تشریف لاتے ہوئے) پکارا : کیا (یہاں) معاذ بن جبل، ابو عبیدہ اور عوف بن مالک ہیں؟ ہم نے عرض کیا : جی ہاں! آپ ہماری طرف تشریف لائے تو ہم (واپس لشکر کی طرف) چلنا شروع ہو گئے نہ ہم نے آپ سے کچھ عرض کیا اور نہ آپ نے ہمیں کچھ فرمایا یہاں تک کہ آپ اپنے بچھونے پر تشریف فرما ہو گئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کیا تم جانتے ہو کہ اﷲ تعالیٰ نے رات کو مجھے کیا اختیار دیا؟ ہم نے عرض کیا : اﷲ اور اس کا رسول زیادہ جانتے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اس نے مجھے آدھی امت کے بغير حساب جنت میں داخل کیے جانے اور شفاعت کرنے کے درمیان اختیار دیا؟ سو میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا۔ ہم نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! آپ اﷲتعالیٰ سے دعا کیجئے کہ وہ ہمیں اس سے نوازے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : وہ ہر مسلمان کے لیے ہے۔‘‘

اسے امام حاکم اور طبرانی نے روایت کیا۔ حاکم نے کہا ہے : یہ حدیث امام مسلم کی شرط پر صحیح ہے۔

92 / 9. عَنْ عَوْفِ بْنِ مَالِکٍ الْأَشْجَعِيِّ رضی اﷲ عنه قَالَ : سَافَرْنَا مَعَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم سَفَرًا فَنَزَلْنَا حَتَّی إِذَا کَانَ الَّليْلُ أَرِقَتْ عَيْنَايَ فَلَمْ يَأْتِنِي النَّوْمُ، فَقُمْتُ، فَإِذَا لَيْسَ فِي الْعَسْکَرِ دَابَّةٌ إِلَّا وَاضِعٌ خَدَّهُ إِلَی الْأَرْضِ، وَأَنْ أُرْفِعَ شَيْئٌ فِي نَفْسِيِ لِمَوْضِعِ مُؤْخِرَةِ الرَّحْلِ. فَقُلْتُ : لَآتِيَنَّ رَسُوْلَ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم وَلِأَکْلَأَ بِهِ الَّليْلَةَ حَتَّی يُصْبِحَ. فَخَرَجْتُ أَتَخَلَّلُ الرِّحَالَ حَتَّی دَفَعْتُ إِلَی رَحْلِ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم، فَإِذَا هُوَ لَيْسَ فِي رَحْلِهِ، فَخَرَجْتُ أَتَخَلَّلُ الرِّحَالَ حَتَّی خَرَجْتُ مِنَ الْعَسْکَرِ، فَإِذَا أَنًا بِسَوَادٍ، فَتَيَمَّمْتُ ذٰلِکَ السَّوَادَ، فَإِذَا هُوَ أَبُوْ عُبَيْدَةَ بْنُ الْجَرَّاحِ وَمُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ. فَقَالَا لِي : مَا الَّذِي أَخْرَجَکَ؟ فَقُلْتُ : أَلَّذِي أَخْرَجَکُمَا، فَإِذَا نَحْنُ بِغَيْطَةٍ مِنَّا غَيْرُ بَعِيْدٍ فَمَشَيْنَا إِلَی الْغَيْطَةِ، فَإِذَا نَحْنُ نَسْمَعُ فِيْهَا کَدَوِيِّ النَّحْلِ اَوْ کَحَفِيْفِ الرِّيَاحِ. فَقَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : أَهَهُنَا أَبُوْ عُبَيْدَةَ بْنُ الْجَرَّاحِ؟ قُلْنَا : نَعَمْ! قَالَ : وَمُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ؟ قُلْنَا : نَعَمْ! قَالَ : عَوْفُ بْنُ مَالِکٍ؟ قُلْنَا : نَعَمْ! فَخَرَجَ إِلَيْنَا رَسُوْلُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم، فَقُمْنَا لَا نَسْأَلُه عَنْ شَيْئٍ وَلَا يَسْأَلُنَا عَنْ شَيْئٍ حَتَّی رَجَعَ إِلٰی رَحْلِهِ. فَقَالَ : أَلَا أُخْبِرُکُمْ بِمَا خَيَرَنِي رَبِّي آنِفًا؟ قُلْنَا : بَلٰی يَا رَسُوْلَ اﷲِ! قَالَ : خَيَرَنِي بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ ثُلُثَ اُمَّتِي الْجَنَّةَ بِغَيْرِ حِسَابٍ وَلَا عَذَابٍ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ قُلْنَا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! مَا الَّذِي اخْتَرْتَ؟ قَالَ : إِخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ، قُلْنَا جَمِيْعًا : يَا رَسُوْلَ اﷲِ! إِجْعَلْنَا مِنْ أَهْلِ شَفَاعَتِکَ؟ فَقَالَ لَنَا : إِنَّ شَفَاعَتِي لِکُلِّ مُسْلِمٍ.

رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْکَبِيْرِ.

9 : أخرجه الطبرانی في المعجم الکبير، 18 / 58، الرقم : 107، والهيثمي في مجمع الزوائد، 10 / 369.

’’حضرت عوف بن مالک اشجعی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : ہم حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ ایک سفر کے دوران منزل پر اترے، یہاں تک کہ رات کو میری آنکھوں سے نیند غائب ہوگئی جس کے باعث میں سو نہ سکا تو اٹھ کھڑا ہوا۔ اس وقت لشکر میں تمام جانور سو رہے تھے کہ (اپنی خوابگاہ) کجاوہ کی پچھلی جانب سے میرے دل میں کچھ خیال ابھرا تو میںنے اپنے آپ سے کہا : میں ضرور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں حاضر ہوں گا اور صبح تک آپ کی حفاظت کا فریضہ انجام دوں گا۔ پس میں لوگوں کے کجاووں سے گزرتا ہوا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے کجاوے تک پہنچا تو دیکھا کہ آپ اپنے کجاوے میں موجود نہ تھے، لہذا میں کجاووں کو عبور کرتا ہوا لشکر سے باہر نکل گیا تو ایک سایہ دیکھا۔ میں نے اس سایہ کی طرف جانے کا ارادہ کیا تو وہ ابو عبیدہ بن جراح اور معاذ بن جبل تھے۔ انہوں نے مجھ سے کہا : کس چیز نے آپ کو (لشکر سے) باہر نکالا ہے؟ میں نے کہا : جس نے آپ دونوں کو نکالا ہے۔ ہم سے قریب ہی ایک باغ تھا تو ہم اس کی طرف چل پڑے کہ اچانک ہم نے اس میں سے مکھی کی بھنبھناہٹ یا ہوا کی سرسراہٹ جیسی آواز سنی۔ پس (اس میں سے) حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے پوچھا : کیا یہاں ابو عبیدہ بن جراح ہے؟ ہم نے عرض کیا : جی ہاں! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اور معاذ بن جبل ہے؟ ہم نے عرض کیا : جی ہاں! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : عوف بن مالک ہے؟ ہم نے عرض کیا : جی ہاں! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہماری طرف تشریف لے آئے۔ ہم آپ کے ساتھ چلنے لگے تو نہ ہم نے آپ سے کسی چیز کے بارے عرض کیا اور نہ ہی آپ نے ہم سے کچھ پوچھا یہاں تک کہ آپ اپنے کجاوہ کی طرف لوٹ آئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : کیا میں تمہیں اس چیز کی خبر نہ دوں جس کے بارے میں ابھی مجھے میرے رب نے اختیار دیا؟ ہم نے عرض کیا : کیوں نہیں! یا رسول اﷲ (ضرور بتلائیے)! آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میرے رب نے مجھے بغير حساب کتاب اور عذاب کے میری تہائی امت کو جنت میں داخل کرنے اور شفاعت کے درمیان اختیار دیا؟ ہم نے عرض کیا : یا رسول اﷲ! آپ نے کس کو اختیار فرمایا؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں نے شفاعت کو اختیار کیا ہے۔ ہم سب نے عرض کیا : یارسول اﷲ! آپ ہمیں اپنی شفاعت کا حق دار بنا لیجئے تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہم سے فرمایا : بے شک میری شفاعت ہر مسلمان کے لیے ہے۔‘‘

اسے امام طبرانی نے روایت کیا ہے۔

93 / 10. عَنْ أَبِي کَعْبٍ صَاحِبِ الْحَرِيْرِ قَالَ : سَأَلْتُ النَّضْرَ بْنَ أَنَسٍ! فَقُلْتُ : حَدِّثْنِي بِحَدِيْثٍ يَنْفَعُنِي اﷲُ عَزَّوَجَلَّ بِهِ؟ فَقَالَ : نَعَمْ! أُحَدِّثُکَ بِحَدِيْثٍ کُتِبَ إِلَيْنَا فِيْهِ مِنَ الْمَدِيْنَةِ. فَقَالَ : فَقَالَ أَنَسٌ رضی اﷲ عنه : إِحفَظُوْا هَذَا فَإِنَّهُ مِنْ کَنْزِ الْحَدِيْثِ. قَالَ : غَزَا النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم فَسَارَ ذٰلِکَ الْيَوْمَ إِلَی اللَّيْلِ. فَلَمَّا کَانَ اللَّيْلُ نَزَلَ وَعَسْکَرَ النَّاسُ حَوْلَهُ، وَنَامَ هُوَ وَأَبُوْ طَلْحَةَ زَوْجُ أُمِّ أَنَسٍ، وَفُلَانٌ وَفُلَانٌ، أَرْبَعَةٌ. فَتَوَسَّدَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم يَدَ رَاحِلَتِهِ. ثُمَّ نَامَ وَنَامَ الْأَرْبَعَةُ إِلَی جَنْبِهِ. فَلَمَا ذَهَبَ عَتَمَةٌ مِنَ اللَّيْلِ، رَفَعُوْا رُؤُوْسَهُمْ، فَلَمْ يَجِدُوا النَّبِيَّ صلی الله عليه وآله وسلم عِنْدَ رَاحِلَتِهِ. فَذَهَبُوْا يَلْتَمِسُوْنَ النَّبِيَّ صلی الله عليه وآله وسلم حَتَّی يَلْقَوْهُ مُقْبِلًا، فَقَالُوْا : جَعَلَنَا اﷲُ فِدَاکَ! أَيْنَ کُنْتَ؟ فَإِنَّا فَزِعْنَا لَکَ إِذْ لَمْ نَرَکَ. فَقَالَ نَبِيُّ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : کُنْتُ نَائِمًا حَيْثُ رَأَيْتُمْ فَسَمِعْتُ فِي نَوْمِي دَوِيًّا کَدَوِيِّ الرَّحَا أَوْ هَزِيْزًا کَهَزِيْزِ الرَّحَا، فَفَزِعْتُ فِي مَنَامِي، فَوَثَبْتُ، فَمَضَيْتُ. فَاسْتَقَبَلِني جِبْرِيْلُ، فَقَالَ : يَا مُحَمَّدُ! إِنَّ اﷲَ عَزَّوَجَلَّ بَعَثَنِي إِلَيْکَ السَّاعَةَ لِأُخَيِّرَکَ، فَاخْتَرْ : إِمَّا أَنْ يَدْخُلَ نِصْفُ أُمَّتِکَ الْجَنَّةَ وَإِمَّا الشَّفَاعَةَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ لِأُمَّتِي. فَقَالَ النَّفَرُ الْأَرْبَعَةُ : يَا نَبِيَّ اﷲِ! إِجْعَلْنَا مِمَّنْ تَشْفَعُ لَهُمْ؟ فَقَالَ : وَجَبَتْ لَکُمْ، ثُمَّ أَقْبَلَ النَّبِيُّ صلی الله عليه وآله وسلم وَالْأَرْبَعَةُ، حَتَّی اسْتَقْبَلَهُ عَشَرَةٌ، فَقَالُوْا : أَيْنَ نَبِيُّنَا نَبِيُّ الرَّحْمَةِ؟ قَالَ : فَحَدَّثَهُمْ بِالَّذِي حَدَّثَ الْقَوْمَ، فَقَالُوْا : جَعَلَنَا اﷲُ فِدَاکَ، إِجْعَلْنَا مِمَّنْ تَشْفَعُ لَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ. فَقَالَ : وَجَبَتْ لَکُمْ، فَجَاؤُوْا جَمِيْعًا إِلَی عَظْمِ النَّاسِ، فَنَادَوْا فِي النَّاسِ : هَذَا نَبِيُّنَا نَبِيُّ الرَّحْمَةِ. فَحَدَّثَهُمْ بِالَّذِي حَدَّثَ الْقَوْمَ، فَنَادَوْا بِأَجْمَعِهِمْ : أَنْ جَعَلَنَا اﷲُ فِدَاکَ، إِجْعَلْنَا مِمَّن تَشْفَعُ لَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ؟ فَنَادَی ثَلَاثًا : إِنِّي أُشْهِدُ اﷲَ وَأُشْهِدُ مَنْ سَمِعَ أَنَّ شَفَاعَتِي لِمَنْ يَمُوْتُ لَا يُشْرِکُ بِاﷲِ عَزَّوَجَلَّ شَيْءًا. رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْمُعْجَمِ الْأَوْسَطِ.

10 : أخرجه الطبرانی في المعجم الأوسط، 4 / 102، الرقم : 1395، والهيثمي في مجمع الزوائد، 10 / 370.

’’ابو کعب صاحبِ حریر سے روایت ہے کہ میں نے نضر بن انس سے سوال کیا کہ آپ مجھے ایسی حدیثِ مبارکہ بتائیں جس سے اﷲتعالیٰ مجھے نفع دے؟ انہوں نے فرمایا : جی ہاں! میں آپ کو ایسی حدیث بیان کرتا ہوں جو ہم کو مدینہ کی طرف سے لکھی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حضرت انس رضی اللہ عنہ نے فرمایا : تم اس حدیث کو یاد کرلو کیونکہ یہ احادیث کا خزانہ ہے۔ فرماتے ہیں : حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ایک غزوہ میں تشریف لے گئے تو سارا دن (سفر میں) رہے پس جب رات ہوئی تو آپ نے(ایک جگہ) پڑاؤ ڈالا اور لوگ آپ کے ارد گرد جمع ہوگئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم، امِ انس کے شوہر ابو طلحہ رضی اللہ عنہ، فلاں اور فلاں چار افراد آرام فرمانے لگے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی اونٹنی کے ہاتھ (یعنی اگلے پاؤں) کو سر کے نیچے تکیہ بنا کر رکھ ليا، پھر آپ اور آپ کے پہلو میں موجود چاروں افراد سو گئے۔ رات کا ایک حصہ گزر جانے پر انہوں نے اپنے سروں کو اٹھا کر دیکھا تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اپنی سواری کے پاس نہ پا کر تلاش میں نکل کھڑے ہوئے یہاں تک کہ انہوں نے آپ کو تشریف لاتے دیکھا۔ انہوں نے عرض کیا : اﷲتعالیٰ ہمیں آپ پر فدا کرے! آپ کہاں تشریف لے گئے تھے؟ ہم آپ کو نہ دیکھ کر تو بے چین ہوگئے تھے۔ پس حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں سویا ہوا تھا جیسا کہ تم نے دیکھا تو اپنی نیند میں بادل کی گڑگڑاہٹ جیسی آواز سننے پر بے قرار ہوکر اٹھ بیٹھا۔ (پھر میں اسی بے قراری) میں (باہر) چل پڑا تو جبرئیل سے میرا سامنا ہوا۔ اس نے عرض کیا : اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ! اﷲتعالیٰ نے خاص گھڑی میں مجھے آپ کی طرف بھیجا ہے کہ آپ کو اختیار دوں۔ آپ اختیار فرمائیے چاہے آپ کی آدھی امت (بغير حساب کے) جنت میں داخل ہو جائے اور چاہے قیامت کے دن آپ شفاعت کریں؟ پس میں نے اپنی امت کے لیے شفاعت کو اختیار کر ليا ہے۔ اس پر چاروں افراد کے گروہ نے عرض کیا : اﷲ کے نبی! آپ ہمیں اپنی شفاعت کا مستحق بنا لیجئے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تم اس کے مستحق ہو۔ پھر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور چاروں آگے بڑھے یہاں تک کہ دس افراد آپ سے آملے تو انہوں نے عرض کیا : ہمارے رحمت والے نبی کہاں ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان کو بھی ایسا ہی بیان کیا جیسے لوگوں کو بتایا تھا تو انہوں نے عرض کیا : اﷲ تعالیٰ ہمیں آپ پر قربان کرے، آپ قیامت کے دن ہمیں بھی اپنی شفاعت کا مستحق ٹھہرائیں تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : تم بھی اس کے حقدار ہو۔ پس ان سب نے لوگوں کے ایک بڑے گروہ کی طرف آکر لوگوں میں ندا دی : یہ ہمارے نبی رحمت والے نبی ہیں۔ آپ نے انہیں بھی جو قوم کو بیان فرمایا تھا بتایا تو انہوں نے بیک وقت پکارا : اﷲ تعالیٰ ہم کو آپ پر فدا کریں آپ ہمیں بھی قیامت کے دن اپنی شفاعت سے نوازیں پس آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے تین بار فرمایا : میں اﷲتعالیٰ اور ہر سننے والے کو گواہ بنا کر کہتا ہوں کہ میری شفاعت ہر اس شخص کو حاصل ہوگی جو مرتے دم تک اﷲ کے ساتھ کسی کو شریک نہ ٹھہراتا ہو گا۔‘‘

اسے امام طبرانی نے روایت کیا ہے۔

94 / 11. عَنْ عَوْفِ بْنِ مَالِکٍ رضی اﷲ عنه قَالَ : کُنَّا مَعَ رَسُوْلِ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم فِي بَعْضِ أَسْفَارِهِ، فَقَالَ : إِنَّ جِبْرِيْلَ أَتَانِي وَإِنَّ رَبِّي خَيَرَنِي بَيْنَ خَصْلَتَيْنِ : بَيْنَ أَنْ يُدْخِلَ نِصْفَ أُمَّتِي الْجَنَّةَ وَبَيْنَ الشَّفَاعَةِ؟ فَاخْتَرْتُ الشَّفَاعَةَ. رَوَاهُ ابْنُ أَبِي عَاصِمٍ.

11 : أخرجه ابن أبي عاصم في السنة، 2 / 397، الرقم : 829.

’’حضرت عوف بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : ہم کسی سفر میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ تھے تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا : بے شک جبرئیل نے مجھے آ کر بتایا کہ میرے رب نے مجھے دو خصلتوں میں اختیار دیا : چاہے میری آدھی امت بغير حساب کے جنت میں داخل کر دے یا شفاعت کا حق اختیار کروں؟ پس میں نے شفاعت کو اختیار کر ليا۔‘‘

اسے امام ابنِ ابی عاصم نے روایت کیا ہے۔

Copyrights © 2019 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved