Charter of Guidance for the Muslim Umma Derived from the Qur’an and Hadith (vol. I)

فصل 19 :نفلی روزوں کی فضیلت کا بیان

فَصْلٌ فِي فَضْلِ صِیَامِ التَّطَوُّعِ

{نفلی روزوں کی فضیلت کا بیان}

اَلْأَحَادِيْثُ النَّبَوِيَّةُ

1۔ فَضْلُ صِیَامِ الشَّوَّالِ

{شوال کے روزوں کی فضیلت}

1۔ عَنْ أَبِي أَیُّوْبَ الْأَنْصَارِيِّ رضی الله عنه : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ : مَنْ صَامَ رَمَضَانَ، ثُمَّ أَتْبَعَهُ سِتًّا مِنْ شَوَّالٍ کَانَ کَصِیَامِ الدَّھْرِ۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ۔

1 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : استحباب صوم ستۃ أیام من شوال إتباعا لرمضان، 2 / 822، الرقم / 1164، والترمذي في السنن، کتاب : الصوم، باب : ما جاء في صیام ستۃ أیام من شوال 3 / 132، الرقم : 759، وأبو داود في السنن، کتاب : الصوم، باب : في صوم ستۃ أیام من شوال، 2 / 324، الرقم : 2433۔

’’حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جس شخص نے رمضان المبارک کے روزے رکھے، پھر اس کے بعد شوال کے چھ روزے رکھے گویا اس نے عمر بھر کے روزے رکھے۔‘‘ اس حدیث کو امام مسلم نے روایت کیا ہے۔

2۔ عَنْ ثَوْبَانَ رضی الله عنه عَنْ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ قَالَ : جَعَلَ اللهُ الْحَسَنَةَ بِعَشْرٍ فَشَھْرٌ بِعَشْرَةِ أَشْھُرٍ وسِتَّةُ أَيَّامٍ بَعْدَ الْفِطْرِ تَمَامُ السَّنَةِ۔

وَفِي رِوَایَةٍ : وَصِیَامُ شَھْرِ رَمَضَانَ بِعَشْرَةِ أَشْھُرٍ وَصِیَامُ سِتَّةِ أَيَّامٍ بِشَھْرَيْنِ فَذَلِکَ صِیَامُ سَنَةٍ۔ رَوَاهُ النَّسَائِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ وَابْنُ مَاجَه وَابْنُ خُزَيْمَةَ

2 : أخرجه ابن ماجه في السنن، کتاب : الصیام، باب : صیام ستۃ أیام من شوال، 1 / 547، الرقم : 1715، وأحمد بن حنبل في المسند، 5 / 280، الرقم : 22465، والنسائي في السنن الکبری، 2 / 162، 163، الرقم : 2860، 2861، وابن خزیمۃ في الصحیح، 3 / 298، الرقم : 2115۔

’’حضرت ثوبان صسے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : اللہ تعالیٰ ایک نیکی کو دس گنا کر دیتا ہے۔ رمضان کا ایک مہینہ دس مہینے کے برابر ہے اور عید الفطر کے بعد چھ دن (روزہ رکھنے سے) سال کا ثواب پورا ہو جاتا ہے۔

دوسری روایت میں ہے کہ ماہ رمضان کے روزے دس مہینوں کے برابر ہیں اور چھ دن کے روزے دو ماہ کے برابر ہیں۔ اس طرح پورے سال کے روزے بن جاتے ہیں۔‘‘

امام نسائی، ابن ماجہ اور ابن خزیمہ نے اسے روایت کیا ہے اور یہ الفاظ نسائی کے ہیں۔

3۔ عَنِ ابْنِ عُمَرَ رضي الله عنهما قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : مَنْ صَامَ رَمَضَانَ وَأَتْبَعَهُ سِتًّا مِنْ شَوَّالَ خَرَجَ مِنْ ذُنُوْبِهِ کَیَوْمٍ وَلَدَتْهُ أُمُّهُ۔ رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ فِي الْأَوْسَطِ۔

3 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 8 / 275، الرقم : 8622، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 67، الرقم : 1515، والھیثمي في مجمع الزوائد، 3 / 184۔

’’حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جو شخص رمضان المبارک کے روزے رکھے اور اس کے بعد شوال کے چھ روزے رکھے وہ اپنے گناہوں سے ایسے پاک ہو جاتا ہے جیسے وہ پیدائش کے دن تھا۔‘‘ اسے امام طبرانی نے ’’المعجم الأوسط‘‘ میں روایت کیا ہے۔

2۔ فَضْلُ صِیَامِ شَعْبَانَ وَنِصْفٍ مِّنْ شَعْبَانَ

{شعبان اور نصف شعبان کے روزوں کی فضیلت}

1۔ عَنْ أُسَامَةَ بْنِ زَيْدٍ رضي الله عنهما قَالَ : قُلْتُ : یَا رَسُوْلَ اللهِ، لَمْ أَرَکَ تَصُوْمُ شَھْرًا مِنَ الشُّھُوْرِ مَا تَصُوْمُ مِنْ شَعْبَانَ؟ قَالَ : ذَالِکَ شَھْرٌ یَغْفُلُ النَّاسُ عَنْهُ بَيْنَ رَجَبٍ وَرَمَضَانَ وَھُوَ شَھْرٌ تُرْفَعُ فِيْهِ الأَعْمَالُ إِلَی رَبِّ الْعَالَمِيْنَ فَأُحِبُّ أَنْ یُرْفَعَ عَمَلِي وَأَنَا صَائِمٌ۔ رَوَاهُ النَّسَائِيُّ وَأَحْمَدُ۔

1 : أخرجه النسائي في السنن، کتاب : الصیام، باب : صوم النبي ﷺ بأبي ھو وأمّي وذکر اختلاف الناقلین للخبر في ذلک، 4 / 201، الرقم : 2357، وأحمد بن حنبل في المسند، 5 / 201، الرقم : 21801، والطحاوي في شرح معاني الآثار، 2 / 82، وابن أبي شیبۃ في المصنف، 2 / 346، الرقم : 9765۔

’’حضرت اُسامہ بن زید رضی اللہ عنہما روایت کرتے ہیں کہ میں نے عرض کیا : یا رسول اللہ! جس قدر آپ شعبان میں روزے رکھتے ہیں اس قدر میں نے آپ کو کسی اور مہینے میں روزے رکھتے ہوئے نہیں دیکھا؟ آپ ﷺ نے فرمایا : یہ ایک ایسا مہینہ ہے جو رجب اوررمضان کے درمیان میں (آتا) ہے اور لوگ اس سے غفلت برتتے ہیں حالانکہ اس مہینے میں (پورے سال کے) عمل اللہ تعالیٰ کی طرف اٹھائے جاتے ہیں لهٰذا میں چاہتا ہوں کہ میرے عمل روزہ دار ہونے کی حالت میں اُٹھائے جائیں۔‘‘

اس حدیث کو امام نسائی اور احمد نے روایت کیا ہے۔

2۔ عَنْ أَنَسٍ رضی الله عنه قَالَ : سُئِلَ النَّبِيُّ ﷺ : أَيُّ الصَّوْمِ أَفْضَلُ بَعْدَ رَمَضَانَ؟ فَقَالَ : شَعْبَانُ لِتَعْظِيْمِ رَمَضَانَ۔ قِيْلَ : فَأَيُّ الصَّدَقَةِ أَفْضَلُ؟ قَالَ : صَدَقَةٌ فِي رَمَضَانَ۔ رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ، وَالْبَيْهَقِيُّ۔

2 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الزکاۃ، باب : ما جاء في فضل الصدقۃ، 3 / 51، الرقم : 663، والبیهقي في السنن الکبری، 4 / 305، الرقم : 8300، وفي شعب الإیمان، 3 / 377، الرقم : 3819، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 72، الرقم : 1539، والمناوي في فیض القدیر، 2 / 43۔

’’حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ سے پوچھا گیا کہ رمضان المبارک کے بعد کس مہینے میں روزے افضل ہیں؟ آپ ﷺ نے فرمایا : تعظیم رمضان کے لیے شعبان کے روزے رکھنا (افضل ہیں)۔ پوچھا گیا کہ کون سا صدقہ افضل ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا : رمضان المبارک میں صدقہ دینا (افضل ہے)۔‘‘ اس حدیث کو امام ترمذی اور بیہقی نے روایت کیا ہے۔

3۔ عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ : رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : إِذَا کَانَتْ لَيْلَةُ النِّصْفِ مِنْ شَعْبَانَ، فَقُوْمُوْا لَيْلَھَا وَصُوْمُوْا نَھَارَھَا۔ فَإِنَّ اللهَ یَنْزِلُ فِيْھَا لِغُرُوْبِ الشَّمْسِ إِلَی سَمَاءِ الدُّنْیَا فَیَقُوْلُ : أَلاَ مِنْ مُسْتَغْفِرٍ لِي فَأَغْفِرَ لَهُ؟ أَلَا مِنْ مُسْتَرْزِقٍ فَأَرْزُقَهُ؟ أَلاَ مُبْتَلًی فَأُعَافِیَهُ؟ أَلَا کَذَا أَ لَا کَذَا؟ حَتَّی یَطْلُعَ الْفَجْرُ۔ رَوَاهُ ابْنُ مَاجَه۔

3 : أخرجه ابن ماجه في السنن، کتاب : إقامۃ الصلاۃ والسنۃ فیھا، باب : ما جاء في لیلۃ النصف من شعبان، 1 / 444، الرقم : 1388، والکناني في مصباح الزجاجۃ، 2 / 10، الرقم : 491، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 74، الرقم : 1550۔

’’حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جب پندرہ شعبان کی رات ہو تو اس رات کو قیام کیا کرو اور دن کو روزہ رکھا کرو کیونکہ اللہ تعالیٰ غروب آفتاب کے وقت آسمانِ دنیا پر نزول فرماتا ہے اور اعلان فرماتا ہے : کیا کوئی میری بخشش کا طالب ہے کہ میں اسے بخش دوں؟ کیا کوئی رزق مانگنے والا ہے کہ میں اسے رزق دوں؟ کیا کوئی بیمار ہے کہ میں اسے شفا دوں؟ کیا کوئی ایسے ہے؟ ایسے ہے؟ یہاں تک کہ فجر طلوع ہو جاتی ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ نے روایت کیا ہے۔

4۔ عَنْ مُعَاذِ ابْنِ جَبَلٍ رضی الله عنه عَنِ النَّبِيِّ ﷺ قَالَ یَطْلَعُ اللهُ إِلَی خَلْقِهِ فِي لَيْلَةِ النِّصْفِ مِنْ شَعْبَانَ فَیَغْفِرُ لِجَمِيْعِ خَلْقِهِ إِلَّا لِمُشْرِکٍ أوْ مُشَاحِنٍ۔ رَوَاهُ ابْنُ حِبَّانَ۔

4 : أخرجه ابن حبان في الصحیح، 12 / 481، الرقم : 5665۔

’’حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : اللہ تعالیٰ نصف شعبان کی رات اپنی مخلوق پر نظر رحمت فرماتا ہے اور مشرک اور کینہ پرور کے سوا ہر کسی کو معاف فرما دیتا ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن حبان نے روایت کیا ہے۔

3۔ فَضْلُ صِیَامِ الْمُحَرَّمِ وَیَوْمِ الْعَاشُوْرَاءِ

{ماہ محرم اور یومِ عاشوراء کے روزوں کی فضیلت}

1۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : أَفْضَلُ الصِّیَامِ بَعْدَ رَمَضَانَ، شَهْرُ اللهِ الْمُحَرَّمُ۔ وَأَفْضَلُ الصَّلَاةِ بَعْدَ الْفَرِيْضَةِ، صَلَاةُ اللَّيْلِ۔

رَوَاهُ مُسْلِمٌ، وَالتِّرْمِذِيُّ، وَالنَّسَائِيُّ۔

1 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : فضل صوم المحرم، 2 / 821، الرقم : 1163، والترمذي في السنن، کتاب : الصلاۃ، باب : ما جاء في فضل صلاۃ اللیل، 2 / 301، الرقم : 438، والنسائي في السنن، کتاب : قیام اللیل وتطوع النهار، باب : فضل صلاۃ اللیل، 3 / 206، الرقم : 1613۔

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : رمضان کے بعد سب سے افضل روزے اللہ کے مہینے محرم کے ہیں اور فرض نماز کے بعد سب سے افضل نماز تہجد کی نماز ہے۔‘‘

اس حدیث کو امام مسلم، ترمذی اور نسائی نے روایت کیا ہے۔

2۔ عَنْ أَبِي قَتَادَةَ رضی الله عنه أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ سُئِلَ عَنْ صَوْمِ یَوْمِ عَاشُوْرَاءَ؟ فَقَالَ : یُکَفِّرُ السَّنَةَ الْمَاضِیَةَ۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ۔

2 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : استحباب صیام ثلاثۃ أیام من کل شھر وصوم یوم عرفۃ وعاشورائ، 2 / 819، الرقم : 1162، والترمذي في السنن، کتاب : الصوم، باب : ما جاء في الحث علی صوم یوم عاشورائ، 3 / 126، الرقم : 752، وأبوداود في السنن، کتاب : الصیام، باب : في صوم الدھر تطوعا، 2 / 321، الرقم : 2425۔

’’حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ سے عاشوراء کے روزے کے متعلق پوچھا گیا تو آپ ﷺ نے فرمایا : یہ گزشتہ سال کے گناہوں کو مٹا دیتا ہے۔‘‘

اس حدیث کو امام مسلم نے روایت کیا ہے۔

3۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه قَالَ : جَاءَ رَجُلٌ إِلَی النَّبِيِّ ﷺ فَقَالَ : أَيُّ الصِّیَامِ أَفْضَلُ بَعْدَ شَهْرِ رَمَضَانَ؟ قَالَ : شَهْرُ اللهِ الَّذِي تَدْعُوْنَهُ الْمُحَرَّمَ۔

رَوَاهُ ابْنُ مَاجَه، وَأَحْمَدُ، وَالدَّارِمِيُّ۔

3 : أخرجه ابن ماجه في السنن، کتاب : الصیام، باب : صیام أشهر المحرم، 1 / 554، الرقم : 1742، وأحمد بن حنبل في المسند، 2 / 329، الرقم : 8340، والدارمي في السنن، 2 / 35، الرقم : 1757، والنسائي في السنن الکبری، 2 / 117، الرقم : 2904، والطبراني في المعجم الأوسط، 6 / 281، الرقم : 6417۔

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک شخص بارگاہ نبوی میں حاضر ہوا اور عرض کرنے لگا کہ ماہ رمضان کے بعد افضل ترین روزے کون سے ہیں (یعنی کس مہینے کے ہیں)؟ آپ ﷺ نے فرمایا : اللہ کا وہ ماہ جسے تم محرم کہتے ہو (کے روزے سب سے افضل ہیں)۔‘‘

اس حدیث کو امام ابن ماجہ، احمد اور دارمی نے روایت کیا ہے۔

4۔ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رضي الله عنهما قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : مَنْ صَامَ یَوْمَ عَرَفَةَ کَانَ لَهُ کَفَّارَةَ سَنَتَيْنِ وَمَنْ صَامَ یَوْمًا مِنَ الْمُحَرَّمِ فَلَهُ بِکُلِّ یَوْمٍ ثَـلَاثُوْنَ یَوْمًا۔

رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ بِإِسْنَادٍ لَا بَأْسَ بِهِ۔

4 : أخرجه الطبراني في المعجم الصغیر، 2 / 164، الرقم : 963، وفي المعجم الکبیر، 11 / 72، الرقم : 11081، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 70، الرقم : 1529، والھیثمي في مجمع الزوائد، 3 / 190۔

’’حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جو شخص یو م عرفہ کا روزہ رکھتا ہے وہ اس کے لیے دو سال کے گناہوں کا کفارہ ہوتا ہے اور جو شخص محرم کے ایک دن کا روزہ رکھتا ہے اسے ہر دن کے بدلے تیس دن (کے روزوں) کا ثواب ملتا ہے۔‘‘

اسے امام طبرانی نے ناقابل اعتراض سند کے ساتھ بیان کیا ہے۔

4۔ فَضْلُ صِیَامِ یَوْمِ عَرَفَةَ

{یومِ عرفہ کے روزہ کی فضیلت}

1۔ عَنْ أَبِي قَتَادَةَ رضی الله عنه قَالَ : سُئِلَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ عَنْ یَوْمِ عَرَفَةَ فَقَالَ : یُکَفِّرُ السَّنَةَ الْمَاضِیَةَ وَالْبَاقِیَةَ۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ۔

وَفِي رِوَایَةٍ لِلتِّرْمِذِيِّ : صِیَامُ یَوْمِ عَرَفَةَ إِنِّي أَحْتَسِبُ عَلَی اللهِ أَنْ یُکَفِّرَ السَّنَةَ الَّتِي بَعْدَهُ وَالسَّنَةَ الَّتِي قَبْلَهُ۔

1 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : استحباب صیام ثلاثۃ أیام من کل شھر وصوم یوم عرفۃ، 2 / 819، الرقم : 1162، والترمذي في السنن، کتاب : الصوم، باب : ما جاء في فضل صوم یوم عرفۃ، 3 / 124، وقال أبوعیسی : حدیث أبي قتادۃ حدیث حسن، الرقم : 749، وأبوداود في السنن، کتاب : الصوم، باب : في صوم الدھر تطوعا، 2 / 321، الرقم : 2425۔

’’حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ سے یوم عرفہ (نویں ذو الحجہ کے روزہ) کے متعلق پوچھا گیا تو آپ ﷺ نے فرمایا : (یوم عرفہ کا روزہ) گزشتہ اور آئندہ سال کے گناہوں کا کفارہ ہے۔‘‘ اسے مسلم نے روایت کیا ہے۔

ترمذی کی روایت کے الفاظ ہیں : ’’یوم عرفہ کے روزہ کے متعلق مجھے اللہ تعالیٰ سے امید ہے کہ وہ اسے گزشتہ اور آئندہ سال کا کفارہ بنا دیتا ہے۔‘‘

2۔ عَنْ قَتَادَةَ بْنِ النُّعْمَانِ رضی الله عنه قَالَ : سَمِعْتُ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ یَقُوْلُ : مَنْ صَامَ یَوْمَ عَرَفَةَ، غُفِرَ لَهُ سَنَةٌ أَمَامَهُ وَسَنَةٌ بَعْدَهُ۔ رَوَاهُ ابْنُ مَاجَه، وَالنَّسَائِيُّ، وَأَبُوْ یَعْلَی۔

2 : أخرجه ابن ماجه في السنن، کتاب : الصیام، باب صیام یوم عرفۃ، 1 / 551، الرقم : 1731، والنسائي في السنن الکبری، 2 / 151، الرقم : 2801، وأبو یعلي في المسند، 13 / 542، الرقم : 7548، والطبراني في المعجم الکبیر، 6 / 179، الرقم : 5923۔

’’حضرت قتادہ بن نعمان رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضور نبی اکرم ﷺ کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص یومِ عرفہ کا روزہ رکھتا ہے اس کے ایک پچھلے سال کے اور ایک بعد والے سال کے گناہ معاف ہو جاتے ہیں۔‘‘ اس حدیث کو امام ابن ماجہ، نسائی اور ابو یعلی نے روایت کیا ہے۔

3۔ عَنْ سَھْلِ بْنِ سَعْدٍ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : مَنْ صَامَ یَوْمَ عَرَفَةَ غُفِرَ لَهُ ذَنْبُ سَنَتَيْنِ مُتَتَابِعَتَيْنِ۔ رَوَاهُ أَبُوْ یَعْلَی، وَالطَّبَرَانِيُّ۔

3 : أخرجه أبو یعلی في المسند، 13 / 542، الرقم : 7548، والطبراني في المعجم الکبیر، 6 / 179، الرقم : 5923، وعبد بن حمید في المسند، 1 / 170، الرقم : 464، والھیثمي في مجمع الزوائد، 3 / 189، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 68، الرقم : 1519۔

’’حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جو شخص یوم عرفہ کا روزہ رکھتا ہے اس کے دو سالوں کے گناہ معاف ہو جاتے ہیں۔‘‘

اس حدیث کو امام ابو یعلی اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

4۔ عَنْ عَائِشَةَ رضي الله عنها قَالَتْ : کَانَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ یَقُوْلُ : صِیَامُ یَوْمِ عَرَفَةَ کَصِیَامِ أَلْفِ یَوْمٍ۔ رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ وَالْبَيْھَقِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ۔

4 : أخرجه الطبراني في المعجم الأوسط، 7 / 44، الرقم : 6802، والبیهقي في شعب الإیمان، 3 / 357، الرقم : 3764، وابن عبد البر في التمهید، 12 / 158، وذکره المنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 69، الرقم : 1522، والسیوطي في الدر المنثور، 1 / 154۔

’’حضرت عائشہ بیان کرتی ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ فرمایا کرتے تھے کہ یوم عرفہ کا روزہ ہزار دن کے روزوں کی طرح ہے۔‘‘

اس حدیث کو امام طبرانی اور بیہقی نے روایت کیا ہے، اور مذکورہ الفاظ امام بیہقی کے ہیں۔

5۔ فَضْلُ صِیَامِ یَوْمِ الْاِثْنَيْنِ وَالْخَمِيْسِ

{پیر اور جمعرات کے روزوں کی فضیلت}

1۔ عَنْ أَبِي قَتَادَةَ رضی الله عنه : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ سُئِلَ عَنْ صَوْمِ یَوْمِ الاِثْنَيْنِ؟ قَالَ : ذَاکَ یَوْمٌ وُلِدْتُ فِيْهِ، وَیَوْمٌ بُعِثْتُ، أَوْ أُنْزِلَ عَلَيَّ فِيْهِ۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ۔

1 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : استحباب صیام ثلاثۃ أیام من کل شهر وصوم یوم عرفۃ وعاشوراء والاثنین والخمیس، 2 / 819، الرقم : 1162، والنسائي في السنن الکبری، 2 / 146، الرقم : 2777، وأحمد بن حنبل في المسند، 5 / 297، الرقم : 22594۔

’’حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ سے سوموار کے روزے کے متعلق پوچھا گیا تو آپ ﷺ نے فرمایا : یہ وہ دن ہے جس میں میری ولادت باسعادت ہوئی اور اسی دن میں مبعوث ہوا یا مجھ پر قرآن نازل ہوا۔‘‘ اس حدیث کو امام مسلم نے روایت کیا ہے۔

2۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه رَفَعَهُ مَرَّةً قَالَ : تُعْرَضُ الْأَعْمَالُ فِي کُلِّ یَوْمِ خَمِيْسٍ وَاثْنَيْنِ۔ فَیَغْفِرُ اللهُ عزوجل فِي ذَلِکَ الْیَوْمِ لِکُلِّ امْرِءٍ لَا یُشْرِکُ بِاللهِ شَيْئًا۔ إِلَّا امْرَأً کَانَتْ بَيْنَهُ وَبَيْنَ أَخِيْهِ شَحْنَاءُ۔ فَیُقَالُ : ارْکُوْا هَذَيْنِ حَتَّی یَصْطَلِحَا، ارْکُوْا هَذَيْنِ حَتَّی یَصْطَلِحَا۔ رَوَاهُ مُسْلِمٌ، وَمَالِکٌ، وَأَحْمَدُ۔

وَفِي رِوَایَةٍ أُخْرَی : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ : تُفْتَحُ أَبْوَابُ الْجَنَّةِ یَوْمَ الْاِثْنَيْنِ، وَیَوْمَ الْخَمِيْسِ۔ فَیُغْفَرُ لِکُلِّ عَبْدٍ لَا یُشْرِکُ بِاللهِ شَيْئًا۔ إِلَّا رَجُلًا کَانَتْ بَيْنَهُ وَبَيْنَ أَخِيْهِ شَحْنَائُ فَیُقَالُ : أَنْظِرُوْا هَذَيْنِ حَتَّی یَصْطَلِحَا۔ أَنْظِرُوْا هَذَيْنِ حَتَّی یَصْطَلِحَا، أَنْظِرُوْا هَذَيْنِ حَتَّی یَصْطَلِحَا۔

2 : أخرجه مسلم في الصحیح، کتاب : البر والصلۃ والآداب، باب : النهي عن الشحناء والتهاجر، 4 / 1987، الرقم : 2565، ومالک في الموطأ، کتاب : حسن الخلق، باب : ما جاء في المھاجرۃ، 2 / 909، الرقم : 1916، وأحمد بن حنبل في المسند، 2 / 389، الرقم : 9041۔

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے مرفوعاً بیان کیا کہ ہر پیر اور جمعرات کو اعمال پیش کیے جاتے ہیں۔ اس دن اللہ تعالیٰ ہر اس شخص کی مغفرت فرما دیتا ہے جو اللہ تعالیٰ کے ساتھ کسی کو شریک نہیں کرتا، سوائے اس شخص کے جو اپنے بھائی کے ساتھ کینہ رکھتا ہے،ان کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ان کو (اُن کے حال پر)چھوڑ دو حتی کہ یہ صلح کر لیں، ان کو چھوڑ دو حتی کہ یہ صلح کر لیں۔‘‘

اس حدیث کو امام مسلم، مالک اور احمد نے روایت کیا ہے۔

’’امام مسلم کی دوسری روایت میں ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : پیر اور جمعرات کے دن جنت کے دروازے کھول دئیے جاتے ہیں اور ہر اس بندے کی مغفرت کر دی جاتی ہے جو اللہ تعالیٰ کے ساتھ کسی کو شریک نہیں بناتا، سوائے اس بندے کے جو اپنے بھائی کے ساتھ کینہ رکھتا ہو اور یہ کہا جاتا ہے کہ ان کو مہلت دو حتی کہ یہ صلح کر لیں، ان کو مہلت دو حتیٰ کہ یہ صلح کر لیں۔ ان کو مہلت دو حتیٰ کہ یہ صلح کر لیں۔‘‘

3۔ عَنْ أَبِي ھُرَيْرَةَ رضی الله عنه أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ : تُعْرَضُ الأَعْمَالُ یَوْمَ الاِثْنَيْنِ وَالْخَمِيْسِ فَأُحِبُّ أَنْ یُعْرَضَ عَمَلِي وَأَنَا صَائِمٌ۔

رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ، وَقَالَ : حَدِيْثٌ حَسَنٌ۔

3 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الصوم، باب : ما جاء في صوم یوم الاثنین والخمیس، 3 / 122، الرقم : 747، وفي الشمائل المحمدیۃ، 1 / 252، الرقم : 308، وعبد الرزاق في المصنف، 4 / 314، الرقم : 7917، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 78، الرقم : 1569، والسعدي في فضائل الأعمال، 1 / 48، الرقم : 194، والنووي في ریاض الصالحین، 1 / 292۔

’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : سوموار اور جمعرات کو اعمال (بارگاهِ الٰہی میں) پیش کئے جاتے ہیں۔ میں چاہتا ہوں کہ میرا عمل روزے کی حالت میں پیش ہو۔‘‘ اس حدیث کو امام ترمذی نے روایت کیا ہے نیز کہتے ہیں کہ یہ حدیث حسن ہے۔

6۔ ثَوَابُ مَنْ صَامَ الأَيَّامَ الْبِيْضَ

{اَیامِ بیض کے روزے رکھنے کا ثواب}

1۔ عَنْ قَتَادَةَ بْنِ مِلْحَانَ رضی الله عنه قَالَ : کَانَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ یَأْمُرُنَا أَنْ نَصُوْمَ الْبِيْضَ ثَـلَاثَ عَشْرَةَ وَأَرْبَعَ عَشْرَةَ وَخَمْسَ عَشْرَةَ قَالَ : وَقَالَ : ھُنَّ کَھَيْئَةِ الدَّھْرِ۔ رَوَاهُ أَبُوْ دَاوُدَ وَابْنُ مَاجَه۔

1 : أخرجه أبو داود في السنن، کتاب : الصوم، باب : في الصوم الثلاث من کل شهر، 2 / 328، الرقم : 2449، وابن ماجه في السنن، کتاب : الصیام، باب : ما جاء في صیام الدھر، 1 / 544، الرقم : 11707، وأحمد بن حنبل في المسند، 5 / 28۔

’’حضرت قتادہ بن ملحان رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ ہمیں ایام بیض (یعنی ہرماہ کی) تیرہ، چودہ اور پندرہ تاریخ کے روزے رکھنے کا حکم دیا کرتے تھے اور فرماتے کہ یہ عمر بھر روزے رکھنے کے برابر ہیں۔‘‘ اس حدیث کو امام ابو داود اور ابن ماجہ نے روایت کیا۔

2۔ عَنْ جَرِيْرٍ رضی الله عنه عَنِ النَّبِيِّ ﷺ قَالَ : صِیَامُ ثَـلَاثَةِ أَيَّامٍ مِنْ کُلِّ شَھْرٍ صِیَامُ الدَّھْرِ وَأَيَّامُ الْبِيْضِ صَبِيْحَةَ ثَـلَاثَ عَشْرَةَ وَأَرْبَعَ عَشْرَةَ وَخَمْسَ عَشْرَةَ۔

رَوَاهُ النَّسَائِيُّ بِإِسْنَادٍ صَحِيْحٍ۔

2 : أخرجه النسائي في السنن، کتاب : الصیام، باب : کیف یصوم ثلاثۃ أیام من کل شھر، 4 / 221، الرقم : 2420، وفي السنن الکبری، 2 / 136، الرقم : 2728، وأبو یعلی في المسند، 13 / 492، الرقم : 7504، والطبراني في المعجم الکبیر، 2 / 356، الرقم : 2499۔

’’حضرت جریر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضورنبی اکرم ﷺ نے فرمایا : ہر ماہ تین دن کے روزے عمر بھر کے روزوں کے برابر ہیں اور وہ تین دن ایام بیض یعنی تیرہ، چودہ اور پندرہ تاریخ ہے۔‘‘

اسے امام نسائی نے صحیح سند کے ساتھ ذکر کیاہے۔

7۔ فَضْلُ مَنْ صَامَ مِنْ کُلِّ شَھْرٍ ثَـلَاثَةَ أَيَّامٍ

{ہر ماہ تین روزے رکھنے کی فضیلت کا بیان}

1۔ عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ قَالَ : قَالَ لِي رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : أَلَمْ أُنَبَّأْ أَنَّکَ تَقُوْمُ اللَّيْلَ وَتَصُوْمُ النَّهَارَ؟ فَقُلْتُ : نَعَمْ فَقَالَ : فَإِنَّکَ إِذَا فَعَلْتَ ذَلِکَ هَجَمَتِ الْعَيْنُ، وَنَفِهَتِ النَّفْسُ۔ صُمْ مِنْ کُلِّ شَهْرٍ ثَـلَاثَةَ أَيَّامٍ، فَذَلِکَ صَوْمُ الدَّهْرِ، أَوْ کَصَوْمِ الدَّهْرِ، قُلْتُ : إِنِّي أَجِدُ بِي۔ قَالَ مِسْعَرٌ : یَعْنِي قُوَّةً قَالَ : فَصُمْ صَوْمَ دَاوُدَ علیه السلام وَکَانَ یَصُوْمُ یَوْمًا، وَیُفْطِرُ یَوْمًا، وَلَا یَفِرُّ إِذَا لَاقَی۔ مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔

1 : أخرجه البخاري في الصحیح، کتاب : الأنبیاء، باب : قول الله تعالی وآتینا داود زبورا، 3 / 1253، الرقم : 3237، ومسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : النهي عن صوم الدھر لمن تضرر به، 2 / 817، الرقم : 1159، والبزار في المسند، 6 / 380، الرقم : 2399، والنسائي في السنن الکبری، 2 / 130، الرقم : 2705، والبیهقي في السنن الکبری،4 / 299، الرقم : 8256۔

’’حضرت عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے مجھ سے فرمایا : کیا میں تمہیں (ایسی چیز) نہ بتاوں جس سے تم دن کو ہمیشہ روزہ رکھنے والے اور راتوں کو ہمیشہ قیام کرنے والے شمار ہو جاؤ؟ میں عرض گزار ہوا : ضرور بتائیے، فرمایا : اگر واقعتاً تم وہی کرو(یعنی دن کو ہمیشہ روزہ رکھو اور راتوں کو ہمیشہ قیام کرو) تو آنکھیں کمزور ہو جائیں گی اور حوصلہ ڈھا بیٹھو گے۔ یوں کرو کہ ہر مہینے میں تین روزے رکھ لیا کرو۔ یہ ہمیشہ روزہ رکھنے والی بات ہو جائے گی یا ایسی بات ہو جائے گی جیسے ہمیشہ روزے رکھے۔ میں عرض گزار ہوا کہ میں اپنے اندر (یہ ہمت) پاتا ہوں۔ مسعر کا قول ہے کہ اس مراد ہے طاقت پاتا ہوں۔ ارشاد فرمایا : تو پھرداؤدی روزہ رکھ لو کہ وہ ایک دن روزہ رکھتے اور دوسرے دن چھوڑ دیتے، اور وہ دشمن سے مقابلہ کے وقت بھاگنے والے نہیں تھے۔‘‘ یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

2۔ عَنْ أَبِي ذَرٍّ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ الله ﷺ : مَنْ صَامَ مِنْ کُلِّ شَھْرٍ ثَـلَاثَةَ أَيَّامٍ فَذَلِکَ صِیَامُ الدَّھْرِ فَأَنْزَلَ اللهُ عزوجل تَصْدِيْقَ ذَلِکَ فِي کِتَابِهِ : {مَنْ جَائَ بِالْحَسَنَةِ فَلَهُ عَشْرُ أَمْثَالِھَا} [الأنعام، 6 : 160] الْیَوْمُ بِعَشْرَةِ أَيَّامٍ۔

رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ، وَابْنُ مَاجَه۔

2 : أخرجه الترمذي في السنن، کتاب : الصوم، باب : ما جاء في صوم ثلاثۃ أیام من کل شھر، 3 / 135، الرقم : 762، وابن ماجه في السنن، کتاب الصیام، باب : ما جاء في صیام ثلاثۃ أیام من کل شھر، 1 / 545، الرقم : 1708، والمنذري في الترغیب والترھیب، 2 / 75، الرقم : 1559۔

’’حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : جو شخص ہر ماہ تین روزے رکھتا ہے، گویا وہ عمر بھر روزہ رکھتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اس کی تصدیق قرآن مجید میں نازل فرمائی ہے کہ {جو شخص کوئی ایک نیکی لے کر آتا ہے پس اس کے لیے دس گنا ہے۔} لهٰذا ایک دن دس دن کے برابر ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام ترمذی اور ابن ماجہ نے روایت کیا ہے۔

3۔ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُرَحْبِيْلَ عَنْ رَجُلٍ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ ﷺ قَالَ : قِيْلَ لِلنَّبِيِّ ﷺ : رَجُلٌ یَصُوْمُ الدَّھْرَ قَالَ : وَدِدْتُ أَنَّهُ لَمْ یَطْعَمِ الدَّھْرَ قَالُوْا : فَثُلُثَيْهِ؟ قَالَ : أَکْثَرَ قَالُوْا : فَنِصْفَهُ قَالَ : أَکْثَرَ ثُمَّ قَالَ : أَ لَا أُخْبِرُکُمْ بِمَا یُذْھِبُ وَحَرَ الصَّدْرِ؟ صَوْمُ ثَـلَاثَةِ أَيَّامٍ مِنْ کُلِّ شَھْرٍ۔ رَوَاهُ النَّسَائِيُّ۔

3 : أخرجه النسائي في السنن ، کتاب : الصوم، باب : صوم ثلثی الشھر وذکر اختلاف الناقلین للخبر، 4 / 208، الرقم : 2385، وفي السنن الکبری، 2 / 126، الرقم : 2693، وعبد الرزاق في المصنف، 4 / 296، الرقم : 7867، وابن أبي شیبۃ في المصنف، 2 / 328، الرقم : 9555۔

’’عمرو بن شرحبیل ایک صحابیِ رسول اللہ ﷺ سے روایت کرتے ہیں کہ حضورنبی اکرم ﷺ سے اُس آدمی کے متعلق پوچھا گیا جو عمر بھر روزہ رکھنا چاہتا ہے۔ آپ ﷺ نے فرمایا : میں خیال کرتا ہوں کہ اس نے عمر بھر نہیں کھایا(یعنی یہ روزے بہت زیادہ ہیں)۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے عرض کیا : عمر کے دو تہائی حصے کے متعلق کیاخیال ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا : یہ بھی زیادہ ہے۔ پھر فرمایا : کیا میں تمہیں ایسا روزہ نہ بتاؤں جو سینے کا کینہ اور وسوسے ختم کر دیتا ہے؟ ہر ماہ تین دن روزہ رکھا کرو۔‘‘

اس حدیث کو امام نسائی نے روایت کیا ہے۔

8۔ فَضْلُ مَنْ صَامَ یَوْمًا وَأَفْطَرَ یَوْمًا

{ایک دن روزہ اور ایک دن افطار کرنے والے کی فضیلت کا بیان}

1۔ عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو قَالَ : قَالَ لِي رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : یَا عَبْدَ اللهِ بْنَ عَمْرٍو، بَلَغَنِي أَنَّکَ تَصُوْمُ النَّهَارَ وَتَقُوْمُ اللَّيْلَ۔ فَـلَا تَفْعَلْ۔ فَإِنَّ لِجَسَدِکَ عَلَيْکَ حَظًّا۔ وَلِعَيْنِکَ عَلَيْکَ حَظًّا۔ وَإِنَّ لِزَوْجِکَ عَلَيْکَ حَظًّا۔ صُمْ وَأَفْطِرْ۔ صُمْ مِنْ کُلِّ شَهْرٍ ثَـلَاثَةَ أَيَّامٍ؛ فَذَلِکَ صَوْمُ الدَّهْرِ، قُلْتُ : یَا رَسُوْلَ اللهِ، إِنَّ بِي قُوَّةً قَالَ : فَصُمْ صَوْمَ دَاوُدَ علیه السلام صُمْ یَوْمًا وَأَفْطِرْ یَوْمًا فَکَانَ یَقُوْلُ : یَا لَيْتَنِي! أَخَذْتُ بِالرُّخْصَةِ۔ مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔ وهَذَا َلَفْظُ مُسْلِمٍ۔

1 : أخرجه البخاري في الصحیح، کتاب : الأنبیاء، باب : قول الله تعالی وآتینا داود زبورا، 3 / 1253، الرقم : 3237، ومسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : النهي عن صوم الدھر لمن تضرر به، 2 / 817، الرقم : 1159، وأحمد بن حنبل في المسند، 2 / 194، الرقم : 6832۔

’’حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے مجھ سے فرمایا : اے عبد اللہ بن عمرو! مجھے یہ خبر پہنچی ہے کہ تم دن میں روزہ رکھتے ہو اور ساری رات قیام کرتے ہو، تم ایسا نہ کیا کرو، کیونکہ تمہارے جسم کا تم پر حق ہے، تمہاری آنکھوں کا تم پر حق ہے اور تمہاری بیوی کا تم پر حق ہے، روزہ بھی رکھو اور افطار بھی کرو اور ہر مہینہ میں تین روزے رکھ لیا کرو اور یہ صوم دہر ہو جائیں گے، میں نے عرض کیا : یا رسول اللہ! مجھے اس سے زیادہ کی قوت ہے، آپ ﷺ نے فرمایا : پھر حضرت دائود علیہ السلام کے روزے رکھو، ایک دن روزہ رکھو اور ایک دن افطار کرو۔ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما کہتے تھے کاش کہ میں نے حضور نبی اکرم ﷺ کی دی ہوئی رخصت مان لی ہوتی۔‘‘

یہ حدیث متفق علیہ ہے، اور مذکورہ الفاظ مسلم کے ہیں۔

2۔ عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو رضی الله عنهما قَالَ : قَالَ لِي رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : أَحَبُّ الصِّیَامِ إِلَی اللهِ صِیَامُ دَاوُدَ : کَانَ یَصُوْمُ یَوْمًا وَیُفْطِرُ یَوْمًا، وَأَحَبُّ الصَّلَاةِ إِلَی اللهِ صَلَاةُ دَاوُدَ : کَانَ یَنَامُ نِصْفَ اللَّيْلِ وَیَقُوْمُ ثُلُثَهُ، وَیَنَامُ سُدُسَهُ۔ مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔

2 : أخرجه البخاري في الصحیح، کتاب : الأنبیاء، باب : أحب الصلاۃ إلی الله صلاۃ داود، 3 / 1257، الرقم : 3238، ومسلم في الصحیح، کتاب : الصیام، باب : النهي عن صوم الدھر لمن تضرر به، 2 / 816، الرقم : 1159۔

’’حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کا بیان ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے مجھ سے فرمایا : اللہ تعالیٰ کو داؤدی روزہ سب روزوں سے پسند ہے۔ وہ ایک دن روزہ رکھتے اور دوسرے دن چھوڑ دیتے۔ اللہ تعالیٰ کو داؤدی نماز سب نمازوں سے زیادہ پسند ہے۔ وہ نصف رات تک سوتے، تہائی رات قیام کرتے پھر باقی چھٹا حصہ سوتے۔‘‘ یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

اَلْآثَارُ وَالْأَقْوَالُ

1۔ قال ابن شوذب رحمه الله : کان ابن سیرین رحمه الله یصوم یوما ویفطر یوما وکان الیوم الذي یفطر فيه یتغدی ولا یتعشی ثم یتسحر ویصبح صائما۔

1 : أخرجه أحمد بن حنبل في الزهد : 432۔

’’حضرت ابن شوذب رَحِمَهُ اللہ بیان کرتے ہیں کہ امام ابن سیرین رَحِمَهُ اللہ ایک دن روزہ رکھتے اور ایک دن افطار کرتے تھے، اور جس دن افطار کرتے تھے اس میں دوپہر کا کھانا کھاتے اور شام کا نہیں کھاتے تھے پھر سحری کھاتے اور روزہ دار ہو جاتے۔‘‘

2۔ قال الفضیل رَحِمَهُ الله : ثلاث خصال تُقَسِّي القلب : کثرةُ الأکل، وکثرةُ النوم، وکثرةُ الکلام۔

2 : أخرجه السُّلمي في طبقات الصّوفیۃ : 13۔

’’حضرت فضیل بن عیاض رَحِمَهُ اللہ نے فرمایا : تین خصلتیں ایسی ہیں جو دل کو سخت کردیتی ہیں : کثرتِ طعام، کثرتِ منام اور کثرتِ کلام۔‘‘

3۔ قال بِشْر رَحِمَهُ الله : المُتَقَلِّبُ في جوعه، کَالمُتَشَحِّط في دَمه في سَبیل الله۔ وثوابُه الجنةُ۔

3 : أخرجه السُّلمي في طبقات الصّوفیۃ : 44۔

’’حضرت بشر حافی رَحِمَهُ اللہ نے فرمایا : اپنی بھوک میں لوٹ پوٹ ہونے والا اللہ تعالی کی راہ میں خون آلود ہونے والے کی طرح ہے اور اس کا ثواب جنت ہے۔‘‘

4۔ قال یحیی بن معاذ رَحِمَهُ الله : لو أن الْجُوعَ یُباعُ فِي السُّوقِ لما کان ینبغي لطلابِ الآخرةِ إذا دَخَلوا السُّوقَ أن یشتروا غَيْرَه۔

4 : أخرجه القشیري في الرسالۃ : 141۔

’’حضرت یحییٰ بن معاذ رَحِمَهُ اللہ نے فرمایا : اگر بھوک ایسی چیز ہوتی، جو بازار میں خریدی جاسکتی، تو آخرت کے طالبین کے لئے، جب بھی بازار میں داخل ہوتے، یہ مناسب نہ ہوتا کہ کسی اور چیز کو خریدتے۔‘‘

5۔ قال مظفر القرمیسینيُّ رَحِمَهُ الله : الصوم ثلاثۃ : صوم الروح، بقصر الأمل، وصوم العقل، بخلاف الهوی، وصوم النفس، بالإمساک عن الطعام والمحارم۔

5 : أخرجه السّلمي في طبقات الصّوفیۃ : 396۔

’’شیخ مظفر قرمیسنی رَحِمَهُ اللہ نے فرمایا : روزے تین طرح کے ہوتے ہیں : روح کا روزہ، یہ امید کو مختصر کرنے سے ہوتا ہے۔ عقل کا روزہ، یہ خواہش نفس کی خلاف ورزی سے ہوتا ہے اور نفس کا روزہ، یہ کھانے اور حرام کاموں سے رکنے سے ہوتا ہے۔‘‘

6۔ قال أبو حمزۃ رَحِمَهُ الله : من رزق ثلاثۃ أشیاء، مع ثلاثۃ أشیائ، فقد نجا من الآفات : بطن خال مع قلب قانع، وفقر دائم مع زهد حاضر، وصبر کامل مع ذکر دائم۔

6 : أخرجه السّلمي في طبقات الصّوفیۃ : 297۔

’’حضرت ابو حمزہ رَحِمَهُ اللہ نے فرمایا : جس کو تین چیزوں کے ساتھ تین چیزیں عطا کر دی گئیں وہ آفات سے نجات پا گیا۔ خالی پیٹ قلب نافع کے ساتھ، دائمی فقر زہد حاضر کے ساتھ، صبر کامل دائمی ذکر کے ساتھ۔‘‘

Copyrights © 2020 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved